پی ٹی آئی نے پاکستان کے 2024-25 کے وفاقی بجٹ کو ‘مہلک زہر کا بجٹ’ قرار دیتے ہوئے تنقید کی

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) نے مالی سال 2024-25 کے وفاقی بجٹ پر شدید تنقید کرتے ہوئے اسے ‘مہلک زہر کا بجٹ’ قرار دیا ہے۔ پی ٹی آئی کا موقف ہے کہ بجٹ تضادات سے بھرا ہوا ہے اور عوام، روزگار اور معاشی ترقی کے لیے شدید نقصان دہ ہے۔ ان کا دعویٰ ہے کہ یہ بجٹ بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (IMF) سے بہت زیادہ متاثر دکھائی دیتا ہے اور اس میں حقیقی حکومتی ان پٹ کا فقدان ہے۔

پی ٹی آئی کے ترجمان نے روشنی ڈالی کہ آئندہ مالی سال کے لیے اقتصادی ترقی کا ہدف 3.6 فیصد مقرر کیا گیا ہے۔ تاہم عالمی بینک کے مطابق شرح نمو 2.4 فیصد سے زیادہ ہونے کا امکان نہیں ہے۔ پارٹی نے بجٹ میں مہنگائی کے 12 فیصد کے ہدف کی بھی مذمت کی اور اسے غیر حقیقی قرار دیا۔ انہوں نے خبردار کیا کہ عوام پر عائد حد سے زیادہ ٹیکس مہنگائی میں نمایاں اضافے کا باعث بنے گا، جس سے عام شہریوں پر مالی بوجھ مزید بڑھے گا۔

پی ٹی آئی کی طرف سے اٹھائے گئے اہم مسائل میں سے ایک برآمد کنندگان کے لیے ٹیکس استثنیٰ کا خاتمہ ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اس اقدام سے برآمدی شعبے پر شدید اثر پڑے گا، جو ملک کے معاشی استحکام کے لیے بہت ضروری ہے۔ ٹیکس سلیب میں تبدیلیاں پی ٹی آئی کے لیے بھی ایک بڑی تشویش کا باعث ہیں، کیونکہ ان کا خیال ہے کہ یہ ایڈجسٹمنٹ تنخواہ دار طبقے کا معاشی طور پر گلا گھونٹ دیں گی، جس سے ان کے لیے اپنا گزر بسر کرنا مشکل ہو جائے گا۔

وفاقی بجٹ میں PKR 8.5 ٹریلین کے خسارے کے ساتھ 18.87 ٹریلین PKR سے زیادہ کے اخراجات کا خاکہ پیش کیا گیا ہے۔ ٹیکس وصولی کا ہدف PKR 12.97 ٹریلین رکھا گیا ہے۔ پی ٹی آئی نے رئیل اسٹیٹ سیکٹر پر ٹیکسوں میں اضافے پر اہم تحفظات کا اظہار کرتے ہوئے پیش گوئی کی کہ اس سے مارکیٹ میں خوف و ہراس پھیل جائے گا۔ وہ تجویز کرتے ہیں کہ اس سے نقد کے ذریعے لین دین کی حوصلہ افزائی ہوگی، رسمی معیشت کو نقصان پہنچے گا اور بدعنوانی اور بلیک مارکیٹ کی سرگرمیوں میں ممکنہ اضافہ ہوگا۔

مزید برآں، پی ٹی آئی نے زرعی پیکج کے لیے مختص پر تنقید کی، جو کہ محض 5 ارب روپے ہے۔ انہوں نے اس مختص کو حکومت کی طرف سے زرعی امداد کے حوالے سے کیے گئے بڑے دعوؤں کے مقابلے میں ایک مذاق قرار دیا۔ پارٹی نے سرکاری ملازمین کی تنخواہوں میں 22% سے 25% تک مجوزہ اضافے کے پیچھے دلیل پر بھی سوال اٹھایا۔ ان کا موقف تھا کہ موجودہ معاشی حالات اور حکومت کی مالی مجبوریوں کے پیش نظر اس طرح کا اضافہ پریشان کن ہے۔

پی ٹی آئی کی جانب سے پیٹرولیم لیوی میں 80 روپے اضافے کی مذمت بھی کی گئی۔ انہوں نے استدلال کیا کہ یہ عوام پر ایک اور بوجھ کی نمائندگی کرتا ہے، جو پہلے ہی زندگی کے بڑھتے ہوئے اخراجات کے ساتھ جدوجہد کر رہے ہیں۔ پی ٹی آئی کے ترجمان نے زور دے کر کہا کہ یہ اقدامات عام شہریوں کی مالی صلاحیت کو مزید تنگ کریں گے اور ان کے لیے روزمرہ کے اخراجات برداشت کرنا مشکل ہو جائے گا۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …