ایرانی صدر کے گر کر تباہ ہونے والے ہیلی کاپٹر کا مقام: میڈیا رپورٹس

ایرانی میڈیا رپورٹس میں دعویٰ کیا گیا ہے کہ صدر ابراہیم رئیسی کو لے جانے والا ہیلی کاپٹر جو کہ شدید دھند کے باعث پہاڑی علاقے میں گر کر تباہ ہوا تھا، مل گیا ہے۔ ہیلی کاپٹر وزیر خارجہ حسین امیر عبد اللہیان، مشرقی آذربائیجان کے گورنر ملک رحمتی اور صوبے میں صدر کے نمائندے آیت اللہ محمد علی سمیت اعلیٰ حکام کو لے جا رہا تھا۔

یہ واقعہ اس وقت پیش آیا جب صدر رئیسی ایران اور آذربائیجان کے سرحدی علاقے میں ایک ڈیم کے افتتاح سے واپس آرہے تھے۔ اس تقریب میں، جس میں ایک اہم انفراسٹرکچر پراجیکٹ کا افتتاح کیا گیا، آذربائیجان کے صدر الہام علییف نے بھی شرکت کی۔ خبر رساں ایجنسی ایرنا کی جانب سے شیئر کی گئی تصویر میں صدر رئیسی اور صدر علییف کو ایک ساتھ تقریب میں دکھایا گیا ہے۔

نیم سرکاری ایرانی خبر رساں ایجنسی نے بتایا کہ ہیلی کاپٹر نے ہنگامی لینڈنگ کی۔ اس مرحلے پر، ہنگامی لینڈنگ کے نتیجے میں کسی جانی نقصان کے بارے میں کوئی اطلاع نہیں ہے۔ سخت موسمی حالات، جس کی خصوصیت گھنی دھند اور پہاڑی علاقوں نے اس حادثے میں اہم کردار ادا کیا۔

وزیر داخلہ احمد واحدی نے تلاش اور بچاؤ کی کارروائیوں کے حوالے سے مشکل حالات کی تصدیق کی ہے۔ خراب موسمی حالات نے کوششوں میں شدید رکاوٹیں ڈالی ہیں، جس سے تلاش کا مشن مشکل ہو رہا ہے۔ وزیر واحدی نے اس بات کی بھی تصدیق کی کہ صدر رئیسی سے رابطہ منقطع ہو گیا تھا، جس نے اس واقعے کے حوالے سے تشویش میں اضافہ کر دیا ہے۔

وزیر داخلہ کے ابتدائی بیانات میں اشارہ دیا گیا تھا کہ مشرقی آذربائیجان صوبے میں جولفا کے قریب تلاشی کی کارروائیاں مرکوز تھیں۔ مسلسل کوششوں کے باوجود، شدید موسمی حالات نے نہ صرف تلاش کو پیچیدہ بنا دیا ہے بلکہ مواصلاتی لائنوں میں بھی خلل ڈالا ہے، جس سے ریسکیو ٹیموں کو مزید چیلنج درپیش ہے۔

حادثے کی خبر نے ملک بھر میں خاصی تشویش کو جنم دیا ہے۔ مشہد مقدس میں بڑی تعداد میں شہری امام علی رضا کے مزار پر جمع ہوئے جہاں انہوں نے صدر رئیسی کی سلامتی اور عافیت کے لیے دعا کی۔ تشویش کا یہ بے ساختہ اظہار صورتحال کی سنگینی اور اس میں شامل اعلیٰ داؤ کو واضح کرتا ہے۔

اس واقعے نے اعلیٰ سطح کے سرکاری سفر سے وابستہ کمزوریوں اور خطرات کی طرف توجہ مبذول کرائی ہے، خاص طور پر ان خطوں میں جہاں موسم کی خرابی کا خطرہ ہے۔ حکومت کے ردعمل اور امدادی کارروائیوں کی کارکردگی پر گہری نظر رکھی جا رہی ہے، بہت سے لوگوں کو اس کے فوری اور مثبت حل کی امید ہے۔

جیسے جیسے صورتحال سامنے آتی ہے، اپ ڈیٹس کا بے صبری سے انتظار کیا جا رہا ہے۔ حکام سے توقع کی جاتی ہے کہ وہ جہاز میں سوار افراد کی حالت اور حادثے کے ارد گرد کے حالات کے بارے میں مزید معلومات فراہم کریں گے۔ قوم کے خیالات صدر رئیسی اور اس واقعے میں ملوث دیگر اہلکاروں کے ساتھ ہیں، کیونکہ مشکل حالات کے درمیان بچاؤ کی کوششیں جاری ہیں۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

پاکستان اسٹاک ایکسچینج: 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی کمی

پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) میں آج نمایاں مندی رہی، 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *