اسرائیل کے ملٹری انٹیلی جنس چیف میجر جنرل ہارون ہیلیوا نے حماس کے حالیہ حملوں کو روکنے میں ناکامی کا اعتراف کرتے ہوئے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا

اسرائیل کے ملٹری انٹیلی جنس چیف میجر جنرل ہارون ہیلیوا نے حماس کے حالیہ حملوں کو روکنے میں ناکامی کا اعتراف کرتے ہوئے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا ہے۔ یہ اقدام اس وقت سامنے آیا ہے جب حلیوا نے 7 اکتوبر کو حماس کے حملے کو روکنے میں ناکامی کی ذمہ داری قبول کی تھی۔ ان کے استعفیٰ کو ایک اہم پیش رفت کے طور پر دیکھا جا رہا ہے، جس سے وہ حماس کے حملے کو ناکام بنانے کی ناکام کوشش کے بعد مستعفی ہونے والے اعلیٰ ترین عہدے دار ہیں۔

حلیوا کا استعفیٰ صورتحال کی سنگینی اور اسرائیلی فوجی ڈھانچے کے اندر جوابدہی کو نمایاں کرتا ہے۔ اس میں اسرائیل کو حماس اور خطے میں سرگرم دیگر عسکریت پسند گروپوں سے نمٹنے میں درپیش چیلنجوں کی بھی نشاندہی کی گئی ہے۔

اسرائیلی فوج کے ترجمان نے ملٹری انٹیلی جنس یونٹ میں ان کے تعاون کا اعتراف کرتے ہوئے حلیوا کی خدمات اور عزم کا شکریہ ادا کیا۔ ترجمان کے بیان میں حالیہ واقعات کی وجہ سے سامنے آنے والی کوتاہیوں کو دور کرنے کے لیے فوج کے اندر وسیع تر تجزیے کی ضرورت کا اشارہ بھی دیا گیا۔

توقع ہے کہ استعفیٰ کے اسرائیلی فوجی تنظیمی ڈھانچے میں وسیع تر اثرات مرتب ہوں گے۔ یہ دوسرے اعلیٰ عہدے داروں کے لیے ایک مثال قائم کرتا ہے کہ وہ اس طرح کے حملوں کی روک تھام کے لیے اپنے اقدامات یا عدم فعالیت کی ذمہ داری قبول کریں۔ یہ اقدام ایک زیادہ شفاف اور جوابدہ فوجی قیادت کا باعث بن سکتا ہے، جو عوام کے اعتماد اور اعتماد کو برقرار رکھنے کے لیے بہت ضروری ہے۔

7 اکتوبر کو حماس کے حالیہ حملے کے نتیجے میں کافی جانی نقصان ہوا، جس میں تقریباً 1200 اسرائیلی اپنی جانوں سے ہاتھ دھو بیٹھے۔ اس حملے کے نتیجے میں حماس نے 250 افراد کو گرفتار کر لیا۔ ان نقصانات نے اسرائیلی آبادی کو گہرا متاثر کیا ہے اور فوج کے انٹیلی جنس اور حفاظتی اقدامات کی تاثیر پر سوالات اٹھائے ہیں۔

حلیوا کا استعفیٰ اور اس کے نتیجے میں سیکیورٹی چیلنجز کے لیے فوج کے نقطہ نظر کا از سر نو جائزہ اسرائیل اور حماس کے درمیان تنازع کی پیچیدہ نوعیت کو اجاگر کرتا ہے۔ یہ خطے میں جاری تشدد کے جامع اور پائیدار حل کی ضرورت پر بھی زور دیتا ہے۔

مجموعی طور پر حلیوا کا استعفیٰ اسرائیلی فوج کے حماس کے حملوں کے ردعمل میں ایک اہم پیش رفت ہے۔ یہ فوجی ڈھانچے کے اندر ناکامیوں اور کوتاہیوں کو دور کرنے کے لیے آمادگی کا اشارہ دیتا ہے اور ایسی اصلاحات کا باعث بن سکتا ہے جو طویل مدت میں اسرائیل کی سلامتی اور استحکام کو بڑھا سکیں۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *