آئی ایم ایف نے پاکستان سے اپنے نئے پروگرام کے لیے اضافی اقدامات کرنے کا مطالبہ

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے پاکستان سے اپنے نئے پروگرام کے لیے اضافی اقدامات کرنے کا مطالبہ کیا ہے، جو آئی ایم ایف مشن اور پاکستان کی اقتصادی ٹیم کے درمیان بات چیت کے آغاز کا اشارہ ہے۔ پہلے دن شروع ہونے والی بات چیت نے مذاکرات کی اندرونی حرکیات پر روشنی ڈالی۔

رپورٹس بتاتی ہیں کہ آئی ایم ایف حکام نے پاکستان کی وزارت خزانہ، وزارت توانائی اور فیڈرل بورڈ آف ریونیو کے نمائندوں کے ساتھ بات چیت کی۔ اجلاس میں وفاقی وزیر توانائی حماد اظہر نے آئی ایم ایف حکام کو بریفنگ دی۔

آئی ایم ایف کی جانب سے مزید کارروائی کا مطالبہ تمام ترجیحی شعبوں کے نفاذ اور اصلاحات کے تسلسل پر اس کے زور کو واضح کرتا ہے۔ اس کے جواب میں حکومت نے آئی ایم ایف کو بجلی اور گیس کی گردش سے متعلق منجمد قرضوں کو برقرار رکھنے کے اپنے عزم کی یقین دہانی کرائی ہے۔

مزید برآں، آئی ایم ایف نے حکومت پر زور دیا ہے کہ وہ بجلی اور گیس کی چوری کو روکنے کے لیے فیصلہ کن اقدامات کرے، اور زیادہ نقصانات والے علاقوں میں بجلی کی تقسیم کار کمپنیوں کے انتظامی کنٹرول کو نجی شعبے کو منتقل کرنے کے لیے ایک واضح ٹائم لائن کی ضرورت پر زور دیا۔ مزید برآں، آئی ایم ایف نے مقامی گیس کی سپلائی پر انحصار کرنے والے کیپٹیو پاور پلانٹس کے آپریشنز بند کرنے کی وکالت کی ہے۔

کارکردگی کو بڑھانے کے لیے، IMF نے پبلک سیکٹر کے چار بڑے پلانٹس کے موثر انتظام کے لیے دباؤ ڈالا ہے۔ آئی ایم ایف نے فیڈرل بورڈ آف ریونیو کے اندر ڈیجیٹلائزیشن کی کوششوں کو تیزی سے مکمل کرنے پر بھی زور دیا ہے۔

فیڈرل بورڈ آف ریونیو کے ذرائع کے مطابق ٹیکس وصولی کو بڑھانے کے لیے افرادی قوت پر ٹیکنالوجی کے استعمال کو بڑھانے پر اتفاق رائے ہے۔ حکومت نے رواں مالی سال کے لیے ٹیکس ہدف کے حصول کے لیے اپنے عزم کا اعادہ کیا ہے۔ زراعت، ریٹیل اور رئیل اسٹیٹ کے شعبوں سے متعلق ٹیکس وصولی کے طریقہ کار پر تفصیلی بریفنگ دی گئی ہے۔

فیڈرل بورڈ آف ریونیو نے آئی ایم ایف کو رواں مالی سال کے ٹیکس ہدف کو پورا کرنے کے لیے رئیل اسٹیٹ اور ریٹیل سیکٹرز سے ٹیکس وصول کرنے کی اپنی کوششوں کی یقین دہانی کرائی ہے۔ یہ پاکستان اور آئی ایم ایف کے درمیان باہمی تعاون پر مبنی نقطہ نظر کی نشاندہی کرتا ہے، جس میں دونوں فریق اہم اقتصادی چیلنجوں سے نمٹنے اور پائیدار ترقی کے لیے اصلاحات کے موثر نفاذ کو یقینی بنانے کے لیے کوشاں ہیں۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *