اسلام آباد ہائی کورٹ نے عدالتی رپورٹنگ پر پابندی پر ٹی وی چینلز کے خلاف پیمرا کی تادیبی کارروائی روک دی

اہم پیش رفت میں، اسلام آباد ہائی کورٹ نے پاکستان الیکٹرانک میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی (پیمرا) کو عدالتی کارروائی کی رپورٹنگ کرنے والے ٹیلی ویژن چینلز کے خلاف تادیبی کارروائی کرنے سے روکنے کا حکم جاری کیا ہے۔ یہ فیصلہ اسلام آباد ہائی کورٹ جرنلسٹس ایسوسی ایشن کی جانب سے دائر درخواست کے جواب میں سامنے آیا ہے جس میں پیمرا کے اس نوٹیفکیشن کو چیلنج کیا گیا ہے جس میں عدالتی کارروائی کی کوریج پر پابندی عائد کی گئی تھی۔

اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس عامر فاروق نے کیس کی سماعت کی۔ اپنے تحریری حکم نامے میں، انہوں نے جمہوری معاشرے میں آزادی صحافت کے اہم کردار پر زور دیا اور عدالتی کارروائی کے بارے میں عوام کے باخبر ہونے کے حق کی اہمیت کو اجاگر کیا۔ چیف جسٹس کا حکم عارضی طور پر پیمرا کو عدالتی سرگرمیاں نشر کرنے والے ٹی وی چینلز کو جرمانے سے روکتا ہے، اس طرح میڈیا اداروں کو فوری ریلیف ملتا ہے۔

یہ تنازعہ اس وقت شروع ہوا جب پیمرا نے عدالتی کارروائیوں کی میڈیا کوریج پر پابندی عائد کرتے ہوئے عدلیہ کے کام کاج اور عوامی تاثرات پر ممکنہ اثرات کے خدشات کا حوالہ دیتے ہوئے ایک ہدایت جاری کی۔ اس اقدام کو صحافی گروپوں اور میڈیا آؤٹ لیٹس کی طرف سے سخت مخالفت کا سامنا کرنا پڑا، جن کا موقف تھا کہ اس طرح کی پابندیاں آزادی صحافت اور شفافیت کے بنیادی اصولوں کی خلاف ورزی کرتی ہیں۔

اسلام آباد ہائی کورٹ جرنلسٹس ایسوسی ایشن نے فوری طور پر پیمرا کے نوٹیفکیشن کو چیلنج کرنے کی کوشش کی۔ ان کی درخواست میں استدلال کیا گیا تھا کہ پابندی نہ صرف آزادی صحافت کی خلاف ورزی کرتی ہے بلکہ عوام کو عدالتی معاملات سے متعلق اہم معلومات سے بھی محروم کرتی ہے۔ ایسوسی ایشن کا فوری اقدام میڈیا کے اپنے حقوق کے تحفظ اور اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ عوام کو اہم قانونی پیش رفت کے بارے میں آگاہی فراہم کرنے کے عزم کی نشاندہی کرتا ہے۔

عدالت نے اگلی سماعت 28 مئی 2024 کو مقرر کی ہے، جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ معاملہ ابھی حل نہیں ہوا ہے اور اس کی مزید عدالتی جانچ ہوگی۔ دریں اثنا، پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹس (PFUJ) نے بھی اسلام آباد ہائی کورٹ میں پیمرا کے نوٹیفکیشن کے خلاف ایک علیحدہ درخواست دائر کی ہے، جس سے صحافی برادری کے اندر ایسے ریگولیٹری اقدامات کے مضمرات کے بارے میں وسیع تشویش کی عکاسی ہوتی ہے۔
ایک متوازی کیس میں، لاہور ہائی کورٹ نے پیمرا کو نوٹس جاری کرتے ہوئے 29 مئی 2024 تک عدالتی کارروائیوں کی میڈیا کوریج پر پابندی کے خلاف اسی طرح کے چیلنج کا جواب دینے کا مطالبہ کیا ہے۔ لاہور میں یہ پیش رفت پیمرا کی کوششوں کے خلاف وسیع تر قانونی دھکے کی نشاندہی کرتی ہے۔ عدالتی سرگرمیوں پر میڈیا رپورٹنگ کو محدود کرنے کے لیے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

زلفی بخاری پی ٹی آئی چیئرمین کے مشیر برائے بین الاقوامی امور مقرر

پی ٹی آئی کے سیکریٹری جنرل عمر ایوب کی جانب سے جاری کردہ باضابطہ نوٹیفکیشن …