ایف آئی اے نے ‘عدلیہ مخالف مہم’ شروع کر دی، صحافیوں سمیت 65 افراد کو نوٹس جاری

پاکستان میں وفاقی تحقیقاتی ایجنسی (ایف آئی اے) کی ‘عدلیہ مخالف مہم’ سے منسلک ایک اقدام میں، مشترکہ تحقیقاتی ٹیم (جے آئی ٹی) نے صحافیوں سمیت 127 سوشل میڈیا اکاؤنٹس کی نشاندہی کی اور 65 افراد کو نوٹسز جاری کیے۔ جے آئی ٹی کی جانب سے جاری کردہ معلومات کے مطابق اب تک 15 شہروں میں مجموعی طور پر 115 انکوائریاں درج کی گئی ہیں۔

25 جنوری کو جاری کیے گئے نوٹسز میں معروف صحافی سریر عالمگیر، شاہین صہبائی اور مطیع اللہ جان شامل ہیں۔ مہم میں کراچی سے تعلق رکھنے والے وکیل جبران نصیر، اینکر اقرار الحسن اور ملیحہ ہاشمی، صابر شاکر، صادق جان، اور دیگر کو بھی نشانہ بنایا گیا۔ ثمر عباس، اسد علی طور، حیدر رضا مہدی، اور عادل راجہ۔

طلب کیے گئے تمام افراد کو 31 جنوری کو صبح 11 بجے اسلام آباد میں ایف آئی اے کے سائبر کرائم سینٹر میں پیش ہونا ضروری ہے۔

گزشتہ ہفتے وزیر اطلاعات مرتضیٰ سولنگی نے اسلام آباد میں ایف آئی اے اور پی ٹی آئی حکام کے ساتھ مشترکہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا تھا کہ عدالتی فیصلے عوام سے تعلق رکھتے ہیں، یہ کہتے ہوئے کہ “آئین میں ان فیصلوں پر تنقید اور تعریف کی اجازت ہے، لیکن یہ ایک بدنیتی پر مبنی مہم ہے۔ عدلیہ اور ججوں کو ملکی اور بین الاقوامی سطح پر شروع کیا گیا ہے۔”

سولنگی نے سوشل میڈیا کے ذمہ دارانہ استعمال کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے عوام پر زور دیا کہ وہ صوابدید کا استعمال کریں اور اپنے فون پر موصول ہونے والی ہر پوسٹ پر یقین نہ کریں۔

پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی کے ڈائریکٹر جنرل احمد شمیم ​​نے بتایا کہ سیکشن 37 کے تحت پاکستان ٹیلی کمیونیکیشن اتھارٹی کو پی ٹی آئی کے اکاؤنٹس بلاک کرنے کا اختیار حاصل ہے۔ انہوں نے اپنی ویب سائٹ کے ذریعے رپورٹنگ کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے کہا، “ہم نے ایک پورٹل بنایا ہے جہاں ایجنسیاں بھی ہمیں رپورٹ کرتی ہیں۔ CTID، نشریات کے وزیر، اپنی معلومات شیئر کرتے ہیں، اور ہم ان ایجنسیوں کے خلاف شکایات پر کارروائی کرتے ہیں۔”

ایف آئی اے کے ڈائریکٹر سید وقار الدین نے انکشاف کیا کہ ریاستی اداروں کے خلاف مہم چلانے میں ملوث افراد کی جانچ پڑتال کے بعد 500 سے زائد اکاؤنٹس کی نشاندہی کی گئی۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ معاشرے میں غلط معلومات پھیلانے اور سوشل میڈیا پلیٹ فارم کو بطور ہتھیار استعمال کرنے کی اجازت نہیں ہے۔

پریس کانفرنس کا اختتام ‘عدلیہ مخالف مہم’ میں ملوث افراد کے خلاف قانونی کارروائی کرنے کے حکومتی عزم کو اجاگر کرتے ہوئے آن لائن معلومات کے اشتراک میں چوکسی اور ذمہ داری کے مطالبے کے ساتھ ہوا۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

طلال چوہدری کی مخصوص نشستوں کے فیصلے پر تنقید، دعویٰ یہ سیاسی استحکام کو نقصان پہنچاتا ہے

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنما طلال چوہدری نے مخصوص نشستوں کے حوالے سے حالیہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *