صدر رئیسی کا ہیلی کاپٹر حادثہ: آگ کے باوجود لاشیں قابل شناخت

ایرانی حکومت نے صدر ابراہیم رئیسی کے ہیلی کاپٹر کے حادثے کی وجوہات جاننے کے لیے تحقیقات کا آغاز کردیا ہے۔ ایرانی میڈیا کے مطابق ایرانی مسلح افواج کے چیف آف اسٹاف میجر جنرل محمد باقری نے بریگیڈیئر جنرل علی عبداللہی کی سربراہی میں ایک تحقیقاتی کمیٹی قائم کردی ہے۔

رپورٹس سے پتہ چلتا ہے کہ کمیٹی کے ارکان ہیلی کاپٹر کی خرابی کی تحقیقات شروع کرنے کے لیے پہلے ہی جائے حادثہ پر پہنچ چکے ہیں۔ تحقیقات کے نتائج مکمل ہونے کے بعد عوام کو بتائے جائیں گے۔

ابتدائی نتائج سے پتہ چلتا ہے کہ حادثہ تکنیکی خرابی کی وجہ سے ہوا، تاہم اس خرابی کی اصل نوعیت ابھی تک واضح نہیں ہے۔ ایران کے سابق وزیر خارجہ جواد ظریف نے اس واقعے پر تبصرہ کرتے ہوئے اس حادثے کی وجہ امریکی پابندیوں کے اثرات کو قرار دیا ہے۔ ظریف نے کہا کہ ان پابندیوں سے ایران کی ہوابازی کی صنعت بری طرح متاثر ہوئی ہے اور ضروری اجزاء کی خریداری روک دی گئی ہے۔

حادثے کے بعد لگنے والی آگ کے باوجود، ایرانی ڈیزاسٹر منیجمنٹ آرگنائزیشن کے سربراہ محمد حسن نامی نے تصدیق کی کہ صدر رئیسی، وزیر خارجہ حسین امیر-عبداللہیان، اور دیگر متاثرین کی لاشیں قابل شناخت ہیں، جس سے ڈی این اے ٹیسٹ کی ضرورت ختم ہو گئی ہے۔ نامی نے روشنی ڈالی کہ برآمد ہونے والی سب سے زیادہ زندہ لاش آیت اللہ محمد علی الہاشم کی تھی، جو مبینہ طور پر حادثے کے بعد ایک گھنٹے تک زندہ رہے اور حتیٰ کہ صدارتی دفتر کے سربراہ غلام حسین اسماعیلی سے ٹیلی فون کے ذریعے بات چیت کرنے میں کامیاب رہے۔

نامی نے کہا، “آیت اللہ محمد علی الہاشم کی لاش بہترین حالت میں پائی گئی، وہ حادثے کے بعد تقریباً ایک گھنٹے تک زندہ رہے اور صدارتی دفتر کے سربراہ، غلام حسین اسماعیلی کو فون کرنے میں کامیاب رہے۔”

ایران کے سپریم لیڈر نے بھی اس المناک حادثے کے حوالے سے ایک بیان جاری کیا ہے، جس میں نقصان کا اعتراف کیا ہے اور اس طرح کے واقعات دوبارہ نہ ہونے کو یقینی بنانے کے لیے جاری تحقیقات کی اہمیت پر زور دیا ہے۔ ایران کی ہوابازی کی حفاظت پر امریکی پابندیوں کے ممکنہ مضمرات کے پیش نظر ایران کے اندر اور بین الاقوامی سطح پر تحقیقات کے نتائج پر گہری نظر رکھی جائے گی۔

خلاصہ یہ کہ صدر رئیسی کے ہیلی کاپٹر کے حادثے کی تحقیقات جاری ہیں، ابتدائی رپورٹس میں بین الاقوامی پابندیوں کی وجہ سے تکنیکی خرابی کی طرف اشارہ کیا گیا ہے۔ اہم سیاسی شخصیات سمیت جاں بحق افراد کی لاشوں کی شناخت کر لی گئی ہے جس سے غمزدہ قوم کو کچھ سکون ملا ہے۔ تفتیش کی مکمل تفصیلات کا بڑی دلچسپی اور تشویش کے ساتھ انتظار کیا جائے گا۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

پاکستان اسٹاک ایکسچینج: 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی کمی

پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) میں آج نمایاں مندی رہی، 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *