غزہ ایک بار پھر اسرائیل اور فلسطین کے درمیان تنازعہ کا مرکز بن گیا ہے،

غزہ ایک بار پھر اسرائیل اور فلسطین کے درمیان تنازعہ کا مرکز بن گیا ہے، اسرائیلی فوجی کارروائیوں میں 24 گھنٹوں کے دوران 28 فلسطینیوں کی جانیں گئیں۔ جاری دشمنی نے خطے میں انسانی بحران کو بڑھاتے ہوئے شدت اختیار کر لی ہے۔

غیر ملکی خبر رساں اداروں کی رپورٹوں میں بتایا گیا ہے کہ اسرائیلی فوج نے الزہرہ شہر میں فضائی حملہ کیا جو ناصرات کیمپ کے شمال میں واقع ہے جس کے نتیجے میں چھ فلسطینی شہید ہو گئے۔ ناصرات کیمپ میں ایک اور حملہ مزید تین فلسطینیوں کی شہادت کا باعث بنا۔ یہ حملے تشدد کے اس چکر کے تسلسل کی نمائندگی کرتے ہیں جس نے خطے کو دہائیوں سے دوچار کر رکھا ہے، جس میں دونوں فریقوں کو بھاری جانی نقصان اٹھانا پڑا ہے۔

ان حملوں کے علاوہ اسرائیلی فورسز نے غزہ شہر میں ایک رہائشی عمارت کو نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں دو فلسطینی ہلاک اور متعدد زخمی ہو گئے۔ ان حملوں کی اندھا دھند نوعیت کی وجہ سے عالمی برادری کی طرف سے بڑے پیمانے پر مذمت کی گئی ہے، جس میں مزید جانی نقصان کو روکنے کے لیے فوری جنگ بندی کا مطالبہ کیا گیا ہے۔

غزہ کی صورتحال بدستور تشویشناک ہے، فلسطینی وزارت صحت نے صرف گزشتہ 24 گھنٹوں کے دوران کل 28 فلسطینیوں کے شہید اور 51 دیگر زخمی ہونے کی اطلاع دی ہے۔ اس طرح تنازعہ کے آغاز سے اب تک شہید ہونے والے فلسطینیوں کی کل تعداد 34,596 تک پہنچ گئی ہے جب کہ 77,816 دیگر زخمی ہوئے ہیں۔

اسرائیل اور سعودی عرب کے درمیان تعلقات قائم کرنے کی کوششیں، جنہیں بعض لوگ خطے میں امن کے لیے ممکنہ راستے کے طور پر دیکھتے ہیں، کے خاطر خواہ نتائج نہیں ملے۔ ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ خامنہ ای نے ان کوششوں کو مسترد کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ مشرق وسطیٰ کے بنیادی تنازعات کو حل نہیں کریں گے۔

دریں اثنا، کیلیفورنیا یونیورسٹی میں، اسرائیل اور فلسطینی یکجہتی کے حامی طلباء کے درمیان کشیدگی بڑھ گئی ہے، جس میں مؤخر الذکر کے خلاف تشدد کی اطلاعات ہیں۔ یہ واقعہ اسرائیل-فلسطینی تنازعہ کے عالمی اثرات کو نمایاں کرتا ہے، جو پوری دنیا میں کمیونٹیز کو پولرائز کر رہا ہے۔

جیسے جیسے تشدد میں اضافہ ہوتا جا رہا ہے اور انسانی بحران گہرا ہوتا جا رہا ہے، اسرائیل فلسطین تنازعہ کے پرامن حل کی ضرورت پہلے سے کہیں زیادہ فوری ہو جاتی ہے۔ عالمی برادری کو جنگ بندی اور پائیدار امن معاہدے کی کوششوں کی حمایت کے لیے اکٹھا ہونا چاہیے جو تنازع کی بنیادی وجوہات کو حل کرے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *