جمہوری جمہوریہ کانگو میں صدر کے خلاف بغاوت کی کوشش ناکام بنا دی گئی

جمہوری جمہوریہ کانگو میں صدر کے خلاف بغاوت کی کوشش ناکام بنا دی گئی

ایک اہم پیش رفت میں، جمہوری جمہوریہ کانگو کی فوج نے صدر Félix Tshisekedi کے خلاف بغاوت کی کوشش کو کامیابی سے ناکام بنا دیا ہے۔ یہ واقعہ، جو آج صبح پیش آیا، ملک میں جاری سیاسی اتار چڑھاؤ کو نمایاں کرتا ہے۔ بین الاقوامی میڈیا رپورٹس کے مطابق بغاوت کی کوشش کے نتیجے میں ایک باغی اور دو سکیورٹی اہلکار ہلاک ہوئے، متعدد مشتبہ افراد اب زیر حراست ہیں۔

عینی شاہدین نے برٹش براڈکاسٹنگ کارپوریشن (بی بی سی) کو تفصیلی بیانات فراہم کیے، جس میں بتایا گیا کہ کس طرح فوجی وردیوں میں ملبوس تقریباً 20 افراد نے صدر شیسیکیڈی کے اہم اتحادی اور آنے والے انتخابات میں اسپیکر کے عہدے کے لیے سرکردہ امیدوار وائٹل کامرہے کی رہائش گاہ پر حملہ کیا۔ حملے کو کامرہ کے گھر پر تعینات سیکورٹی فورسز کی جانب سے سخت ردعمل کا سامنا کرنا پڑا، جنہوں نے حملہ آوروں کو ناکام بنانے اور صورتحال کو مزید بڑھنے سے روکنے میں کامیاب رہے۔

ممکنہ بحران سے بچنے کے لیے فوج کی تیز رفتار کارروائی کو سراہا گیا ہے۔ ایک سرکاری بیان میں، فوجی ترجمان نے زور دے کر کہا، “ہم نے بغاوت کی کوشش کو کامیابی سے کچل دیا ہے، اور صورتحال اب مکمل طور پر قابو میں ہے۔” ترجمان نے عوام کو یقین دلایا کہ حکومت اور فوج ملک میں استحکام اور سلامتی کو برقرار رکھنے کے لیے تمام ضروری اقدامات کر رہی ہے۔

یہ واقعہ جمہوری جمہوریہ کانگو کو درپیش مسلسل چیلنجوں کی نشاندہی کرتا ہے، جہاں سیاسی تناؤ اور سلامتی کے مسائل موجود ہیں۔ صدر شیسیکیڈی، جو جنوری 2019 سے اقتدار میں ہیں، نے اپنے دور میں مسلح تنازعات اور سیاسی مخالفت سمیت متعدد چیلنجوں کا سامنا کیا۔ ناکام بغاوت اس طوالت پر روشنی ڈالتی ہے جس میں کچھ دھڑے موجودہ انتظامیہ میں خلل ڈالنے کے لیے تیار ہیں۔

بین الاقوامی مبصرین نے بغاوت کی کوشش پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس طرح کے اقدامات خطے کو مزید عدم استحکام کا شکار کر سکتے ہیں۔ افریقی یونین اور اقوام متحدہ دونوں نے پرسکون رہنے کی اپیل کی ہے اور تمام فریقوں سے تشدد کے بجائے بات چیت میں شامل ہونے کی اپیل کی ہے۔ بین الاقوامی برادری ملک میں سیاسی کشیدگی کے پرامن حل کی امید کے ساتھ صورت حال پر گہری نظر رکھے ہوئے ہے۔

اور انفراسٹرکچر۔

بغاوت کی کامیاب روک تھام کو کانگو کی فوج کی طاقت اور تیاری کے ثبوت کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔ تاہم، یہ بنیادی عدم استحکام کی ایک واضح یاد دہانی کے طور پر بھی کام کرتا ہے جس سے قوم کو خطرہ لاحق ہے۔ حکومت کے اگلے اقدامات جمہوری جمہوریہ کانگو میں دیرپا امن اور استحکام کے لیے اہم ہوں گے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

پاکستان اسٹاک ایکسچینج: 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی کمی

پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) میں آج نمایاں مندی رہی، 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *