مختلف شعبوں میں ٹیکس چوری روکنے میں ناکامی، آئی ایم ایف کی شکایت پر تحقیقاتی کمیٹی قائم کر دی گئی

مختلف شعبوں میں ٹیکس چوری کو روکنے کے لیے حکومت کی جدوجہد نے خدشات کو جنم دیا ہے، جس سے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی شکایت کے بعد ایک تحقیقاتی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے۔ وزیر اعظم شہباز شریف نے فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کی جانب سے سگریٹ، سیمنٹ، چینی اور کھاد جیسی صنعتوں میں ٹیکس چوری روکنے میں ناکامی کا نوٹس لیتے ہوئے انکوائری کمیٹی قائم کردی۔

رپورٹس بتاتی ہیں کہ غیر فعال ٹریک اینڈ ٹریس سسٹم سے نمٹنے کے لیے 5 رکنی کمیٹی تشکیل دی گئی ہے جو کہ ٹیکس چوری کی نگرانی اور روک تھام کے لیے انتہائی اہم ہے۔ سابق سیکرٹری خزانہ طارق باجوہ کی سربراہی میں قائم کمیٹی میں پاکستان سنگل ونڈو کے سی ای او، نیشنل آئی ٹی بورڈ کے سی ای او، وزارت قانون کے ایڈیشنل سیکرٹری اور ٹیکنالوجی کمیٹی کے رکن جیسی اہم شخصیات شامل ہیں۔

کمیٹی کی بنیادی توجہ ایف بی آر کی جانب سے ٹریک اینڈ ٹریس سسٹم کے نفاذ میں ناکامی کی وجوہات کی چھان بین کرنا ہے۔ آئی ایم ایف کی شکایت گزشتہ دو سالوں میں چار اہم شعبوں میں اس نظام کو نافذ کرنے میں ایف بی آر کی نااہلی کو نمایاں کرتی ہے۔ نتیجے کے طور پر، IMF نے اہم ٹیکس چوری کا مؤثر طریقے سے مقابلہ کرنے کے لیے ٹریک اینڈ ٹریس سسٹم کے مکمل نفاذ کی فوری ضرورت پر زور دیا ہے۔

ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ ایف بی آر نے تمباکو، سیمنٹ، چینی اور کھاد جیسے شعبوں میں اس نظام کو نافذ کرنے کے لیے جدوجہد کی ہے، یہ ایک دھچکا ہے جو پچھلے دو سالوں سے پھیلا ہوا ہے۔ تحقیقاتی کمیٹی سسٹم کو موثر طریقے سے نافذ کرنے میں ناکامی میں ایف بی آر حکام کے کردار کا بھی جائزہ لے گی۔

کمیٹی کی تشکیل ٹیکس چوری سے نمٹنے اور ٹیکس وصولی کے نظام کے موثر کام کو یقینی بنانے کے لیے حکومت کے عزم کی نشاندہی کرتی ہے۔ ٹریک اینڈ ٹریس سسٹم کو مختلف صنعتوں میں ٹیکس وصولی میں شفافیت اور جوابدہی کو بڑھانے کے لیے ایک اہم ٹول کے طور پر دیکھا جاتا ہے۔

کمیٹی کی تحقیقات کے نتائج کا بے صبری سے انتظار ہے، کیونکہ اس سے ایف بی آر کو ٹریک اینڈ ٹریس سسٹم کے نفاذ میں درپیش چیلنجز کے بارے میں بصیرت فراہم کرنے کی توقع ہے۔ مزید برآں، کمیٹی کے نتائج ممکنہ طور پر مستقبل کی حکمت عملیوں سے آگاہ کریں گے جس کا مقصد ٹیکس کی تعمیل کو مضبوط بنانا اور ٹیکس چوری کا مؤثر طریقے سے مقابلہ کرنا ہے۔

آخر میں، تحقیقاتی کمیٹی کا قیام ٹیکس چوری سے نمٹنے اور ریونیو اکٹھا کرنے کے طریقہ کار کو بڑھانے کے لیے حکومت کے فعال انداز کی عکاسی کرتا ہے۔ توقع ہے کہ کمیٹی کے نتائج اور سفارشات مستقبل کی پالیسیوں کی تشکیل میں اہم کردار ادا کریں گی جس کا مقصد ٹیکس کی تعمیل کو بہتر بنانا اور مختلف شعبوں میں منصفانہ ٹیکس کے طریقہ کار کو یقینی بنانا ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

زلفی بخاری پی ٹی آئی چیئرمین کے مشیر برائے بین الاقوامی امور مقرر

پی ٹی آئی کے سیکریٹری جنرل عمر ایوب کی جانب سے جاری کردہ باضابطہ نوٹیفکیشن …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *