صارم برنی بچوں کی اسمگلنگ کے الزام میں ایف آئی اے نے تحویل میں لے لیے

انسانی حقوق کے لیے کام کرنے والے معروف سماجی کارکن صارم برنی کو بچوں کی اسمگلنگ کے الزام میں فیڈرل انویسٹی گیشن ایجنسی (ایف آئی اے) کی تحویل میں دے دیا گیا ہے۔ برنی کو امریکہ کی جانب سے انسانی اسمگلنگ کی کارروائیوں میں ملوث ہونے کے الزامات کے بعد کراچی ایئرپورٹ سے گرفتار کیا گیا تھا۔

عدالت نے برنی کو کیس سے بری کرنے کی استدعا مسترد کرتے ہوئے انہیں دو روزہ جسمانی ریمانڈ پر ایف آئی اے کے حوالے کر دیا۔ برنی کو 5 جون کو امریکی حکام کی طرف سے لگائے گئے انسانی سمگلنگ کے الزامات کی بنیاد پر حراست میں لیا گیا تھا۔ ایف آئی اے کے انسانی اسمگلنگ سرکل نے برنی کے خلاف مقدمہ درج کیا، جس میں انکشاف کیا گیا کہ اس نے جرم میں ملوث ہونے کا اعتراف کر لیا ہے۔

اس سے قبل آج ایف آئی اے حکام نے برنی کو جوڈیشل مجسٹریٹ ایسٹ کے سامنے پیش کیا۔ برنی کے وکیل نے عدالت سے درخواست کی کہ سماجی کارکن کو مقدمے سے بری کر دیا جائے، یہ دلیل دیتے ہوئے کہ الزامات بے بنیاد ہیں اور برنی کے سماجی سرگرمی میں ماضی کے کام پر غور کیا جانا چاہیے۔ تاہم ایف آئی اے حکام نے مزید تفتیش کے لیے برنی کے ریمانڈ کی استدعا کی۔ عدالت نے فریقین کے دلائل سننے کے بعد برنی کی رہائی کی استدعا مسترد کر دی اور برنی کو دو روزہ جسمانی ریمانڈ پر ایف آئی اے کے حوالے کر دیا۔

برنی کی سماجی سرگرمی اور انسانی حقوق میں ان کے پچھلے کام کی وجہ سے اس کیس نے خاصی توجہ حاصل کی ہے۔ پسماندہ افراد کے لیے اپنی وکالت اور انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے نمٹنے کے لیے ان کی کوششوں کے لیے مشہور، برنی کی گرفتاری ان کے کام کی تعریف کرنے والے بہت سے لوگوں کے لیے صدمہ کا باعث بنی ہے۔

یہ الزامات امریکی حکومت کی طرف سے ایک رسمی شکایت کے بعد لگے، جس نے اسے بچوں کی اسمگلنگ کی کارروائی میں ملوث کیا۔ کیس کی تفصیلات بتاتی ہیں کہ برنی نے اپنی غلطی تسلیم کر لی ہے، جس کی وجہ سے واقعے کے گرد چھان بین تیز ہو گئی ہے۔ ایف آئی اے سے توقع ہے کہ انسانی سمگلنگ میں برنی کے ملوث ہونے کی حد تک مزید تفتیش کرے گی، ریمانڈ کی مدت مزید شواہد اکٹھے کرنے اور ممکنہ طور پر اس طرح کی سرگرمیوں میں ملوث وسیع نیٹ ورکس کو بے نقاب کرنے کے لیے اہم ہے۔

پاکستان اور عالمی سطح پر انسانی سمگلنگ ایک اہم مسئلہ بنی ہوئی ہے۔ برنی جیسے ہائی پروفائل سماجی کارکن کی گرفتاری اس جرم سے نمٹنے میں پیچیدگیوں اور چیلنجوں کو اجاگر کرتی ہے۔ یہ کیس انسانی اسمگلنگ سے مؤثر طریقے سے نمٹنے کے لیے سخت اقدامات اور بین الاقوامی تعاون کی ضرورت پر زور دیتا ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …