شمالی کوریا کا ہائپرسونک میزائل کا تجربہ ناکامی پر ختم

شمالی کوریا کی اپنی میزائل ٹیکنالوجی کو آگے بڑھانے کی حالیہ کوشش کو ایک اہم دھچکا لگا ہے۔ ملک کا ہائپرسونک میزائل کا تجربہ، جو اس کے دارالحکومت پیانگ یانگ کے قریب کیا گیا، ناکامی پر ختم ہو گیا کیونکہ میزائل لانچ کے فوراً بعد ہوا کے وسط میں پھٹ گیا۔ اس اطلاع کی تصدیق جنوبی کوریا کے جوائنٹ چیفس آف اسٹاف نے کی ہے۔

جنوبی کوریا کے فوجی حکام کے مطابق میزائل کو شمالی کوریا کے مشرقی ساحل سے لانچ کیا گیا اور اس کا مقصد جدید میزائل ٹیکنالوجی میں شمالی کوریا کی بڑھتی ہوئی صلاحیتوں کو ظاہر کرنا تھا۔ تاہم، میزائل اپنے مطلوبہ مقصد کو حاصل کرنے میں ناکام رہتے ہوئے فضا میں ہی بکھر گیا۔ یہ واقعہ شمالی کوریا کو اپنے میزائل ڈیولپمنٹ پروگراموں میں درپیش جاری تکنیکی چیلنجوں کی نشاندہی کرتا ہے۔

غیر ملکی میڈیا رپورٹس، جن کی حمایت جنوبی کوریا کی انٹیلی جنس ایجنسی نے کی ہے، نے بھی ہائپرسونک میزائل تجربے کے ناکام نتائج کی تصدیق کی ہے۔ یہ ناکامی خطے میں بڑھتی ہوئی کشیدگی اور مسابقتی ماحول کے درمیان میزائل کی ترقی کے درمیان ایک اہم پیش رفت ہے۔

جاپانی وزارت دفاع نے اضافی بصیرت فراہم کرتے ہوئے انکشاف کیا کہ میزائل تقریباً 100 کلومیٹر کی بلندی تک پہنچ گیا اور پھٹنے سے پہلے 200 کلومیٹر سے زیادہ کا سفر طے کرنے میں کامیاب رہا۔ یہ ناکامی نہ صرف ہائپرسونک میزائل ٹیکنالوجی کی تیاری میں درپیش مشکلات کو اجاگر کرتی ہے بلکہ اس طرح کی مہتواکانکشی فوجی کوششوں سے وابستہ خطرات کی طرف بھی توجہ مبذول کراتی ہے۔

یہ میزائل تجربہ شمالی کوریا کی جانب سے روس کے ساتھ ایک جامع اسٹریٹجک پارٹنرشپ معاہدے پر دستخط کے قریب سے کیا گیا ہے۔ معاہدے کے چند دن بعد اس ٹیسٹ کا وقت بتاتا ہے کہ شمالی کوریا کا مقصد بین الاقوامی تنہائی اور اقتصادی پابندیوں کے درمیان اپنی فوجی طاقت کا مظاہرہ کرنا اور اپنے تزویراتی اتحاد کو مضبوط کرنا ہے۔

ناکام ٹیسٹ نے پڑوسی ممالک اور وسیع تر بین الاقوامی برادری کے ردعمل کا اظہار کیا ہے۔ جنوبی کوریا اور جاپان نے خاص طور پر شمالی کوریا کے میزائل پروگرام پر شدید تحفظات کا اظہار کیا ہے اور اس سے علاقائی سلامتی کو لاحق ممکنہ خطرے پر زور دیا ہے۔ دونوں ممالک نے شمالی کوریا کے جدید میزائل ٹیکنالوجی کے مسلسل حصول سے پیدا ہونے والے چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے چوکسی اور بین الاقوامی تعاون بڑھانے پر زور دیا ہے۔

بین الاقوامی تعلقات کے وسیع تر تناظر میں، شمالی کوریا کی میزائل سرگرمیاں مسلسل تشویش کا باعث ہیں۔ یہ ملک اقوام متحدہ کی متعدد پابندیوں کا شکار رہا ہے جس کا مقصد اس کے میزائل اور جوہری پروگرام کو روکنا ہے۔ ان پابندیوں کے باوجود، شمالی کوریا اپنی فوجی صلاحیتوں کو آگے بڑھانے میں پرعزم ہے، اکثر علاقائی استحکام کی قیمت پر۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …