بائیڈن نے بڑھتے ہوئے دباؤ کے درمیان صدارتی دوڑ سے دستبرداری کی کالوں کو مسترد کردیا

بڑھتے ہوئے دباؤ کے باوجود صدر جو بائیڈن نے ایک بار پھر واضح کیا ہے کہ وہ آئندہ صدارتی دوڑ سے دستبردار نہیں ہوں گے۔ سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے ساتھ حالیہ بحث کے بعد بائیڈن کی ممکنہ واپسی کے بارے میں قیاس آرائیاں شروع ہوگئیں، لیکن بائیڈن نے ان دعوؤں کی سختی سے تردید کی ہے۔ انہوں نے دوبارہ انتخاب کے لیے اپنے عزم کا اعادہ کیا، اس بات پر زور دیتے ہوئے کہ وہ ڈیموکریٹک امیدوار ہی رہیں گے۔

امریکی میڈیا کی رپورٹس میں بتایا گیا کہ بائیڈن انتخابی دوڑ سے دستبردار ہونے پر غور کر رہے ہیں۔ تاہم، بائیڈن نے ان افواہوں کو مسترد کرتے ہوئے واضح طور پر کہا ہے کہ وہ انتخاب لڑنے کا ارادہ رکھتے ہیں اور انہیں ڈیموکریٹک نامزدگی سے نہیں ہٹایا جا سکتا۔

وائٹ ہاؤس کی پریس سکریٹری کرائن جین پیئر نے بائیڈن کے موقف کو تقویت دی، صحافیوں کے سوالات کا جواب دیتے ہوئے یہ زور دے کر کہ صدر صدارتی دوڑ سے پیچھے نہیں ہٹ رہے ہیں۔ جین پیئر کے بیانات بائیڈن کی منظوری کی درجہ بندی اور مباحثوں میں ان کی کارکردگی کے بارے میں بڑھتے ہوئے خدشات کے درمیان آئے۔

گرتی ہوئی منظوری کی درجہ بندی کے درمیان، صدر بائیڈن نے آئندہ انتخابات کے لیے حکمت عملی بنانے کے لیے ڈیموکریٹک گورنرز کے ساتھ ایک اہم میٹنگ کی۔ ڈیموکریٹک گورنرز ایسوسی ایشن کے سربراہ اور مینیسوٹا کے گورنر ٹم والز کی سربراہی میں ہونے والی اس میٹنگ میں کیلیفورنیا کے گورنر گیون نیوزوم اور دیگر ممتاز ڈیموکریٹک رہنما جیسی اہم شخصیات بھی شامل تھیں۔

بات چیت کے دوران، والز نے دفتر کے لیے بائیڈن کی فٹنس پر اعتماد کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ بائیڈن قوم کی قیادت کرنے کے قابل ہیں۔ گورنرز نے ایک مضبوط مہم کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے صدر کو عوامی تاثرات اور خدشات سے آگاہ کیا۔ نیویارک کی گورنر کیتھی ہوچل نے بائیڈن کے لیے اپنی حمایت کا اظہار کرتے ہوئے انہیں یقین دلایا کہ انہیں ملک بھر کے ڈیموکریٹک گورنرز کی حمایت حاصل ہے۔

یہ اہم ملاقات اس وقت ہوئی جب ڈونلڈ ٹرمپ کی مقبولیت میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔ حالیہ سروے بتاتے ہیں کہ بائیڈن کی 43 فیصد کے مقابلے ٹرمپ کی منظوری کی درجہ بندی 49 فیصد ہے۔ ٹرمپ کی بڑھتی ہوئی حمایت نے بائیڈن کی مہم پر جانچ پڑتال کو تیز کر دیا ہے، خاص طور پر ٹرمپ کے خلاف ان کی زیر بحث کارکردگی کے بعد۔

اس صورت حال کے باعث نائب صدر کملا ہیرس پر کچھ ڈیموکریٹک حلقوں کا دباؤ بھی بڑھ گیا ہے۔ ان گروپوں کا مشورہ ہے کہ اگر بائیڈن کی مہم زور نہیں پکڑتی ہے تو ہیریس کو صدارتی امیدوار کے طور پر آگے بڑھنے پر غور کرنا چاہیے۔

یہ بات قابل غور ہے کہ بائیڈن، جو 2020 کے انتخابات جیتنے کے بعد 78 سال کی عمر میں صدارت سنبھالنے والے سب سے معمر شخص بن گئے تھے، اگر دوبارہ منتخب ہوئے تو دوسری مدت کے اختتام پر ان کی عمر 86 ہو گی۔ ان کی عمر اور صحت رائے دہندگان اور سیاسی تجزیہ کاروں کے درمیان یکساں طور پر بحث کا موضوع رہی ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …