اسلام آباد نے آلودگی کو کم کرنے کے لیے پیٹرول موٹرسائیکلوں کی خریداری پر پابندی لگادی

ماحولیاتی آلودگی سے نمٹنے کے لیے ایک جرات مندانہ اقدام کرتے ہوئے وفاقی حکومت نے اسلام آباد میں پیٹرول موٹر سائیکلوں کی خریداری پر پابندی عائد کر دی ہے۔ وزیر داخلہ محسن نقوی نے اس فیصلے کا اعلان کیا، جس کا مقصد دارالحکومت کو پائیداری اور ماحولیاتی ذمہ داری کے ماڈل میں تبدیل کرنا ہے۔

وزیر نقوی نے روشنی ڈالی کہ یہ اقدام آلودگی کو کم کرنے اور سبز نقل و حمل کو فروغ دینے کی حکومت کی حکمت عملی کا ایک اہم حصہ ہے۔ اس کوشش کے ایک حصے کے طور پر، کیپٹل ڈیولپمنٹ اتھارٹی (سی ڈی اے) اب سے صرف الیکٹرک بائیکس خریدے گی۔ الیکٹرک گاڑیوں میں اس منتقلی سے کاربن کے اخراج میں نمایاں کمی اور شہر کی صاف ہوا میں شراکت کی توقع ہے۔

پیٹرول موٹرسائیکلوں پر پابندی کے علاوہ، حکومت عوامی نقل و حمل کے لیے ماحول دوست الیکٹرک بسیں متعارف کرانے کا ارادہ رکھتی ہے۔ یہ الیکٹرک بسیں موجودہ بیڑے کے لیے ایک صاف ستھرا، زیادہ موثر متبادل فراہم کریں گی، جس سے شہر کے مجموعی کاربن فوٹ پرنٹ کو کم کرنے میں مدد ملے گی۔ برقی نقل و حمل کو ترجیح دے کر، اسلام آباد کا مقصد پاکستان کے دیگر شہروں کے لیے ایک مثال قائم کرنا ہے۔

وزیر نقوی نے شہر کی ہنگامی خدمات کو بڑھانے کے منصوبوں کا بھی اعلان کیا۔ فی الحال میونسپل کارپوریشن اسلام آباد (MCI) کے زیر انتظام، یہ خدمات CDA کو منتقل کر دی جائیں گی۔ اس تبدیلی کا مقصد اس بات کو یقینی بنانا ہے کہ اسلام آباد میں ایمرجنسی رسپانس سروسز بین الاقوامی معیارات پر پورا اتریں، اور ضرورت کے وقت رہائشیوں کو تیز تر اور زیادہ موثر مدد فراہم کریں۔

ایک اور بڑا اقدام کیپٹل واٹر اینڈ سینی ٹیشن ایجنسی (کیپٹل واسا) کا قیام ہے۔ یہ نئی ایجنسی اسلام آباد کے آبی وسائل کے انتظام، رہائشیوں کے لیے صاف پانی کی قابل اعتماد فراہمی کو یقینی بنانے اور شہر کے مجموعی پانی کے انتظام کے نظام کو بہتر بنانے کے لیے ذمہ دار ہوگی۔ توقع ہے کہ کیپٹل واسا کے قیام سے شہر میں پانی کی فراہمی اور معیار سے متعلق دیرینہ مسائل حل ہوں گے۔

حکومت کیپٹل ویسٹ مینجمنٹ کمپنی کے قیام پر بھی کام کر رہی ہے۔ یہ کمپنی کچرے کو جمع کرنے اور ٹھکانے لگانے کا کام کرے گی، جس کا مقصد پورے اسلام آباد میں صفائی اور صفائی کو بہتر بنانا ہے۔ موثر کچرے کا انتظام شہر کی رہائش اور ماحولیاتی صحت کو بڑھانے کے لیے حکومت کی وسیع تر حکمت عملی کا ایک اہم جز ہے۔

یہ جامع اقدامات اسلام آباد کو صاف ستھرا، سرسبز، اور زیادہ پائیدار شہر بنانے کے لیے حکومت کے عزم کی عکاسی کرتے ہیں۔ ماحول دوست نقل و حمل، بہتر ہنگامی خدمات، اور پانی اور فضلہ کے بہتر انتظام پر توجہ مرکوز کرتے ہوئے، اسلام آباد بین الاقوامی معیار پر پورا اترنے والا ایک ماڈل شہر بننے کے لیے تیار ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …