پی ٹی آئی اقتدار میں آتی تو اوورسیز پاکستانیوں سے پیسا لیکر ملکی مشکلات ختم کر سکتے ہیں

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے بانی عمران خان نے اس یقین کا اظہار کیا ہے کہ اگر پی ٹی آئی اقتدار میں آتی ہے تو وہ ایک کروڑ سمندر پار پاکستانیوں سے تیزی سے فنڈز حاصل کر کے پاکستان کی مشکلات کو دور کر سکتے ہیں۔ یہ بیان پی ٹی آئی کی جانب سے اٹھائے جانے والے اقدامات کے ایک سلسلے کے درمیان سامنے آیا ہے، جس میں تحریک انصاف پارٹی کے تمام نو منتخب اراکین پر صوبائی اور قومی اسمبلیوں میں حکومتی عہدیداروں کو مبارکباد دینے اور گلے ملنے پر پابندیاں عائد کرنا شامل ہیں۔ اس اقدام کا اعلان پی ٹی آئی کے بانی نے اڈیالہ جیل میں پارٹی اراکین سے ملاقات کے بعد کیا، جہاں وہ اس وقت قید ہیں۔

پی ٹی آئی کی اہم شخصیت شیر ​​افضل مروت نے سینیٹ کی مخصوص نشستوں کے حوالے سے الیکشن کمیشن کے فیصلے پر تنقید کرتے ہوئے پارٹی کے موقف پر مزید زور دیا۔ مروت نے دعویٰ کیا کہ الیکشن کمیشن کے فیصلے نے پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل-این) اور پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کی حمایت کی، جس سے پی ٹی آئی نے اتوار کو ہونے والے فیصلے کے خلاف ملک گیر احتجاج کا اعلان کیا۔

مروت کے تبصروں میں عمران خان کی ہدایت پر بھی روشنی ڈالی گئی کہ کسی بھی ایسے اشاروں سے گریز کیا جائے جو حکومت اور اپوزیشن کے درمیان گٹھ جوڑ کا مشورہ دے سکے۔ یہ ہدایت ملک میں سیاسی کشیدگی کے باوجود حکمران حکومت اور اپوزیشن کے درمیان واضح فرق کو برقرار رکھنے کے لیے پی ٹی آئی کی کوششوں کی نشاندہی کرتی ہے۔

مزید برآں، مروت نے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) سے انتخابی عمل کے آڈٹ کا مطالبہ کیا اور تجویز پیش کی کہ اگر موجودہ حکومت جائز ہے تو اسے قرضوں کی ادائیگی کرنی چاہیے۔ یہ مطالبہ پی ٹی آئی کے انتخابی عمل میں شفافیت اور مالیاتی احتساب کے عزم کی عکاسی کرتا ہے۔

مروت نے بخشی بی بی کی قید تنہائی پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ عمران خان کو مزید سات سال قید کی سزا سنائی گئی ہے اور انہوں نے کسی بھی معاہدے کو مسترد کر دیا ہے۔ انہوں نے اقتدار کی تقسیم کے انتظامات میں سابقہ ​​شرکت پر افسوس کا اظہار کیا، جس سے حکمرانی اور سیاسی اتحاد کی طرف پی ٹی آئی کے نقطہ نظر میں تبدیلی کا اشارہ ملتا ہے۔

مجموعی طور پر پی ٹی آئی کے حالیہ اقدامات اور بیانات گورننس، انتخابی شفافیت اور مالیاتی احتساب کے بارے میں ایک مضبوط موقف کی نشاندہی کرتے ہیں۔ عمران خان کی قیادت کے ساتھ، پارٹی اپنی بیرون ملک حمایت کا فائدہ اٹھا کر اور ادارہ جاتی اصلاحات کی وکالت کرتے ہوئے پاکستان کے چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے پرعزم دکھائی دیتی ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

پاکستان اسٹاک ایکسچینج: 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی کمی

پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) میں آج نمایاں مندی رہی، 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *