انتخابات کا انعقاد ایک آئینی ذمہ داری ہے

وزیر اعظم انوار الحق کاکڑ نے معاشی بحالی کی بنیادی اہمیت پر زور دیتے ہوئے 8 فروری کو ہونے والے انتخابات کے انعقاد کی ہماری آئینی ذمہ داری کی توثیق کی۔

امریکی ٹی وی چینل CNBC کو انٹرویو دیتے ہوئے وزیراعظم کاکڑ نے زور دیا کہ معاشی بحالی ایجنڈے میں سرفہرست ہے، الیکشن کمیشن نے آنے والے انتخابات کے لیے تمام شرائط پوری کر لی ہیں۔

پاکستان کے انتخابی منظر نامے کے بارے میں سوالات کا جواب دیتے ہوئے، انوار الحق کاکڑ نے زور دے کر کہا کہ عام انتخابات 8 فروری کو ہونے والے ہیں۔ انتخابات سے پہلے کی قیاس آرائیاں اور جائزے بین الاقوامی مبصرین کے انتخابات کے بعد شفافیت کی تصدیق کرنے سے پہلے ہیں۔ جاری تیاری فروری کے انتخابات کو اقتصادی استحکام کی طرف ایک اہم پیش رفت کے طور پر اجاگر کرتی ہے۔

کاکڑ اس بات پر زور دیتے ہیں کہ انتخابات کا انعقاد ایک آئینی ذمہ داری ہے، ناگران حکومت کے تحت بغیر کسی رکاوٹ کے عمل کا عہد کرنا۔ ووٹنگ کے عمل میں عوام کی شرکت کو یقینی بنانا بھی حکومتی ذمہ داری کے طور پر تسلیم کیا جاتا ہے۔

قومی معیشت کو چھوتے ہوئے، کاکڑ نے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (IMF) کی تمام شرائط کی تعمیل کو نوٹ کرتے ہوئے معاشی ترقی کے لیے اصلاحات کی ناگزیریت کو اجاگر کیا۔ آئی ایم ایف کی جانب سے 11 جنوری کو دوسری قسط کی حالیہ منظوری پاکستان کے عزم کا ثبوت ہے۔

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے بارے میں استفسارات کا جواب دیتے ہوئے، کاکڑ نے سابق وزیر اعظم کے خلاف بدامنی پھیلانے کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے، اس طرح کے دعووں کی بے بنیادیت پر زور دیا۔ ان کا کہنا ہے کہ پی ٹی آئی کے کارکنوں نے تشدد سے گریز کیا، 9 مئی کے واقعات میں ملوث افراد اس وقت حراست میں ہیں۔

پی ٹی آئی کے بانی کے الزامات پر، کاکڑ نے عدالتوں کے الزامات کی سچائی کا فیصلہ کرنے کے حق پر زور دیا۔

افغانستان کی طرف توجہ دلاتے ہوئے، کاکڑ نے انکشاف کیا کہ امریکی ہتھیار بلیک مارکیٹ میں ختم ہوئے اور دہشت گردوں نے حاصل کیے تھے۔ افغان پناہ گزینوں کے حوالے سے، وہ پاکستان کے اہم کردار کو تسلیم کرتے ہیں، جو افغان مہاجرین کی باوقار وطن واپسی کے لیے جاری کوششوں کی نشاندہی کرتے ہیں، جو قانونی دستاویزات کے حامل ہیں۔

کاکڑ نے اقتصادی چیلنجوں بالخصوص دہشت گردی کے خلاف پاکستان کی لچک پر زور دیا، دہشت گردی کی تمام اقسام کے خلاف ثابت قدم موقف کا اعادہ کیا۔

پاک چین تعلقات کے دائرے میں، وزیر اعظم کاکڑ نے چین کے ساتھ قریبی سٹریٹجک شراکت داری کو اجاگر کرتے ہوئے، علاقائی حرکیات کے لیے اس بندھن کے ناپائیدار ہونے پر زور دیا۔ پاک چین تعلقات کی پائیدار مضبوطی موجودہ علاقائی صورتحال سے متاثر نہیں ہوتی۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

طلال چوہدری کی مخصوص نشستوں کے فیصلے پر تنقید، دعویٰ یہ سیاسی استحکام کو نقصان پہنچاتا ہے

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنما طلال چوہدری نے مخصوص نشستوں کے حوالے سے حالیہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *