ایرانی صدر ڈاکٹر ابراہیم رئیسی کا دورہ پاکستان

سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان آل سعود کے حالیہ دورے کے بعد ایرانی صدر ڈاکٹر ابراہیم رئیسی کا دورہ پاکستان پاکستان کے خارجہ تعلقات پر اہم اثرات رکھتا ہے۔ یہ پاکستان کو ایک غیرجانبدار امیج کو برقرار رکھنے کے طور پر پیش کرنے کا موقع فراہم کرتا ہے، ساتھ ہی تنہائی کے خدشات کو دور کرنے اور خارجہ پالیسی کی موثر مصروفیت کو ظاہر کرنے کا موقع فراہم کرتا ہے۔

صدر رئیسی کے 22 سے 24 اپریل تک ہونے والے دورے میں اسلام آباد میں صدر آصف علی زرداری، وزیر اعظم شہباز شریف اور وزیر خارجہ اسحاق ڈار سے ملاقاتیں شامل ہیں۔ اس کے علاوہ وہ لاہور اور کراچی کا دورہ کریں گے جہاں وہ وزیراعلیٰ مریم نواز، سید مراد علی شاہ، گورنر بلیغ الرحمان اور کامران ٹیسوری سے ملاقات کریں گے۔ یہ وسیع سفر نامہ اس بات کو نمایاں کرتا ہے کہ ایران پاکستان کے ساتھ اپنے تعلقات کو اہمیت دیتا ہے۔

یہ دورہ سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان السعود کی قیادت میں ایک اعلیٰ سطحی وفد کی جانب سے کیا گیا ہے، جس نے 15 اور 16 اپریل کو پاکستان کا دورہ کیا تھا۔ وفد نے سعودی پاکستان آزاد تجارتی معاہدے کے تحت مختلف شعبوں میں اہم سرمایہ کاری پر تبادلہ خیال کیا، 2006 سے نافذ العمل ہے۔ جب کہ پاکستان نے 338 اشیاء پر اور ایران نے 309 پر رعایتیں دی ہیں، آزاد تجارتی معاہدے پر ابھی تک مکمل عمل درآمد ہونا باقی ہے، اور صدر رئیسی کے دورے کے دوران اس کو حل کرنے کی کوششیں جاری ہیں۔

چار سال قبل ریمدان گوادر بارڈر کراسنگ کا کھلنا اور اپریل میں ایک اور بارڈر کراسنگ کا آئندہ کھلنا دونوں ممالک کے درمیان تجارت کو آسان بنانے کی کوششوں کی نشاندہی کرتا ہے۔ ایران سے 1000 میگاواٹ بجلی کی فراہمی کے لیے ٹرانسمیشن لائن، جس کا افتتاح صدر رئیسی اور وزیر اعظم شہباز شریف نے گزشتہ سال کیا تھا، دو طرفہ تعاون کو بڑھانے کے عزم کو مزید اجاگر کرتا ہے۔

دو طرفہ تجارت کے لیے ایک بڑا چیلنج بینکنگ چینلز کی کمی ہے، جو فی الحال تجارت کو بارٹر یا دیگر کرنسیوں کے ذریعے کرنے پر مجبور کرتا ہے۔ بینکنگ چینلز قائم کرنے سے غیر قانونی تجارت کو روکنے میں بھی مدد مل سکتی ہے، جس سے چند افراد کو فائدہ ہو گا لیکن حکومتوں کو نہیں۔ دونوں ممالک کے درمیان پروازوں کی تعداد میں اضافہ اور نئی ایئرلائنز کو آپریشنل پرمٹ دینا بھی زیر غور ہیں۔

اس دورے میں ایران پاکستان گیس پائپ لائن منصوبے کی تکمیل پر بھی بات چیت متوقع ہے جو کہ توانائی کا ایک اہم اقدام ہے۔ تاہم، 270 کلومیٹر طویل پائپ لائن کی حفاظت ایک تشویش کا باعث بنی ہوئی ہے، خاص طور پر اسی طرح کے بنیادی ڈھانچے پر حالیہ حملوں کی روشنی میں۔ امید ہے کہ اس دورے کے دوران ہونے والی بات چیت سے ان چیلنجوں سے نمٹا جائے گا اور دوطرفہ تعلقات مزید مضبوط ہوں گے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *