امریکی سپریم کورٹ نے ٹرمپ کو انتخابات کے لیے اہل قرار دے دیا

امریکی سپریم کورٹ نے سابق صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی آئندہ صدارتی انتخابات کے لیے اہلیت سے متعلق ایک تاریخی فیصلہ سناتے ہوئے ان کے حق میں فیصلہ سنا دیا۔ اس اہم آئینی فیصلے کا مطلب یہ ہے کہ ریاستی حکومتیں قانونی طور پر ٹرمپ کو صدر کے انتخاب میں حصہ لینے سے نہیں روک سکتیں، جس سے نومبر کے انتخابات میں حصہ لینے کی راہ میں حائل ایک بڑی رکاوٹ کو مؤثر طریقے سے دور کیا جا سکتا ہے۔

سپریم کورٹ کا فیصلہ انتہائی اہمیت کا حامل ہے، کیونکہ یہ اس بنیادی جمہوری اصول کو برقرار رکھتا ہے کہ افراد کو ملک میں اعلیٰ ترین عہدہ حاصل کرنے کے لیے من مانی طور پر روکا نہیں جانا چاہیے۔ ٹرمپ کو اہل قرار دے کر، سپریم کورٹ نے اس بات کو یقینی بنایا ہے کہ انتخابی عمل منصفانہ اور تمام اہل امیدواروں کے لیے کھلا رہے۔

قابل ذکر ہے کہ ٹرمپ اس وقت ریپبلکن پارٹی کے ممکنہ صدارتی امیدوار کے طور پر درج ہیں۔ سپریم کورٹ کے تمام ججوں کا متفقہ فیصلہ ریاست کولوراڈو کے ایک سابقہ ​​فیصلے کو بھی مسترد کرتا ہے، جس میں ٹرمپ کو ریپبلکن پارٹی کے ریاستی انتخابات میں حصہ لینے سے روکنے کی کوشش کی گئی تھی۔

کولوراڈو نے 20 دسمبر 2023 کو کیپٹل ہل حملے میں ان کے ملوث ہونے کا حوالہ دیتے ہوئے ٹرمپ پر پابندی عائد کر دی تھی کہ وہ 5 مارچ 2024 کو ہونے والے ان کی ریپبلکن پارٹی کے ریاستی انتخابات میں حصہ لینے سے نااہل قرار پائے۔ مستقبل کے صدارتی انتخابات میں ان کی پارٹی کے امیدوار ہوں۔

کولوراڈو کے علاوہ دو دیگر ریاستوں الینوائے اور مین نے بھی کیپیٹل ہل حملے میں ٹرمپ کے کردار کا حوالہ دیتے ہوئے ان پر اسی طرح کی پابندی عائد کی تھی۔ ان ریاستوں نے انہیں امریکی آئین کی بغاوت اور بغاوت کی شق کے تحت صدر کے لیے انتخاب لڑنے کے لیے نااہل سمجھا، جو بغاوت کی سرگرمیوں میں ملوث افراد کے لیے انتخابی پابندیوں کو حل کرتی ہے۔

تاہم، سپریم کورٹ نے واضح کیا کہ صرف کانگریس کو اس شق کو لاگو کرنے کا اختیار ہے اور انفرادی ریاستیں اس طرح کے مقاصد کے لیے 14ویں ترمیم کے سیکشن 3 کا استعمال نہیں کر سکتیں۔ یہ اہم قانونی امتیاز انتخابی اہلیت کے معاملے میں وفاقی حکومت اور انفرادی ریاستوں کے درمیان طاقت کے توازن کی تصدیق کرتا ہے۔

سپریم کورٹ کے فیصلے کے بعد ڈونلڈ ٹرمپ نے خوشی کا اظہار کرتے ہوئے اسے امریکا کی فتح قرار دیا۔ انہوں نے فوری طور پر اپنے حامیوں کو ایک ای میل جاری کی، جس میں ان کی انتخابی مہم کے لیے عطیات کی اپیل کی گئی۔ سپریم کورٹ کے اس فیصلے کے نہ صرف ٹرمپ کی امیدواری بلکہ وسیع تر انتخابی عمل اور آئینی اصولوں کی تشریح کے لیے بھی دور رس اثرات مرتب ہوں گے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

واز شریف کے پاس آرمی چیف کو برطرف کرنے کا قانونی اختیار تھا، علی محمد

قومی اسمبلی کے حالیہ اجلاس کے دوران پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے ایک …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *