لال سُہانرا نیشنل پارک میں نایاب درختوں کی کٹائی پر کارروائی، 11 افسران کا تبادلہ کر دیا گیا

پاکستان کے شہر بہاولپور کے لال سہانرا نیشنل پارک میں حکام نے 6 سے زائد قیمتی اور نایاب درختوں کی غیر قانونی کٹائی کے خلاف کارروائی کی جس کے نتیجے میں چیف کنزرویٹر آف فاریسٹ سمیت 11 اہلکاروں کو مختلف عہدوں پر تبدیل کر دیا گیا۔ یہ اقدام پنجاب کی سینئر وزیر مریم اورنگزیب کی جانب سے درختوں کی کٹائی کے ذمہ داروں کے خلاف قانونی کارروائی شروع کرنے کی ہدایات کے بعد کیا گیا۔

چیف کنزرویٹر خالد محمود اور کنزرویٹر منظور احمد، دونوں گریڈ 20 میں ہیں، کو لال سہانرا نیشنل پارک میں درختوں کی کٹائی کے واقعے کی روشنی میں دوبارہ تعینات کیا گیا۔ علاوہ ازیں ڈویژنل فارسٹ آفیسر ندیم اشرف، آر ایف او حماد رضا، ممتاز حسین، محمد سعید اور فاریسٹ گارڈز کا بھی تبادلہ کر دیا گیا۔

سینئر وزیر مریم اورنگزیب نے زور دے کر کہا کہ نایاب درختوں کی غیر قانونی کٹائی کے شواہد کے جواب میں کارروائی کی گئی اور جو لوگ ملوث پائے گئے انہیں ملازمت سے برطرف اور قانونی نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا۔ واقعے کے جواب میں اینٹی کرپشن کی ٹیم کو مزید تفتیش کے لیے بہاولپور روانہ کر دیا گیا ہے۔

یہ بات قابل غور ہے کہ لال سوہانرا نیشنل پارک، جو 127,000 ایکڑ سے زیادہ پر پھیلا ہوا ہے، جنوبی ایشیا کے سب سے بڑے پارکوں میں سے ایک سمجھا جاتا ہے، جسے یونیسکو نے اس کے منفرد فن تعمیر اور جغرافیہ کے لیے تسلیم کیا ہے، جو جنگلات اور جنگلی حیات کے تحفظ کے لیے وقف ہے۔

نایاب اور قیمتی درختوں کی غیر قانونی کٹائی ایک سنگین ماحولیاتی تشویش ہے، کیونکہ یہ نہ صرف جنگلات کی کٹائی میں معاون ہے بلکہ اس علاقے کی حیاتیاتی تنوع کو بھی خطرہ ہے۔ لال سوہانرا نیشنل پارک اپنے متنوع پودوں اور حیوانات کے لیے جانا جاتا ہے، جس میں کئی خطرے سے دوچار انواع بھی شامل ہیں۔ پارک ان انواع کے تحفظ اور خطے کے ماحولیاتی توازن کو برقرار رکھنے میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔

غیر قانونی درختوں کی کٹائی کے واقعے کے جواب میں حکام کی جانب سے کی جانے والی تیز رفتار کارروائی ماحولیات کے تحفظ اور ماحولیاتی قوانین کو نافذ کرنے کے لیے حکومت کے عزم کو ظاہر کرتی ہے۔ یہ ایک مضبوط پیغام بھیجتا ہے کہ ایسی سرگرمیوں کو برداشت نہیں کیا جائے گا اور ذمہ داروں کا احتساب کیا جائے گا۔

اس واقعے میں ملوث اہلکاروں کا تبادلہ اس بات کا واضح اشارہ ہے کہ حکومت ماحولیاتی مسائل سے نمٹنے اور قدرتی وسائل کے پائیدار انتظام کو یقینی بنانے کے لیے ٹھوس اقدامات کر رہی ہے۔ یہ ماحولیاتی تحفظ کی کوششوں میں عوامی شرکت کی اہمیت اور ماحولیاتی قوانین کے سخت نفاذ کی ضرورت کو بھی اجاگر کرتا ہے۔

آگے بڑھتے ہوئے، تمام اسٹیک ہولڈرز، بشمول سرکاری ایجنسیوں، مقامی کمیونٹیز، اور ماحولیاتی تنظیموں کے لیے ضروری ہے کہ وہ ہمارے قدرتی ورثے کے تحفظ اور تحفظ کے لیے مل کر کام کریں۔ اجتماعی کارروائی کرکے، ہم اس بات کو یقینی بنا سکتے ہیں کہ آنے والی نسلیں ہمارے قدرتی ماحول کی خوبصورتی اور فوائد سے لطف اندوز ہوتی رہیں۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

زلفی بخاری پی ٹی آئی چیئرمین کے مشیر برائے بین الاقوامی امور مقرر

پی ٹی آئی کے سیکریٹری جنرل عمر ایوب کی جانب سے جاری کردہ باضابطہ نوٹیفکیشن …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *