واز شریف کے پاس آرمی چیف کو برطرف کرنے کا قانونی اختیار تھا، علی محمد

قومی اسمبلی کے حالیہ اجلاس کے دوران پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے ایک اہم رہنما علی محمد خان نے زور دے کر کہا کہ سابق وزیر اعظم نواز شریف کے پاس آرمی چیف کو برطرف کرنے کا قانونی اختیار ہے۔ یہ بیان جمہوری اصولوں اور حکمرانی پر وسیع تر بحث کا حصہ تھا۔ علی محمد خان نے اس بات پر زور دیا کہ پاکستان کے ہر صوبے اور شہر کی نمائندگی کرنے والی اسمبلی کو جمہوریت، باہمی احترام اور افہام و تفہیم کی اقدار کو برقرار رکھنا چاہیے۔

علی محمد خان نے جمہوری اصولوں کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے کہا، “یہ گھر پاکستان کے ہر صوبے اور شہر کی نمائندگی کرتا ہے۔ یہ بہت ضروری ہے کہ ہم ایک دوسرے کی بات سنیں اور اپنی ماضی کی غلطیوں کو دہرانے سے گریز کریں۔” انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ جمہوریت کو تمام منتخب نمائندوں کی آواز اور ان پٹ کی ضرورت ہوتی ہے اور ملک کی ترقی کے لیے باہمی احترام بہت ضروری ہے۔

انہوں نے قائداعظم محمد علی جناح کے وژن کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ فوج کا کردار پالیسی کو نافذ کرنا ہے، اسے بنانا نہیں۔ خان نے ریمارکس دیے کہ “پالیسی سازی فوج کا اختیار نہیں، یہ سویلین قیادت کا اختیار ہے۔” انہوں نے اس بات کا اعادہ کیا کہ نواز شریف کا آرمی چیف کو برطرف کرنے کا فیصلہ بطور وزیر اعظم ان کے قانونی حقوق کے اندر تھا، جس سے فوجی تقرریوں پر سویلین قیادت کے اختیار کو تقویت ملی۔

خان کی تقریر میں کئی حل طلب مسائل میں انصاف اور احتساب کا مطالبہ بھی کیا گیا۔ انہوں نے سابق وزیر اعظم بے نظیر بھٹو کے قتل کی تحقیقات کے لیے عدالتی کمیشن کی تشکیل کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ذمہ داروں کو انصاف کے کٹہرے میں لانا چاہیے۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ میں مطالبہ کرتا ہوں کہ بے نظیر بھٹو کے قاتلوں کو منظر عام پر لایا جائے اور اس مقصد کے لیے جوڈیشل کمیشن بنایا جائے۔

انہوں نے ریمنڈ ڈیوس کیس سے بھی خطاب کیا اور ان حالات پر سوال اٹھائے جن کی وجہ سے اس وقت کے وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے استعفیٰ دیا۔ انہوں نے اس معاملے میں بھی شفافیت اور احتساب پر زور دیا۔ مزید برآں، خان نے “سائپر” تنازعہ پر روشنی ڈالی، سچائی سے پردہ اٹھانے کے لیے عدالتی تحقیقات کا مطالبہ کیا۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ پی ٹی آئی کے بانی کو فائرنگ کا سامنا کرنا پڑا تھا اور اس واقعے کی عدالتی کمیشن کی طرف سے مکمل تحقیقات کی بھی ضرورت ہے۔

خان کے ریمارکس جمہوری اقدار، احتساب اور قانون کی حکمرانی کے لیے پی ٹی آئی کی ثابت قدمی کی عکاسی کرتے ہیں۔ انہوں نے اراکین اسمبلی پر زور دیا کہ وہ ذاتی یا سیاسی مفادات پر عوام کے مفادات کو ترجیح دیں۔ انہوں نے مشورہ دیا کہ اقتدار کے لیے نہ لڑیں، عوام کے لیے لڑیں۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

زلفی بخاری پی ٹی آئی چیئرمین کے مشیر برائے بین الاقوامی امور مقرر

پی ٹی آئی کے سیکریٹری جنرل عمر ایوب کی جانب سے جاری کردہ باضابطہ نوٹیفکیشن …