اسپین نے ہندوستان سے دھماکہ خیز مواد لے جانے والے بحری جہاز کو ڈاکنگ سے روک دیا

اسپین نے بھارت سے بارودی مواد لے کر اسرائیل جانے والے جہاز کو اپنی بندرگاہ پر ڈوبنے سے روک کر سخت موقف اپنایا ہے۔ یہ اقدام اسپین کے امن کے عزم اور تنازعات والے علاقوں میں ہتھیاروں کی نقل و حمل کی سہولت کے خلاف اس کی پالیسی کو واضح کرتا ہے۔

غیر ملکی میڈیا رپورٹس کے مطابق ڈنمارک کا جھنڈا لہرانے والا جہاز 27 ٹن دھماکہ خیز مواد بھارت کے شہر چنئی سے اسرائیلی بندرگاہ حیفہ لے جا رہا تھا۔ ہسپانوی حکام نے جہاز کو روکا اور قومی اور بین الاقوامی سلامتی کے خدشات کا حوالہ دیتے ہوئے اسے گودی میں جانے کی اجازت دینے سے انکار کر دیا۔

ہسپانوی وزیر ٹرانسپورٹ نے اعلان کیا کہ اسپین ہتھیاروں سے لدے بحری جہازوں کو اپنی بندرگاہوں پر ڈوبنے کی اجازت نہیں دے گا اگر ان کی منزل اسرائیل ہے۔ یہ فیصلہ مشرق وسطیٰ میں تنازعات میں حصہ ڈالنے سے بچنے کے لیے ایک وسیع پالیسی کا حصہ ہے۔ وزیر نے اس بات پر زور دیا کہ اسپین کی بندرگاہوں کو پہلے سے ہی تشدد کی لپیٹ میں آنے والے علاقوں میں فوجی مواد کے لیے ٹرانزٹ پوائنٹ کے طور پر استعمال نہیں کیا جائے گا۔

ہسپانوی وزیر خارجہ جوز مینوئل نے حکومت کے فیصلے کے بارے میں مزید بصیرت فراہم کی۔ انہوں نے کہا کہ اسپین کے اقدامات اسرائیل کو ہتھیاروں کی برآمد کے لیے لائسنس جاری نہ کرنے کی اس کی سرکاری پالیسی کے مطابق ہیں۔ اس پالیسی کا مقصد اس بات کو یقینی بنانا ہے کہ اسپین مشرق وسطیٰ میں جاری تنازعات میں شریک نہ ہو۔ انہوں نے فوجی کوششوں پر سفارتی کوششوں کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ خطے کو مزید ہتھیاروں کی نہیں بلکہ امن کی ضرورت ہے۔

جہاز کو ڈاکنگ سے روکنے کا فیصلہ اسلحے کے پھیلاؤ کے بارے میں بین الاقوامی خدشات اور ان ہتھیاروں کے موجودہ تنازعات کو بڑھاوا دینے کے امکانات سے بھی متاثر تھا۔ اسپین کا موقف یورپی یونین کی وسیع تر پالیسیوں سے ہم آہنگ ہے جس کا مقصد غیر مستحکم خطوں میں استحکام اور امن کو فروغ دینا ہے۔

اسپین کے اس اقدام پر مختلف ردعمل سامنے آیا ہے۔ بعض بین الاقوامی مبصرین نے اسپین کی جانب سے تنازعہ والے علاقوں میں ہتھیاروں کی تجارت کے خلاف اصولی موقف اختیار کرنے کی تعریف کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ اس طرح کے اقدامات ان علاقوں میں ہتھیاروں کے بہاؤ کو کم کرنے کے لیے ضروری ہیں جہاں وہ مزید تشدد کو ہوا دے سکتے ہیں۔ تاہم، دوسروں نے اس فیصلے پر تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس سے خطے میں اہم اتحادی اسرائیل کے ساتھ سفارتی تعلقات کشیدہ ہو سکتے ہیں۔

یہ صورتحال بین الاقوامی تعلقات میں پیچیدہ حرکیات اور قومی سلامتی، اخلاقی تحفظات اور سفارتی تعلقات میں توازن قائم کرنے میں قوموں کو درپیش چیلنجوں پر روشنی ڈالتی ہے۔ اسپین کا بحری جہاز کو گودی میں جانے کی اجازت سے انکار کرنے کا فیصلہ امن کے لیے اس کی وابستگی اور تنازعات والے علاقوں میں ہتھیاروں کے پھیلاؤ کی حمایت سے انکار کا واضح بیان ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *