آئی پی پی پی بجٹ کے بعد پنجاب کابینہ میں شامل ہوگی

پاکستان مسلم لیگ-نواز (پی ایم ایل-این) کی اتحادی، استحکم پاکستان پارٹی (آئی پی پی) نے بجٹ کے اعلان کے بعد پنجاب کابینہ میں شامل ہونے کا فیصلہ کیا ہے۔ یہ اقدام صوبائی حکومت کے اندر وزارتی عہدوں اور دیگر کرداروں کے حوالے سے دونوں جماعتوں کے درمیان وسیع مذاکرات کے بعد سامنے آیا ہے۔

آئی پی پی کے ذرائع کے مطابق پارٹی نے پنجاب حکومت میں دو وزارتوں کی درخواست کی ہے۔ خاص طور پر انہوں نے ان وزارتی کرداروں کے لیے شعیب صدیقی اور غضنفر عباس چینہ کے نام تجویز کیے ہیں۔ یہ مطالبہ صوبائی انتظامیہ میں زیادہ فعال اور بااثر کردار ادا کرنے کے آئی پی پی کے ارادے کی نشاندہی کرتا ہے، جو زیادہ سیاسی شمولیت اور اثر و رسوخ کے لیے ان کے اسٹریٹجک اہداف کی عکاسی کرتا ہے۔

پنجاب میں سب سے بڑی جماعت مسلم لیگ ن نے اپنے اتحادی کو ایڈجسٹ کرنے پر آمادگی ظاہر کی ہے لیکن کچھ تحفظات کے ساتھ۔ ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ مسلم لیگ ن اس وقت آئی پی پی کو ایک وزارتی عہدہ دینے کی پیشکش کر رہی ہے۔ مزید برآں، پاور شیئرنگ کے انتظامات کے حصے کے طور پر آئی پی پی کو پارلیمانی سیکرٹری کا رول یا کسی محکمے کی چیئرمین شپ دینے کے لیے بات چیت جاری ہے۔ مسلم لیگ (ن) کی طرف سے یہ ماپا ردعمل اتحادی سیاست کے بارے میں ان کے محتاط انداز کو نمایاں کرتا ہے، جس کا مقصد اپنے قائدانہ موقف کو برقرار رکھتے ہوئے طاقت میں توازن رکھنا ہے۔

آئی پی پی کو پنجاب کابینہ میں شامل کرنا مسلم لیگ (ن) کی جانب سے صوبے میں اپنی سیاسی طاقت کو مستحکم کرنے کے لیے ایک حکمت عملی کی نشاندہی کرتا ہے۔ دونوں جماعتوں کے درمیان تعاون کا مقصد پنجاب میں ہموار طرز حکمرانی اور استحکام کو یقینی بنانا ہے، خاص طور پر بجٹ سیشن کے قریب آنے کے ساتھ۔ اس طرح کا اتحاد مسلم لیگ (ن) کے لیے اپنے گورننس ایجنڈے کو برقرار رکھنے اور صوبائی معاملات کو مؤثر طریقے سے چلانے کے لیے بہت ضروری ہے۔

ان انتظامات کو حتمی شکل دینا مذاکرات کی ایک اہم شخصیت علیم خان کی واپسی پر منحصر ہے۔ علیم خان کے ملک میں واپس آنے کے بعد صوبائی کابینہ میں آئی پی پی کی شمولیت کی تفصیلات طے کرنے کے لیے مزید بات چیت ہوگی۔ ان کی واپسی سے فیصلہ سازی کے عمل کو تیز کرنے کی توقع کی جا رہی ہے، جس سے دونوں جماعتوں کے درمیان طاقت کے اشتراک کی حرکیات واضح ہوں گی۔

مسلم لیگ ن اور آئی پی پی کے درمیان سیاسی حرکیات وقت کے ساتھ ساتھ ابھرتی رہی ہیں اور یہ تازہ ترین پیش رفت ان کے مسلسل تعاون کا ثبوت ہے۔ اگرچہ اس اتحاد نے ابھی تک آئندہ عام انتخابات کے لیے انتخابی اتحاد بنانے کے حوالے سے خاطر خواہ پیش رفت نہیں کی ہے، لیکن موجودہ مذاکرات پنجاب کی گورننس میں مل کر کام کرنے کے لیے باہمی مفاہمت کی عکاسی کرتے ہیں۔ یہ تعاون ممکنہ طور پر مستقبل کے انتخابی تعاون کے لیے راہ ہموار کر سکتا ہے، ان کے موجودہ انتظامات کے نتائج پر منحصر ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …