پاکستان نے رئیل اسٹیٹ سیکٹر میں نقد لین دین پر پابندی کا نفاذ اور اصلاحات متعارف کرائی ہی

حکومت پاکستان نے رئیل اسٹیٹ سیکٹر میں نقد رقم کے استعمال پر پابندی لگانے اور جامع اصلاحات نافذ کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔ یہ فیصلہ چیئرمین مشتاق احمد سکھیرا کی زیر صدارت اعلیٰ سطحی اجلاس میں کیا گیا۔ اجلاس میں مالیاتی جرائم کو مزید مؤثر طریقے سے روکنے کے لیے نیشنل اینٹی منی لانڈرنگ اور انسدادِ دہشت گردی کی مالی معاونت (AML/CFT) کو فعال کرنے کا بھی فیصلہ کیا گیا۔

اجلاس کے اہم نتائج میں سے ایک گریڈ 21 کے افسر احسن صادق کی AML/CFT اتھارٹی کے ڈائریکٹر جنرل کے طور پر تقرری تھی۔ اس اقدام کا مقصد اتھارٹی کی قیادت اور آپریشنل صلاحیتوں کو مضبوط کرنا ہے، اس بات کو یقینی بنانا کہ یہ منی لانڈرنگ اور دہشت گردوں کی مالی معاونت سے زیادہ کارکردگی سے نمٹ سکے۔

میٹنگ کی سرکاری دستاویزات سے پتہ چلتا ہے کہ مئی کے اوائل میں AML/CFT اتھارٹی کے آپریشنل ہونے کے حوالے سے اہم فیصلے کیے گئے تھے۔ ان فیصلوں میں رئیل اسٹیٹ سیکٹر میں نقد لین دین کی ممانعت بھی شامل ہے، جو طویل عرصے سے غیر قانونی مالیاتی سرگرمیوں کا ایک ذریعہ رہا ہے۔ نقد لین دین پر پابندی لگا کر، حکومت کا مقصد شفافیت کو بڑھانا اور منی لانڈرنگ کے مواقع کو کم کرنا ہے۔

AML/CFT اتھارٹی کو فعال کرنے کے لیے، ملازمین کو ابتدائی طور پر ڈیپوٹیشن پر تعینات کیا جائے گا۔ ایک بار جب قواعد و ضوابط مکمل طور پر تیار ہو جائیں گے، مستقل عملہ بھرتی کیا جائے گا تاکہ یہ یقینی بنایا جا سکے کہ اتھارٹی طویل مدتی بنیادوں پر مؤثر طریقے سے کام کرے۔ اس منظم انداز کا مقصد ایک مضبوط ادارہ جاتی ڈھانچہ بنانا ہے جو مالی جرائم کا مقابلہ کرنے کے قابل ہو۔

اجلاس میں انٹرنل نیشنل ایکشن پلان پر عملدرآمد کا بھی جائزہ لیا گیا جس میں منظم جرائم میں نقدی کے استعمال کو ختم کرنے پر توجہ دی گئی ہے۔ ایک بجٹ تجویز پر تبادلہ خیال کیا گیا، جس میں تجویز کیا گیا کہ AML/CFT اتھارٹی کو مالی سال 2024-2025 کے لیے 300 ملین روپے مختص کیے جائیں۔ یہ فنڈنگ ​​اتھارٹی کے لیے اپنے مینڈیٹ کو مؤثر طریقے سے انجام دینے اور اس بات کو یقینی بنانے کے لیے بہت اہم ہے کہ مالیاتی جرائم کی مکمل چھان بین اور مقدمہ چلایا جائے۔

مزید برآں، اجلاس میں رئیل اسٹیٹ سیکٹر میں اصلاحات کے لیے صوبائی حکومتوں سے ان پٹ لینے کا فیصلہ کیا گیا۔ اس باہمی تعاون کا مقصد جامع تجاویز جمع کرنا ہے جو پورے شعبے میں بامعنی تبدیلیوں کا باعث بن سکتی ہیں۔ بحث میں غیر رجسٹرڈ رئیل اسٹیٹ کے کاروبار کے مسئلے پر روشنی ڈالی گئی، جو اکثر منی لانڈرنگ میں ملوث ہوتے ہیں اور اس کے نتیجے میں ملک کو کافی حد تک ریونیو کا نقصان ہوتا ہے۔ ان چیلنجوں سے نمٹنے کے ذریعے، حکومت ریگولیٹری نگرانی کو بہتر بنانے اور ٹیکس محصولات میں اضافے کی امید رکھتی ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

امریکی رکن کانگریس نے کملا ہیرس کے خلاف مواخذے کی دستاویزات جمع کرائیں

امریکی رکن کانگریس اینڈی اوگلس نے باضابطہ طور پر نائب صدر کملا ہیرس کے مواخذے …