آئی ایم ایف کا پاکستان کو مراعات دینے سے انکار، کئی تجاویز پر اختلافات برقرار

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے پاکستان کو رعایتیں دینے سے انکار کر دیا ہے، جس کے نتیجے میں اگلے قرضے کے پروگرام سے متعلق مختلف تجاویز پر اختلافات جاری ہیں۔ یہ اختلافات دونوں اداروں کے درمیان چیلنجنگ مذاکرات کو نمایاں کرتے ہیں کیونکہ وہ ایک معاہدے کو حتمی شکل دینے کی کوشش کرتے ہیں جو پاکستان کو انتہائی ضروری مالی مدد فراہم کرے گا۔

وزارت خزانہ کے ذرائع بتاتے ہیں کہ سابقہ ​​وفاق کے زیر انتظام قبائلی علاقوں (فاٹا) کے لیے ٹیکس چھوٹ کے حوالے سے ایک اہم تعطل ہے۔ آئی ایم ایف ان ٹیکس چھوٹ کو ختم کرنے پر بضد ہے، جب کہ وزارت خزانہ کا موقف ہے کہ ان چھوٹوں میں ایک سال کی توسیع ان خطوں کی ترقی کے لیے بہت ضروری ہے۔ وزارت خزانہ سابق فاٹا کی اقتصادی ترقی کو سہارا دینے کے لیے درآمدی مشینری اور انکم ٹیکس کے لیے ان چھوٹ کی اہمیت کو اجاگر کرتی ہے۔

فاٹا کی ٹیکس استثنیٰ پر تنازع کے علاوہ وزارت خزانہ اور آئی ایم ایف کچھ مشترکہ بنیاد تلاش کرنے میں کامیاب ہو گئے ہیں۔ دونوں جماعتوں نے برآمد کنندگان پر انکم ٹیکس بڑھانے پر اتفاق کیا ہے۔ فی الحال، برآمد کنندگان پر 1% کی شرح سے ٹیکس عائد کیا جاتا ہے، لیکن نئے معاہدے میں اس شرح میں اضافہ دیکھا جائے گا، حالانکہ درست فیصد اضافے کا ابھی انکشاف ہونا باقی ہے۔ اس ایڈجسٹمنٹ کا مقصد برآمدی شعبے پر کوئی خاص بوجھ ڈالے بغیر حکومتی محصولات کو بڑھانا ہے۔

تاہم، کئی دیگر متنازعہ مسائل حل طلب ہیں۔ ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان تنخواہ دار اور غیر تنخواہ دار افراد کے لیے انکم ٹیکس کی شرح پر کوئی معاہدہ نہیں ہے۔ مزید برآں، زراعت اور صحت کے شعبوں پر 18 فیصد سیلز ٹیکس لگانے پر اتفاق رائے کا فقدان ہے، جو کہ پاکستان کی معیشت کے اہم شعبے ہیں۔

بات چیت میں پنشن ٹیکس پر بھی بات ہوئی۔ پاکستان نے ماہانہ 100,000 روپے سے زیادہ پنشن پر ٹیکس لگانے پر آمادگی ظاہر کی ہے۔ یہ اقدام ٹیکس کی بنیاد کو بڑھانے اور ریونیو بڑھانے کی وسیع تر کوششوں کا حصہ ہے۔ اس کے ساتھ ساتھ، صوبائی اور وفاقی ٹیکسوں کو ہم آہنگ کرنے کے لیے نیشنل ٹیکس اتھارٹی یا کونسل کے قیام کے حوالے سے بات چیت جاری ہے، جس کا مقصد ٹیکس وصولی کو ہموار کرنا اور کارکردگی کو بہتر بنانا ہے۔

گفت و شنید کا ایک اور اہم شعبہ رئیل اسٹیٹ سیکٹر ہے۔ آئی ایم ایف نے اس سیکٹر پر ٹیکس لگانے پر پیش رفت کے لیے زور دیا ہے، جو روایتی طور پر کم ٹیکسوں میں ہے۔ مزید یہ کہ آئی ایم ایف نے یہ شرط عائد کی ہے کہ اگلے قرضہ پروگرام کی شرائط کو پاکستان کے بجٹ میں شامل کیا جائے اور اسے پارلیمنٹ سے منظور کیا جائے، اس لیے فنڈز کی تقسیم کے لیے اسے ایک سخت شرط بنایا گیا ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

زلفی بخاری پی ٹی آئی چیئرمین کے مشیر برائے بین الاقوامی امور مقرر

پی ٹی آئی کے سیکریٹری جنرل عمر ایوب کی جانب سے جاری کردہ باضابطہ نوٹیفکیشن …