بلیٹ پیپرز چوری کے واقعات

متحدہ قومی موومنٹ (ایم کیو ایم) نے کراچی کے حلقہ این اے 235 میں بیلٹ پیپرز کی چوری کے حوالے سے پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) پر الزامات عائد کرتے ہوئے الیکشن کمیشن سے مداخلت کا مطالبہ کیا ہے۔ ایم کیو ایم کے سینیئر ڈپٹی کنوینر مصطفیٰ کمال نے زور دے کر کہا کہ کراچی میں انتخابی عمل کے دوران بیلٹ پیپرز غیر قانونی طور پر لیے گئے، ویڈیو شواہد کے ساتھ ان کے دعووں کی تائید کی۔

کمال نے کراچی پر کنٹرول حاصل کرنے کے لیے پی پی پی کے ارادوں کے بارے میں خدشات کو اجاگر کرتے ہوئے، صورتحال سے نمٹنے کے لیے الیکشن کمیشن کی فوری ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے انتخابی سالمیت کی اہمیت اور ممکنہ تنازعات سے بچانے میں اداروں کے اہم کردار پر زور دیا۔

اس کے ساتھ ہی، ایک الگ واقعے پر ردعمل دیتے ہوئے، کراچی پولیس کے سربراہ خادم حسین رند نے تعینات اہلکاروں کے ساتھ مل کر مختلف پولنگ اسٹیشنوں کا رات کے وقت معائنہ کیا۔ یہ اقدام ایک پرانے واقعے کے بعد کیا گیا جہاں این اے 232 کورنگی میں بیلٹ پیپرز اور بکس چوری ہونے کی اطلاع ملی تھی، جس سے سندھ کے چیف الیکشن کمشنر نے معاملے کی انکوائری شروع کی۔

پریزائیڈنگ آفیسر عبدالواجد قریشی نے انکشاف کیا کہ ملزمان دو قومی اور دو صوبائی اسمبلی کے حلقوں سے ڈبے لوٹ کر فرار ہو گئے۔ قانون نافذ کرنے والے اداروں کی بروقت مداخلت سے چوری شدہ بیلٹ پیپرز کی بازیابی ہوئی، جس سے مزید خلل پڑا۔

بعد ازاں، NA-232 میں بیلٹ پیپر کی چوری کی رپورٹ موصول ہونے پر، سندھ الیکشن کمشنر نے فوری طور پر متعلقہ ریٹرننگ آفیسر اور ڈسٹرکٹ مانیٹرنگ آفیسر سے تفصیلی حسابات طلب کیے، اور واقعے کے اردگرد کے حالات کی جامع بصیرت طلب کی۔

یہ پیش رفت انتخابی عمل، خاص طور پر کراچی میں، جو پاکستان میں ایک اہم سیاسی میدان جنگ ہے، کے ارد گرد بڑھے ہوئے تناؤ اور چیلنجوں کی نشاندہی کرتی ہے۔ انتخابی بدانتظامی اور چوری کے الزامات کے سامنے آنے کے بعد، انتخابی حکام پر یہ ذمہ داری عائد ہوتی ہے کہ وہ انتخابی نظام کی سالمیت اور ساکھ کو برقرار رکھنے کے لیے اس طرح کے خدشات کو تیزی سے چھان بین اور ان کا ازالہ کریں۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

وزیراعلیٰ پنجاب کا فرانزک ٹریننگ لیب کو یونیورسٹیوں کے ساتھ شراکت کرنے کا حکم

صوبے میں فرانزک سائنس کی تعلیم اور صلاحیتوں کو بڑھانے کے لیے ایک اہم اقدام …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *