آئی ایم ایف کا نئی پاکستانی حکومت کے ساتھ تعاون کا اشارہ

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) نے پاکستان کی نو منتخب حکومت کی طرف تعاون کا اشارہ بڑھا دیا ہے۔ جولی کوزیک، IMF کی ڈائریکٹر آف کمیونیکیشن نے پالیسی اقدامات کے ذریعے پاکستان کے مائیکرو اکنامک استحکام کو مستحکم کرنے کے لیے نئی انتظامیہ کے ساتھ تعاون کرنے کے لیے آمادگی ظاہر کی۔

کوزیک کا یہ تبصرہ پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے بانی عمران خان کی جانب سے انتخابی بدانتظامی کے حوالے سے الزامات کے جواب میں آیا ہے۔ انہوں نے ایک بریفنگ کے دوران واضح کیا کہ پاکستان کے ساتھ آئی ایم ایف کی مصروفیات کا انحصار مبینہ انتخابی دھاندلی کی تحقیقات پر نہیں ہے، اس طرح خان کے دعووں کی تردید ہوتی ہے۔

مزید برآں، کوزیک نے IMF کو خان ​​کے حالیہ خط سے خطاب کیا، اس کی وصولی کی تصدیق کی۔ خان نے اڈیالہ جیل سے صحافیوں سے غیر رسمی بات کرتے ہوئے خط لکھنے کا اعتراف کیا، جو بیان کے دن روانہ ہونا تھا۔

اپنی بات چیت میں، خان نے ایسے حالات میں قرضے لینے کے اثرات کے بارے میں تشویش کا اظہار کیا، اور خاطر خواہ سرمایہ کاری کے بغیر قرضوں کی ادائیگی کی فزیبلٹی پر سوال اٹھایا۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ اہم سرمائے کے انجیکشن کے بغیر قرضے صرف ملک میں غربت کی سطح کو بڑھا دیں گے۔

یہ پیش رفت ان رپورٹس کے بعد ہوئی ہے جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ پی ٹی آئی کی قیادت آئی ایم ایف کو ایک خط لکھنے پر غور کر رہی ہے، جس میں ادارے پر زور دیا گیا ہے کہ وہ موجودہ حالات میں پاکستان کو مالی امداد دینے سے باز رہے۔ آئی ایم ایف کا جواب سیاسی اور اقتصادی چیلنجوں کے باوجود عالمی مالیاتی ادارے اور پاکستان کی نئی حکومت کے درمیان تعاون کے لیے ایک ممکنہ راستے کی نشاندہی کرتا ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

مسلم لیگ ن کی سینٹرل ورکنگ کمیٹی کا اجلاس: شہباز شریف قائم مقام پارٹی صدر مقرر

پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کے اندر ایک اہم پیش رفت میں، …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *