اسرائیل کے خلاف حماس کیساتھ ملکر جہاد کرنے والا اسرائیلی شہری جیل میں مردہ پایا گیا

ابراہیم ابو غنیمہ، ایک اسرائیلی شہری جس نے 2016 میں غزہ میں حماس میں شمولیت اختیار کی اور اسرائیلی فوج کے خلاف کئی لڑائیوں میں سرگرم حصہ لیا، مشکوک حالات میں جیل میں مردہ پایا گیا۔ شمالی نیگیو کے گاؤں ہاشم زینہ کے رہائشی 26 سالہ ابو غنیمہ پر سکیورٹی کے سنگین الزامات تھے اور قانونی کارروائی کے اختتام تک اسے حراست میں رکھا گیا تھا۔

اسرائیلی میڈیا رپورٹس کے مطابق ابو غنیمہ کو حالیہ تنازع کے دوران گرفتار کیا گیا تھا اور بعد ازاں وہ اسرائیل کی ایشیل جیل میں اپنے سیل میں مردہ پایا گیا تھا۔ ان کی موت کے حوالے سے حالات واضح نہیں ہیں تاہم فلسطینی ذرائع نے الزام لگایا ہے کہ انہیں اسرائیلی حراست میں تشدد کے ذریعے شہید کیا گیا۔

ابو غنیمہ کا عسکریت پسندی میں سفر 2016 میں اس وقت شروع ہوا جب اس نے حماس میں شمولیت اختیار کی اور اسرائیل کے خلاف جہاد میں حصہ لینے کی خواہش کا اظہار کیا۔ اس نے تین ماہ تک حماس کے تحت فوجی تربیت حاصل کی، جس میں اسرائیلی شہروں اور فوجی چوکیوں پر چھاپوں جیسے حربوں پر توجہ مرکوز کی۔ حماس کے ساتھ ان کی شمولیت اور اسرائیل کے خلاف مسلح تصادم میں شرکت نے انہیں عسکریت پسند گروپ میں ایک اہم شخصیت کے طور پر نشان زد کیا۔

ان کی موت سے اسرائیل اور حماس کے درمیان کشیدگی بڑھ گئی ہے، حماس نے اس واقعے کی اسرائیل کی مذمت کی ہے اور اسرائیلی حکام پر فلسطینی قیدیوں کے ساتھ ناروا سلوک کا الزام لگایا ہے۔ اسرائیل نے ابھی تک ابو غنیمہ کی موت سے متعلق حالات پر کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے، لیکن اس واقعے سے دونوں فریقوں کے درمیان پہلے سے ہی نازک تعلقات مزید کشیدہ ہونے کا خدشہ ہے۔

ابو غنیمہ کی موت اسرائیل-فلسطین تنازعہ کی پیچیدہ اور غیر مستحکم نوعیت کو اجاگر کرتی ہے، جہاں لوگ اکثر تشدد اور انتہا پسندی میں الجھ جاتے ہیں۔ یہ تنازعہ کی بنیادی وجوہات کو حل کرنے اور دیرپا حل تلاش کرنے میں دونوں فریقوں کو درپیش چیلنجوں کی بھی نشاندہی کرتا ہے۔

اسرائیل-فلسطینی تنازعہ کی ایک طویل اور خونی تاریخ ہے، جس میں تشدد اور انتقامی کارروائیوں کا سلسلہ جاری ہے۔ ابو غنیمہ کی موت سے دونوں فریقوں میں مزید غصے اور ناراضگی کو ہوا دینے کا امکان ہے، جس سے تنازع کا پرامن حل حاصل کرنا اور بھی مشکل ہو جائے گا۔

جیسے جیسے صورتحال سامنے آرہی ہے، دونوں فریقوں کے لیے تحمل کا مظاہرہ کرنا اور تنازعہ کا پرامن اور پائیدار حل تلاش کرنے کے لیے کام کرنا بہت ضروری ہے۔ کشیدگی کو کم کرنے اور دونوں فریقوں کے درمیان بات چیت کو فروغ دینے کی کوششوں کی حمایت میں بین الاقوامی برادری کا بھی کردار ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

امریکی رکن کانگریس نے کملا ہیرس کے خلاف مواخذے کی دستاویزات جمع کرائیں

امریکی رکن کانگریس اینڈی اوگلس نے باضابطہ طور پر نائب صدر کملا ہیرس کے مواخذے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *