جرمن حکومت کے ملازمین کا اسرائیل کو ہتھیاروں کی فراہمی روکنے کا مطالبہ

سینکڑوں جرمن سرکاری ملازمین نے متحد ہو کر اسرائیل کو ہتھیاروں کی سپلائی فوری طور پر بند کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ اس کال ٹو ایکشن کو چانسلر اولاف شولز اور کئی دیگر سینئر وزراء کو لکھے گئے خطوط کے ذریعے پہنچایا گیا، جس میں جاری تنازعہ اور صورتحال کو مزید خراب کرنے میں ہتھیاروں کے کردار پر اپنے خدشات کو اجاگر کیا گیا۔

عرب میڈیا ذرائع سے موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق جرمنی کے تقریباً 600 سرکاری ملازمین نے اسرائیل کو ہتھیاروں کی مسلسل فراہمی پر مایوسی کا اظہار کیا ہے۔ ان کی اجتماعی درخواست حالات کی نزاکت اور تشدد کو مزید بڑھنے سے روکنے کے لیے فوری مداخلت کی ضرورت پر زور دیتی ہے۔

ملازمین کا یہ مطالبہ ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب خطے میں کشیدگی ایک نازک موڑ پر پہنچ چکی ہے۔ اسرائیل کا امریکہ اور جرمنی جیسے ممالک سے ہتھیاروں کی درآمد پر انحصار ایک طویل عرصے سے بحث اور تنقید کا موضوع رہا ہے، بہت سے لوگوں کا کہنا ہے کہ اس طرح کی سپلائی صرف تنازع کو ہوا دینے اور معصوم شہریوں کے مصائب کو طول دینے کے لیے کام کرتی ہے۔

ایک اندازے کے مطابق اسرائیل کے ہتھیاروں کا 99% حصہ امریکہ اور جرمنی سے حاصل کیا جاتا ہے، جو خطے کی فوجی حرکیات میں ان ممالک کے اہم کردار کو اجاگر کرتا ہے۔ گزشتہ سال، جرمنی نے اسرائیل کو 354 ملین ڈالر مالیت کے ہتھیاروں کی فراہمی کی منظوری دی تھی، اس اقدام پر مختلف حلقوں کی جانب سے تنقید کی گئی اور جرمنی کی ہتھیاروں کی برآمد کی پالیسیوں کا از سر نو جائزہ لینے کا مطالبہ کیا گیا۔

ملازمین کا مطالبہ جرمنی کی سول سروس کے اندر بڑھتے ہوئے جذبات کی عکاسی کرتا ہے، بہت سے لوگوں نے تنازعہ کو آسان بنانے میں ملک کے کردار پر اپنی بے چینی کا اظہار کیا۔ حکومتی عہدیداروں کو لکھے گئے خطوط میں جرمنی کے اسلحے کی برآمدات کے اخلاقی اور اخلاقی اثرات پر زور دیا گیا ہے، جس میں ہتھیاروں کی فروخت کے لیے زیادہ مخلصانہ انداز اختیار کرنے پر زور دیا گیا ہے جو امن اور استحکام کو ترجیح دیتا ہے۔

بین الاقوامی عدالت نکاراگوا کی جانب سے اسرائیل کو دی جانے والی فوجی امداد اور اسرائیل کے اقدامات کے لیے اس کی وسیع حمایت کے خلاف نکاراگوا کی درخواست پر بھی سماعت کرے گی۔ نکاراگوا نے جرمنی پر اسرائیل کی فوجی کوششوں میں مدد کر کے نسل کشی کنونشن کے تحت اپنی ذمہ داریوں کی خلاف ورزی کرنے کا الزام لگایا ہے، اور جرمنی کی ہتھیاروں کی برآمد کی پالیسیوں کو درپیش بین الاقوامی جانچ پڑتال کو مزید اجاگر کیا ہے۔

جیسے جیسے خطے کی صورتحال ابتر ہوتی جا رہی ہے، اسرائیل کو ہتھیاروں کی سپلائی روکنے کے مطالبات تنازعات کی انسانی قیمت اور ہتھیاروں کی برآمد کے معاملات میں ذمہ دارانہ فیصلہ سازی کی ضرورت کی واضح یاد دہانی کے طور پر کام کرتے ہیں۔ ملازمین کا مطالبہ تبدیلی اور جوابدہی کی وسیع تر خواہش کی عکاسی کرتا ہے، اسلحے کی فروخت اور عالمی تنازعات میں اس کے کردار کے حوالے سے جرمنی کے نقطہ نظر میں ممکنہ تبدیلی کا اشارہ ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

زلفی بخاری پی ٹی آئی چیئرمین کے مشیر برائے بین الاقوامی امور مقرر

پی ٹی آئی کے سیکریٹری جنرل عمر ایوب کی جانب سے جاری کردہ باضابطہ نوٹیفکیشن …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *