بلاول بھٹو نے چیف جسٹس سے جوڈیشنل کمیچن فدذسس

پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے 9 مئی کے واقعات کی تحقیقات کے لیے چیف جسٹس کی سربر اہی میں جوڈیشل کمیشن کے قیام کا مطالبہ کیا ہے۔قومی اسمبلی کے اجلاس کے دوران جذباتی انداز میں اظہار خیال کرتے ہوئے بلاول بھٹو نے اہم کردار پر زور دیا۔ سیاست کی اپنی متعین حدود کے اندر، انتباہ کیا کہ ان حدود کی پابندی نہ کرنے سے دوسرے اداروں کے لیے ان کی اپنی حدود سے تجاوز کرنے کی مثال قائم ہوگی۔

بلاول کے جوڈیشل کمیشن کے مطالبے کا پس منظر محمود اچکزئی کے حالیہ بیانات تھے، جن میں سیاست کو دیگر معاملات سے الگ رکھنے کے لیے معاہدے کی وکالت کی گئی تھی۔ بلاول نے واضح طور پر ریمارکس دیئے کہ جب تک سیاستدان باہمی احترام کا مظاہرہ نہیں کریں گے، وہ معاشرے کے دیگر شعبوں سے اس طرح کے احترام کی توقع نہیں کر سکتے۔ انہوں نے جمہوری عمل اور قانون کی حکمرانی کے تقدس کو برقرار رکھنے کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ ان اصولوں کی پاسداری قوم کے استحکام اور ترقی کے لیے ضروری ہے۔

مزید برآں، بلاول نے 9 مئی کے واقعات کے حوالے سے وزیراعلیٰ خیبرپختونخوا کی درخواست پر انکوائری کی حمایت کی۔ انہوں نے انکوائری کے نتائج کے پیچھے کھڑے ہونے کے لیے اپنی رضامندی ظاہر کی اگر وہ تمام اسٹیک ہولڈرز کی طرف سے قبول کیے جائیں، اور گورننس میں شفافیت اور احتساب کو برقرار رکھنے کے اپنے عزم پر زور دیا۔

جوڈیشل کمیشن کی ضرورت پر توجہ دینے کے علاوہ، بلاول نے اپوزیشن کی طرف اپنے ریمارکس کی ہدایت کی، ان پر زور دیا کہ وہ تعمیری تنقید کریں اور کسی بھی غیر آئینی یا غیر جمہوری اقدامات کی مذمت کریں۔ انہوں نے اپوزیشن کی جائز شکایات کا دفاع کرنے کا عہد کیا لیکن خبردار کیا کہ وہ ملک کے جمہوری تانے بانے کو نقصان پہنچانے والی کسی بھی سرگرمی کی مخالفت کریں گے۔

بلاول کی تقریر اتحاد اور ذمہ داری کے وسیع تر پیغام سے گونجتی تھی، جس میں تمام اسٹیک ہولڈرز پر زور دیا گیا کہ وہ قومی مفاد کو تعصبی ایجنڈوں سے بالاتر ہو کر ترجیح دیں۔ انہوں نے ایسے فیصلے کرنے کی اہمیت پر زور دیا جو جمہوری اداروں کو مضبوط کرتے ہیں اور پاکستان کے روشن مستقبل کو فروغ دیتے ہیں۔

بلاول کے خطاب کے بعد، سابق وزیر خارجہ نے بھی صورتحال پر وزن کیا، اس جذبات کی بازگشت کرتے ہوئے کہ پاکستانی عوام کو غربت، مہنگائی اور بے روزگاری سمیت اہم چیلنجز کا سامنا ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ووٹرز نے کسی ایک پارٹی کو واضح مینڈیٹ نہیں دیا ہے بلکہ عام شہریوں کو درپیش معاشی مشکلات کو دور کرنے کے اقدامات کو ووٹ دیا ہے۔

آخر میں، بلاول کا عدالتی کمیشن کا مطالبہ گورننس میں شفافیت اور جوابدہی کی اہمیت کو اجاگر کرتا ہے، جبکہ سیاسی پختگی اور تمام اسٹیک ہولڈرز کے درمیان تعاون کی ضرورت پر بھی زور دیتا ہے۔ ان کا پیغام پاکستان کے جمہوری اصولوں کو آگے بڑھانے اور اس کے شہریوں کی فلاح و بہبود کو یقینی بنانے کے وسیع تر مقصد سے گونجتا ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

پاکستان اسٹاک ایکسچینج: 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی کمی

پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) میں آج نمایاں مندی رہی، 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *