کراچی میں زلزلے کے جھٹکے :شدت 3.2

کراچی کے ملیر کے علاقے میں ریکٹر اسکیل پر 3.2 کی شدت کے جھٹکے محسوس کیے گئے۔ زلزلے کا مرکز کراچی کے علاقے نیو ملیر میں سطح زمین سے 12 کلومیٹر نیچے تھا۔ ملیر اور اس کے آس پاس کے رہائشیوں نے زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے، جس سے ممکنہ نقصان اور حفاظت کے بارے میں خدشات پیدا ہوئے۔

محکمہ موسمیات نے زلزلے کی شدت کی تصدیق کرتے ہوئے خطے میں زلزلے کی سرگرمیوں کو اجاگر کیا۔ زلزلے کی نگرانی کرنے والے مرکز کے مطابق، اس طرح کے کم گہرائی والے زلزلے عام طور پر کم شدت کی وجہ سے گہرے زلزلوں کے مقابلے میں کم نقصان پہنچاتے ہیں۔ نیشنل سونامی سینٹر کے ڈائریکٹر عامر حیدر نے اس نکتے پر زور دیا، یہ نوٹ کرتے ہوئے کہ اس زلزلے کی کم گہرائی اور کم شدت ممکنہ اثرات کو کم کر سکتی ہے۔

ہائیڈر کا ایک اہم مشاہدہ یہ تھا کہ زلزلے اکثر زور دار دھماکے کرتے ہیں، لیکن ان کے وقوع پذیر ہونے کی پیشن گوئی کرنا اب بھی مشکل ہے۔ کراچی، جو زلزلے کے لحاظ سے ایک فعال خطے میں واقع ہے، باقاعدگی سے 4.8 سے 5.8 شدت کے زلزلے محسوس کرتا ہے۔ یہ حالیہ واقعہ، اگرچہ نسبتاً معمولی، خطے کے زلزلے کے خطرے کی یاد دہانی کا کام کرتا ہے۔

زلزلے کا آنا ایک فطری عمل ہے، جو زمین کی سطح کے نیچے ٹیکٹونک پلیٹوں کی نقل و حرکت سے ہوتا ہے۔ یہ حرکتیں، جو اکثر انسانوں کے لیے ناقابلِ فہم ہوتی ہیں، اچانک توانائی کے اخراج کا باعث بن سکتی ہیں، جس کے نتیجے میں زلزلہ کی لہریں پیدا ہوتی ہیں جو زلزلے کا باعث بنتی ہیں۔

پاکستان جو ہندوستانی اور یوریشین ٹیکٹونک پلیٹوں کی سرحد پر واقع ہے، زلزلوں کے لیے حساس ہے۔ ان پلیٹوں کے تصادم سے فالٹ لائنوں کے ساتھ تناؤ پیدا ہوتا ہے، جو بالآخر جمع شدہ تناؤ کے خارج ہونے پر زلزلے کا باعث بنتا ہے۔

زلزلے کی سرگرمیوں کے جواب میں، کراچی اور دیگر زلزلہ زدہ علاقوں کے رہائشیوں کے لیے تیار رہنا بہت ضروری ہے۔ اس بات کو یقینی بنانے کے لیے بلڈنگ کوڈز کو نافذ کیا جانا چاہیے کہ ڈھانچے زلزلہ کی قوتوں کا مقابلہ کر سکیں۔ مزید برآں، زلزلے کی وجہ سے ہونے والے کسی بھی ممکنہ نقصان یا چوٹ سے فوری طور پر نمٹنے کے لیے ہنگامی ردعمل کی منصوبہ بندی ہونی چاہیے۔

مجموعی طور پر، حال ہی میں کراچی کے ملیر کے علاقے میں آنے والا زلزلہ نسبتاً معمولی تھا، لیکن یہ خطے کے زلزلے کے خطرات کی یاد دہانی کا کام کرتا ہے۔ علاقے میں مستقبل کے زلزلے کے واقعات کے اثرات کو کم کرنے کے لیے تیاری، آگاہی، اور بلڈنگ کوڈز کی پابندی ضروری ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *