ہندوستان کی منظر عام پر آنے والی ویڈیو میں پرنسپل کو چہرے پر فیشل کرتے ہوئے دکھایا

ایک ویڈیو منظر عام پر آئی جس میں پرنسپل کو چہرے پر فیشل کرتے ہوئے دکھایا گیا جب کلاسز چل رہی تھیں، جس نے غم و غصے کو جنم دیا اور اسکول حکام کے طرز عمل پر تشویش کا اظہار کیا۔ ایک اسسٹنٹ ٹیچر کے ذریعے کھینچی گئی ویڈیو میں پرنسپل کو سکول کے کچن میں بیوٹی ٹریٹمنٹ کے آخری مراحل سے گزرنے کا انکشاف کیا گیا، جہاں بظاہر اس طرح کے طریقہ کار کو انجام دیا جا رہا تھا۔

اسسٹنٹ ٹیچر نے نادانستہ طور پر اس منظر کو ویڈیو فلمانے کے دوران ریکارڈ کر لیا، ممکنہ طور پر ذاتی استعمال کے لیے یا اسکول کے ماحول کو دستاویز کرنے کے لیے۔ جیسے ہی وہ پرنسپل کے قریب پہنچی، جنہیں فلم کیے جانے کا علم نہیں تھا، کیمرے نے اس لمحے کو قید کر لیا جب پرنسپل نے اچانک ریکارڈنگ کو دیکھا اور اچانک اپنی کرسی سے کھڑے ہو کر ردعمل کا اظہار کیا۔

اس کے بعد ہونے والی افراتفری میں، پرنسپل نے مبینہ طور پر اسسٹنٹ ٹیچر کا ہاتھ نوچ دیا، جس سے خون بہنے لگا۔ اسسٹنٹ ٹیچر نے بعد میں ایک ویڈیو شیئر کی جس میں اسکریچ کے چھوڑے گئے نشانات دکھائے گئے، جو سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر تیزی سے وائرل ہوگئی، جس سے بڑے پیمانے پر توجہ اور تنقید کی گئی۔

واقعے کے بعد تحقیقات کا آغاز کردیا گیا اور حکام نے معاملے کی تحقیقات کا حکم دے دیا۔ مبینہ طور پر پرنسپل کو اس کے اعمال اور اس واقعے کے ارد گرد کے حالات کے بارے میں پوچھ گچھ کے لیے طلب کیا گیا تھا۔ مزید برآں، اسسٹنٹ ٹیچر نے اپنی چوٹ کی شدت کا اندازہ لگانے کے لیے طبی معائنہ کرایا، اور پرنسپل کے خلاف اس کے مبینہ بدتمیزی پر قانونی کارروائی شروع کی گئی۔

اس واقعے نے پیشہ ورانہ ذمہ داریوں پر ذاتی گرومنگ کو ترجیح دینے اور اسکول میں نگرانی اور جوابدہی کے فقدان پر سوالات اٹھائے ہیں۔ بہت سے لوگوں نے پرنسپل کے رویے پر صدمے اور مایوسی کا اظہار کیا ہے، جو ان کے خیال میں اسکول کی انتظامیہ پر بری طرح سے ظاہر ہوتا ہے اور طلباء اور عملے کی حفاظت اور بہبود کے بارے میں خدشات پیدا کرتا ہے۔

واقعے کے ردعمل میں اسکول انتظامیہ نے یقین دہانی کرائی ہے کہ تحقیقات مکمل ہونے کے بعد پرنسپل کے خلاف مناسب کارروائی کی جائے گی۔ یہ واقعہ تعلیمی اداروں میں پیشہ ورانہ مہارت اور اخلاقی معیارات کو برقرار رکھنے کی اہمیت، اور اسکول کے ماحول میں تمام افراد کی حفاظت اور وقار کو یقینی بنانے کے لیے قواعد و ضوابط پر سختی سے عمل کرنے کی ضرورت کی یاد دہانی کا کام کرتا ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *