کچھ لوگ جیل بھیجنا پڑیں تو بھیجیں، دکانوں پرٹیکس نہیں لگایا تو سب بیکارہے: مفتاح اسماعیل

سابق وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل نے پاکستان مسلم لیگ-نواز (پی ایم ایل این) پر تنقید کی ہے جس کے بارے میں وہ نقصان دہ اندرونی سیاست کے طور پر سمجھتے ہیں، خاص طور پر دکانداروں پر ٹیکس عائد کرنے کے فیصلے کو واپس لینے کے حوالے سے۔ اسماعیل کے تبصرے جیو نیوز کے پروگرام “آج شاہ زیب خانزادہ کے ساتھ” میں ایک پیشی کے دوران آئے جہاں انہوں نے ٹیکس وصولی اور معاشی پالیسیوں کی حالت پر مایوسی کا اظہار کیا۔

اسماعیل کے مطابق، مسلم لیگ (ن) کا اندرونی سیاست کی وجہ سے دکانداروں پر ٹیکس واپس لینے کا فیصلہ پارٹی کی حکمرانی کے لیے کمٹمنٹ کی عکاسی کرتا ہے۔ انہوں نے استدلال کیا کہ اگر کچھ افراد کو ٹیکس چوری کے الزام میں جیل بھیجنے کی ضرورت ہے تو انہیں ہونا چاہیے، ٹیکس وصولی کے حوالے سے مضبوط موقف کی ضرورت پر زور دیا۔ اسماعیل نے مشورہ دیا کہ ریاست کو کم از کم روپے ٹیکس لگا کر شروع کرنا چاہیے۔ اپنی اتھارٹی قائم کرنے اور ٹیکس چوری کی حوصلہ شکنی کے لیے فی دکان 4,000۔

انہوں نے پی ایم ایل (ن) کی معاشی پالیسیوں کو سنبھالنے پر مزید تنقید کرتے ہوئے کہا کہ پارٹی کا فیصلہ سازی کا عمل طویل مدتی معاشی استحکام کے بجائے قلیل مدتی سیاسی تحفظات پر مبنی دکھائی دیتا ہے۔ اسماعیل نے اقتصادی منصوبہ بندی میں مستقل مزاجی اور دور اندیشی کی ضرورت کو اجاگر کرتے ہوئے تجویز کیا کہ حکومت کو گردشی قرضوں کو کم کرنے اور پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز (PIA) اور اسٹیل مل جیسے سرکاری اداروں کو ہموار کرنے کو ترجیح دینی چاہیے۔

اسماعیل کے تبصروں میں صنعتی ترقی اور نجکاری کے معاملے پر بھی بات ہوئی۔ انہوں نے دلیل دی کہ حکومت کو پی آئی اے اور اسٹیل مل جیسے سرکاری اداروں کو فروخت کرنے پر غور کرنا چاہیے، جبکہ نگرانی کو یقینی بنانے کے لیے اقلیتی حصص کو برقرار رکھنا چاہیے۔ اسماعیل نے اس تصور سے اختلاف کیا کہ پبلک پرائیویٹ پارٹنرشپ ہمیشہ نجکاری سے برتر ہوتی ہے، یہ تجویز کرتا ہے کہ کچھ معاملات میں صریح نجکاری زیادہ فائدہ مند ہو سکتی ہے۔

اسٹیل مل کے حوالے سے خاص طور پر اسماعیل نے بتایا کہ تنظیم کے پاس 19 ہزار ایکڑ اراضی سمیت اہم اثاثے ہیں جن میں سے دو ہزار ایکڑ پر قبضہ کیا جا چکا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ اسٹیل مل نے اس زمین کا کچھ حصہ اپنے ملازمین کے لیے ہاؤسنگ کالونیاں بنانے کے لیے استعمال کیا ہے۔ اسماعیل نے تجویز پیش کی کہ اسٹیل مل کے اثاثے، خاص طور پر اس کی زمین کو فروخت کرنے سے حکومت کو خاطر خواہ آمدنی ہو سکتی ہے۔

آخر میں، اسماعیل کے تبصروں نے مضبوط اور مستقل اقتصادی پالیسیوں کی ضرورت پر ان کے یقین کو واضح کیا، خاص طور پر ٹیکس وصولی اور سرکاری اداروں کے شعبوں میں۔ انہوں نے حکومت پر زور دیا کہ وہ پاکستان کے معاشی چیلنجوں سے نمٹنے کے لیے فیصلہ کن اقدام پر زور دیتے ہوئے مختصر مدت کے سیاسی تحفظات پر اقتصادی استحکام کو ترجیح دے۔

Live translation

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *