پرویز الٰہی کے کیس میں لاہور ہائیکورٹ برہم: کیا آئی جی خود کو عدالت سے بھی طاقتور سمجھتا ہے؟

سابق وزیراعلیٰ پرویز الٰہی سے متعلق کیس میں لاہور ہائی کورٹ کے حالیہ اقدامات نے عدلیہ اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کے درمیان طاقت کے توازن پر سوالات کھڑے کر دیے ہیں۔ اسلام آباد کے انسپکٹر جنرل آف پولیس کو حتمی وارننگ جاری کرنے کا عدالت کا فیصلہ عدالتی احکامات کو برقرار رکھنے کی اہمیت اور ایسا کرنے میں ناکامی کے نتائج کو اجاگر کرتا ہے۔

یہ کیس ایک ایسے واقعے سے پیدا ہوا جہاں لاہور ہائی کورٹ نے پولیس کو پرویز الٰہی کو بحفاظت ان کی رہائش گاہ تک پہنچانے کی ہدایت کی۔ تاہم قیصرہ الٰہی کی جانب سے دائر درخواست کے مطابق پولیس اس ہدایت کو پورا کرنے میں ناکام رہی۔ اس ناکامی کی وجہ سے عدالت نے اسلام آباد کے انسپکٹر جنرل آف پولیس کو وارننگ جاری کی، جس سے یہ ظاہر ہوتا ہے کہ عدالت اپنے احکامات کی توہین کو سنجیدگی سے لیتی ہے۔

جسٹس سلطان تنویر احمد نے کیس کی صدارت کرتے ہوئے عدالت کے موقف پر زور دیا کہ اس کے احکامات پر عمل کیا جانا چاہیے اور ایسا نہ کرنے کا نتیجہ احتساب ہوگا۔ یہ جذبہ قانون کی حکمرانی کے بنیادی اصول کی نشاندہی کرتا ہے، جہاں کوئی بھی شخص چاہے وہ کسی بھی عہدے پر ہو، قانون سے بالاتر نہیں۔ عدالت کے اقدامات ایک یاد دہانی کے طور پر کام کرتے ہیں کہ عدالتی احکامات کی تعمیل ایک منصفانہ اور منصفانہ قانونی نظام کے کام کے لیے ضروری ہے۔

اسلام آباد کے انسپکٹر جنرل کو اس کے سامنے پیش ہونے کی آخری تاریخ دینے کا عدالت کا فیصلہ بھی حکومت کی مختلف شاخوں کے درمیان طاقت کے توازن کے بارے میں وسیع تر سوالات اٹھاتا ہے۔ قانون نافذ کرنے والے اداروں سمیت ایگزیکٹو برانچ کے اقدامات کی نگرانی میں عدلیہ کا کردار جمہوری معاشرے میں چیک اینڈ بیلنس برقرار رکھنے کے لیے اہم ہے۔

مزید برآں، یہ مقدمہ قانون نافذ کرنے والے اداروں کو افراد کے حقوق کا احترام کرتے ہوئے قانون کو برقرار رکھنے کے لیے اپنی ذمہ داریوں میں توازن پیدا کرنے میں درپیش چیلنجوں پر روشنی ڈالتا ہے۔ عدالت کی ہدایت کے مطابق پرویز الٰہی کو بحفاظت منتقل کرنے میں پولیس کی ناکامی، عدالتی احکامات پر موثر عمل درآمد کو یقینی بنانے کے لیے حکومت کی مختلف شاخوں کے درمیان بہتر کوآرڈینیشن اور رابطے کی ضرورت پر زور دیتی ہے۔

آخر میں، لاہور ہائی کورٹ کا پرویز الٰہی کیس میں اسلام آباد کے انسپکٹر جنرل آف پولیس کو حتمی وارننگ جاری کرنے کا فیصلہ عدالتی احکامات کی پاسداری اور سرکاری اہلکاروں کے احتساب کی اہمیت کو واضح کرتا ہے۔ یہ حکومت کی مختلف شاخوں کے درمیان طاقت کے توازن اور قانون نافذ کرنے والے اداروں کو اپنے فرائض کی انجام دہی میں درپیش چیلنجوں کے حوالے سے وسیع تر مسائل کو بھی اجاگر کرتا ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *