پنجاب اور سندھ میں آج سے 27 مئی تک ہیٹ ویو متوقع

ایک اہم ہیٹ ویو کے پاکستان کے بیشتر علاقوں پر اثر انداز ہونے کی پیش گوئی کی گئی ہے، پنجاب اور سندھ کے صوبے سب سے زیادہ متاثر ہونے کی توقع ہے۔ آج، 21 مئی سے شروع ہو کر 27 مئی تک جاری رہے گا، ان خطوں کے رہائشیوں کو غیر معمولی طور پر زیادہ درجہ حرارت کے لیے تیاری کرنی چاہیے۔

محکمہ موسمیات کے مطابق سندھ اور پنجاب کے بیشتر شہروں میں دن کا درجہ حرارت آج سے 23 مئی تک معمول سے 3 سے 4 ڈگری سینٹی گریڈ زیادہ رہے گا، 23 سے 27 مئی کے درمیان صورتحال مزید شدت اختیار کرنے کا امکان ہے، درجہ حرارت میں مزید 6 تک اضافہ ہوگا۔ سال کے اس وقت کے لیے اوسط سے 8 ڈگری سیلسیس زیادہ۔

یہ شدید گرمی خاص طور پر کمزور آبادیوں جیسے بزرگوں، بچوں اور پہلے سے موجود صحت کی حالتوں میں مبتلا افراد کے لیے صحت کے لیے اہم خطرات لاحق ہے۔ ماہرین ہائیڈریٹ رہنے، چوٹی کے اوقات میں براہ راست سورج کی روشنی سے گریز کرنے اور باہر کام کرنے کی صورت میں باقاعدہ وقفے لینے کا مشورہ دیتے ہیں۔ ہلکے، ڈھیلے کپڑے پہننے اور نقصان دہ UV شعاعوں سے بچانے کے لیے سن اسکرین استعمال کرنے کی بھی سفارش کی جاتی ہے۔

گرمی کی لہر صرف پنجاب اور سندھ تک محدود نہیں ہے۔ محکمہ موسمیات نے اسلام آباد، خیبرپختونخوا، کشمیر، گلگت بلتستان اور بلوچستان سمیت دیگر علاقوں کے لیے وارننگ بھی جاری کی ہے۔ ان علاقوں میں آج سے 27 مئی تک دن کے وقت درجہ حرارت معمول سے 4 سے 6 ڈگری سیلسیس زیادہ رہنے کی توقع ہے۔

صحت کے خطرات کے علاوہ، بڑھتے ہوئے درجہ حرارت سے ماحولیاتی خطرات لاحق ہیں۔ درجہ حرارت میں تیزی سے اضافہ گلیشیئرز کے پگھلنے کا باعث بن سکتا ہے، جس سے برفانی جھیلوں کے سیلاب (GLOFs) کا خطرہ بڑھ جاتا ہے۔ یہ سیلاب اس وقت آتے ہیں جب گلیشیئر سے بند پانی اچانک چھوڑ دیا جاتا ہے، جس کے اکثر نیچے دھارے کی کمیونٹیز پر تباہ کن اثرات مرتب ہوتے ہیں۔ شمالی پاکستان کے پہاڑی علاقے، جن میں گلگت بلتستان اور خیبر پختونخوا کے کچھ حصے شامل ہیں، خاص طور پر اس طرح کے واقعات کا شکار ہیں۔ شدید سیلاب بھی ایک تشویش کا باعث ہیں، کیونکہ پگھلنے والی برف اور برف سے بڑھتا ہوا بہاؤ دریا کے نظام کو زیر کر سکتا ہے۔

حکام ان علاقوں کے رہائشیوں سے ہوشیار رہنے اور ضروری احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کی تاکید کر رہے ہیں۔ اس میں اچانک آنے والے سیلاب کے لیے تیار رہنا، نکاسی آب کے نظام کے صاف ہونے کو یقینی بنانا، اور ہنگامی منصوبہ بندی کرنا شامل ہے۔ مقامی حکومتیں اور ڈیزاسٹر مینجمنٹ ایجنسیاں ہائی الرٹ پر ہیں، گرمی کی لہر کی وجہ سے پیدا ہونے والی کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لیے تیار ہیں۔

محکمہ موسمیات صورتحال کو قریب سے مانیٹر کرتا رہے گا اور باقاعدہ اپ ڈیٹ فراہم کرتا رہے گا۔ عوام کے لیے قابل اعتماد ذرائع سے باخبر رہنا اور صحت اور موسمی حکام کی طرف سے جاری کردہ ہدایات پر عمل کرنا بہت ضروری ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

پاکستان اسٹاک ایکسچینج: 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی کمی

پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) میں آج نمایاں مندی رہی، 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *