خالد مقبول صدیقی نے وفاقی حکومت سے کراچی کے اسٹریٹ کرائم بحران سے نمٹنے کی اپیل کی

خالد مقبول صدیقی نے وفاقی حکومت سے کراچی کے اسٹریٹ کرائم بحران سے نمٹنے کی اپیل کی
متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) پاکستان کے چیئرمین خالد مقبول صدیقی نے کراچی میں اسٹریٹ کرائمز کے بڑھتے ہوئے واقعات سے نمٹنے کے لیے وفاقی حکومت سے رابطہ کیا ہے، جن کے نتیجے میں متعدد قتل ہوچکے ہیں۔

صدیقی نے وزیر اعظم شہباز شریف سے ٹیلی فون پر رابطہ کیا اور بڑھتے ہوئے اسٹریٹ کرائمز پر اپنے تحفظات کا اظہار کیا۔ انہوں نے صورتحال کی نزاکت اور مزید جانی نقصان کو روکنے اور عوامی تحفظ کو بحال کرنے کے لیے فوری مداخلت کی ضرورت پر زور دیا۔ بحث نے شہر کے رہائشیوں پر ان جرائم کے اثرات کو اجاگر کیا، خاص طور پر نوجوانوں پر، جو ان پرتشدد واقعات کا بنیادی شکار ہوئے ہیں۔

مزید برآں، صدیقی نے وفاقی وزیر داخلہ محسن نقوی سے رابطہ کیا، کراچی میں سیکیورٹی کی بگڑتی ہوئی صورتحال پر بات کرنے کے لیے ملاقات کی درخواست کی۔ ذرائع کے مطابق وزیر اعظم شریف اور وزیر داخلہ نقوی دونوں نے صدیقی کو اس مسئلے سے نمٹنے کے لیے اپنے عزم کا یقین دلایا۔ انہوں نے اپنی غیر ملکی مصروفیات سے واپس آنے کا وعدہ کیا کہ وہ صدیقی سے ذاتی طور پر ملاقات کریں گے اور اسٹریٹ کرائمز میں اضافے سے نمٹنے کے لیے ایک اسٹریٹجک منصوبہ تیار کریں گے۔

ڈکیتی اور قتل سمیت اسٹریٹ کرائمز کے متواتر واقعات نے کراچی کے باسیوں میں خوف اور مایوسی کا ماحول پیدا کر دیا ہے۔ اس تشویشناک رجحان نے مقامی حکام پر بہت زیادہ دباؤ ڈالا ہے اور اب شہر کی آبادی کے تحفظ اور تحفظ کو یقینی بنانے کے لیے اہم وفاقی تعاون کی ضرورت ہے۔

صدیقی کا فعال موقف کراچی کے شہریوں کے تحفظات کو دور کرنے کے لیے ایم کیو ایم کی لگن کو واضح کرتا ہے۔ وفاقی امداد کے لیے ان کا مطالبہ صورتحال کی نازک نوعیت اور مقامی اور قومی حکومتوں دونوں کی جانب سے مربوط ردعمل کی ضرورت کو اجاگر کرتا ہے۔ صدیقی، وزیراعظم اور وزیر داخلہ کے درمیان متوقع ملاقات متوقع ہے۔

کراچی میں جرائم کی بڑھتی ہوئی لہر سے نمٹنے اور امن کی بحالی کے لیے جامع حکمت عملی کی بنیاد۔

کراچی کے مکینوں میں عدم تحفظ کے بڑھتے ہوئے احساس نے اس اعلیٰ سطحی مداخلت کو جنم دیا ہے۔ شہر کے متواتر اسٹریٹ کرائمز کے نتیجے میں کافی پریشانی ہوئی ہے، حکام سے فوری کارروائی کرنے کی اپیل کی ہے۔ وفاقی اور مقامی حکام کے درمیان تعاون اس مشکل دور سے گزرنے اور اس بات کو یقینی بنانے کے لیے کہ کراچی ایک محفوظ اور متحرک شہر کے طور پر اپنی حیثیت دوبارہ حاصل کر سکے۔

چونکہ شہر مزید پیشرفت کا انتظار کر رہا ہے، ایک اجتماعی امید ہے کہ سیکورٹی پر یہ نئی توجہ ٹھوس کارروائیوں اور اسٹریٹ کرائمز میں نمایاں کمی کا باعث بنے گی۔ کراچی کے باسی بے تابی سے ایسے موثر اقدامات کی توقع رکھتے ہیں جو ان کی روزمرہ کی زندگیوں میں دیرپا سلامتی اور استحکام لائیں گے، شہر کی لچک اور محفوظ مستقبل کے عزم کو تقویت دیں گے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …