ضیاء چشتی نے بیانیہ میگزین کے خلاف بڑا ہتک عزت کا مقدمہ جیت لیا

پاکستانی نژاد امریکی بزنس مین ضیا چشتی نے نیریٹیو میگزین اور اس کے ایڈیٹر عامر ضیا کے خلاف ہتک عزت کا ایک اہم مقدمہ جیت لیا ہے۔ لاہور کے ایڈیشنل ڈسٹرکٹ جج نے چشتی کے حق میں فیصلہ سناتے ہوئے کہا کہ میگزین کے جھوٹے، ہتک آمیز اور بدنیتی پر مبنی الزامات نے ان کی ساکھ کو شدید نقصان پہنچایا ہے۔

یہ مقدمہ Narratives کے شائع کردہ مضامین کی ایک سیریز سے شروع ہوا، جس میں چشتی پر غیر اخلاقی کاروباری طریقوں اور دیگر سنگین بدانتظامی کا الزام لگایا گیا تھا۔ چشتی نے کہا کہ یہ الزامات بے بنیاد ہیں اور ان کا مقصد ان کے کردار کو نقصان پہنچانا ہے۔ عدالت نے اپنے فیصلے میں یہ نوٹ کرتے ہوئے اتفاق کیا کہ میگزین اپنے دعوؤں کو ثابت کرنے کے لیے ٹھوس ثبوت پیش کرنے میں ناکام رہا۔ جج نے اس نقصان دہ اثرات پر روشنی ڈالی جو اس طرح کے بے بنیاد الزامات سے کسی فرد کی ذاتی اور پیشہ ورانہ زندگی پر پڑ سکتے ہیں۔

ایک جامع فیصلے میں، عدالت نے Narratives میگزین کو ضیاء چشتی سے عوامی معافی جاری کرنے، جھوٹے الزامات کو واپس لینے کے لیے تفصیلی وضاحت شائع کرنے اور انہیں 50 لاکھ روپے ہرجانہ ادا کرنے کا حکم دیا۔ یہ حکم ذمہ دارانہ صحافت کی اہمیت اور میڈیا آؤٹ لیٹس کے ممکنہ قانونی نتائج کی نشاندہی کرتا ہے جو مناسب تصدیق کے بغیر ہتک آمیز مواد شائع کرتے ہیں۔

اس فیصلے کو بڑے پیمانے پر افراد کے حقوق کے لیے ان کی ساکھ کو بدنیتی پر مبنی حملوں سے بچانے کے لیے ایک اہم فتح قرار دیا گیا ہے۔ یہ میڈیا تنظیموں کو صحافتی معیارات کو برقرار رکھنے کی ضرورت اور غلط معلومات پھیلانے کے خطرات کے بارے میں ایک انتباہ کے طور پر کام کرتا ہے۔

فیصلے کے باوجود قانونی جنگ شاید ختم نہ ہو۔ Narratives میگزین کے ایڈیٹر عامر ضیاء نے عدالت کے فیصلے کو غیر منصفانہ قرار دیتے ہوئے اسے چیلنج کرنے کے اپنے ارادے کا اعلان کیا۔ وہ ایک اپیل دائر کرنے کا ارادہ رکھتا ہے، جس پر کافی توجہ مبذول ہونے کی امید ہے۔ یہ اپیل پاکستان میں ہتک عزت کے مقدمات کے قانونی پیرامیٹرز کو مزید واضح کر سکتی ہے۔

اس کیس کے مضمرات فوری طور پر ملوث فریقین سے باہر ہیں۔ یہ پریس کی آزادی اور انفرادی ساکھ کے تحفظ کے درمیان نازک توازن کو اجاگر کرتا ہے۔ میڈیا جہاں طاقتور شخصیات کا احتساب کرنے میں اہم کردار ادا کرتا ہے، وہیں اسے یہ بھی یقینی بنانا چاہیے کہ اس کی رپورٹنگ درست اور منصفانہ ہو۔ یہ معاملہ صحافیوں اور ایڈیٹرز کو اپنے کام میں زیادہ مستعدی اور احتیاط برتنے کی ترغیب دے سکتا ہے، غیر تصدیق شدہ دعووں سے گریز کریں جو مہنگے قانونی تنازعات کا باعث بن سکتے ہیں۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

زلفی بخاری پی ٹی آئی چیئرمین کے مشیر برائے بین الاقوامی امور مقرر

پی ٹی آئی کے سیکریٹری جنرل عمر ایوب کی جانب سے جاری کردہ باضابطہ نوٹیفکیشن …