کیا بلاول بھٹو انتقامی سیاست کے جال میں الجھے ہیں

ابھرتے ہوئے سیاسی بیانیے میں ایک اہم سوال سامنے آیا ہے: کیا بلاول بھٹو زرداری نواز شریف کے انتقامی سیاست کے جال میں الجھے ہوئے ہیں؟
بلاول سے پوچھنا چاہتا ہوں کہ آج آپ کو نواز شریف کی انتقامی سیاست اب نظر آرہی ہے تب کیوں نہیں نظر آئی جب آپ نے شہباز شریف کی حکومت کے اندر وزیر خارجہ کا حلف اٹھایا؟ بلاول کہتا ہے کہ ہم بھٹو کے وارث ہیں تو انہوں نے پی ڈی ایم بنا کر ضیاالحق کے وارثوں کیساتھ الحاق کیوں کیا؟
اس پیچیدہ معمے میں ایک اور پرت کا اضافہ جاوید ہاشمی کا مسلم لیگ کے پلیٹ فارم پر پی ٹی آئی کی حمایت کا اعلان ہے۔ شاہ محمود قریشی نے ہاشمی کے اہم بیان کو تسلیم کرتے ہوئے پاکستانی سیاست کے ابھرتے ہوئے منظر نامے میں پیچیدہ اتحادوں اور وفاداریوں پر روشنی ڈالی۔

اس پس منظر میں تحریک انصاف کے رہنما شاہ محمود قریشی، جو اس وقت اڈیالہ جیل میں نظر بند ہیں، بلاول بھٹو زرداری سے متعلقہ سوالات کر رہے ہیں۔ صحافیوں کے ساتھ بات چیت میں، قریشی انتقامی سیاست کی طرف واضح تبدیلی کو سمجھنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ وہ سوال کرتے ہیں کہ بلاول نے اپنے موقف کے باوجود شہباز شریف کی حکومت میں وزیر خارجہ کا حلف کیوں اٹھایا؟ بلاول کا بھٹو کا وارث ہونے کا دعویٰ قریشی کو پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (PDM) کی تشکیل کے ذریعے ضیاء الحق کے وارثوں کے ساتھ بنائے گئے اتحاد کی چھان بین کرنے پر اکساتا ہے۔

شاہ محمود قریشی نے چند نشستوں کے لیے دی گئی قربانیوں کا حوالہ دیتے ہوئے پی پی پی کی حکمت عملی پر روشنی ڈالی۔ انہوں نے ملتان میں مسلم لیگ ن سے حمایت اور لودھراں میں ن لیگ کے خلاف سرگرم اپوزیشن کی نشاندہی کی۔ یہ تدبیریں پردے کے پیچھے ہونے والی سیاسی چالبازیوں کے پیچیدہ رقص کو واضح کرتی ہیں۔

بیانیہ ایک دلچسپ موڑ لیتا ہے جب قریشی نے پی پی پی کی جانب سے 51 نشستوں کے لیے کاغذات نامزدگی جمع کرانے کا ذکر کیا، 7 پر مقابلہ۔ وہ قیاس کرتے ہیں کہ اگر نواز شریف چوتھی بار وزیر اعظم بنتے ہیں تو بلاول کے نقطہ نظر کے مطابق انتقام کا امکان ایجنڈے میں ہوگا۔

مخصوص دورے سے متعلق سوالات کے جواب میں شاہ محمود قریشی نے واضح کیا کہ یہ صرف سیکرٹری خارجہ کو مشاہدہ کرنا تھا۔ تاہم، دورے کے بعد قومی سلامتی کمیٹی سیاسی مداخلت کا اعتراف کرتی نظر آتی ہے۔ پی ٹی آئی کے بانی شفافیت کے حامی ہیں، تجویز دیتے ہیں کہ تمام پارلیمانی رہنماؤں کو بریفنگ دی جائے۔ بعد ازاں سیکرٹری خارجہ نے تمام پارلیمانی لیڈروں کو دورے کے بارے میں بریفنگ دیتے ہوئے کھلے رابطے کی ضرورت پر زور دیا۔

آخری موڑ میں، قریشی نے جاوید ہاشمی کا شکریہ ادا کیا، جنہوں نے پی ٹی آئی کے بانی کی رہائی کے لیے مسلم لیگ ن کے پلیٹ فارم سے مہم کی قیادت کرنے کا اعلان کیا۔ ہاشمی کے عزم کو پاکستانی سیاست کے پیچیدہ جال میں حق و انصاف کا پرچم بلند کرنے کے طور پر تسلیم کیا جاتا ہے۔ سیاسی پیش رفت کی یہ پیچیدہ ٹیپسٹری پاکستانی سیاسی میدان میں اتحادوں، رقابتوں، اور اسٹریٹجک چالوں کی مسلسل ابھرتی ہوئی نوعیت کو واضح کرتی ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

طلال چوہدری کی مخصوص نشستوں کے فیصلے پر تنقید، دعویٰ یہ سیاسی استحکام کو نقصان پہنچاتا ہے

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنما طلال چوہدری نے مخصوص نشستوں کے حوالے سے حالیہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *