اکستان: پی ٹی آئی کے ایم این اے کا کور کمیٹی چھوڑنے کے بعد دو دن میں دوسرا استعفیٰ

صرف دو دن کے عرصے میں پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کو پارٹی کے ایک اہم رکن کی جانب سے دوسری مرتبہ استعفیٰ کا سامنا کرنا پڑا ہے۔ رکن قومی اسمبلی (ایم این اے) جنید اکبر نے مایوسی اور حق رائے دہی سے محرومی کا حوالہ دیتے ہوئے پارٹی کی کور کمیٹی سے استعفیٰ دینے کا اعلان کیا ہے۔

پی ٹی آئی کے سیکرٹری جنرل عمر ایوب کے حالیہ استعفیٰ کے بعد جنید اکبر کی رخصتی پارٹی میں بڑھتی ہوئی اندرونی بے چینی کا اشارہ ہے۔ اپنے استعفیٰ کے بیان میں، اکبر نے پارٹی فیصلوں میں اپنے اثر و رسوخ کی کمی اور پارٹی کے بانی چیئرمین تک پہنچنے میں ناکامی کے بارے میں اپنی مایوسی کا اظہار کیا۔ انہوں نے دعویٰ کیا کہ صرف چند منتخب افراد کو چیئرمین تک رسائی حاصل ہے، دوسروں کو کلیدی بات چیت اور فیصلوں سے مؤثر طریقے سے خارج کر دیتے ہیں۔

اکبر نے چیئرمین تک براہ راست رسائی رکھنے والوں پر باہمی مفادات کے حصول کا الزام لگایا، تجویز کیا کہ یہ افراد پارٹی کے باقی لوگوں کو ان پالیسیوں کے بارے میں مطلع کریں جن کی مبینہ طور پر چیئرمین کی توثیق ہوتی ہے۔ اکبر کے مطابق، پارٹی کے اندر تمام فیصلوں سے سب سے زیادہ فائدہ اٹھانے والے لوگوں کا ایک چھوٹا گروپ، ان کے خاندان اور دوستوں کے ساتھ۔ انہوں نے دلیل دی کہ طاقت اور اثر و رسوخ کے اس ارتکاز نے پارٹی کے دیگر ارکان کو پسماندہ کر دیا ہے۔

اکبر کے استعفیٰ کے بیان میں پارٹی کے فیصلہ سازی کے عمل میں جانبداری اور شفافیت کی کمی کے الزامات شامل تھے۔ انہوں نے پارٹی قیادت اور اس کی وسیع تر رکنیت کے درمیان بڑھتی ہوئی تقسیم کو اجاگر کرتے ہوئے پی ٹی آئی کے اندر موجودہ حالات پر اپنی مایوسی کا اظہار کیا۔ کور کمیٹی سے استعفیٰ دینے کے باوجود، اکبر نے پارٹی کو اپنا گھر قرار دیتے ہوئے پی ٹی آئی سے اپنی وفاداری کا اعادہ کیا۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ وہ پارٹی کے اندر کسی دھڑے کا حصہ نہیں ہیں اور ان کا کسی میں شامل ہونے کا کوئی ارادہ نہیں ہے۔

عمر ایوب اور جنید اکبر کے یکے بعد دیگرے استعفوں نے تحریک انصاف کے استحکام اور اتحاد کے حوالے سے خدشات کو جنم دیا ہے۔ ان استعفوں نے پارٹی کی قیادت کی حرکیات سے اندرونی اختلافات اور عدم اطمینان کو نمایاں کیا ہے۔ یہ صورتحال پی ٹی آئی کو درپیش چیلنجوں کی نشاندہی کرتی ہے جب وہ اپنے اراکین کے درمیان ہم آہنگی برقرار رکھنے کی کوشش کرتے ہوئے ان اندرونی مسائل سے گزر رہی ہے۔

سیاسی تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ یہ استعفے پی ٹی آئی کے مستقبل کے لیے اہم اثرات مرتب کر سکتے ہیں، خاص طور پر اگر زیادہ اراکین اس کی پیروی کرنے کا فیصلہ کریں۔ پارٹی کی قیادت کو ان خدشات کو فوری اور مؤثر طریقے سے دور کرنے کی ضرورت ہوگی تاکہ مزید ٹوٹ پھوٹ کو روکا جا سکے اور اپنے اراکین میں اعتماد بحال کیا جا سکے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …