بینک فراڈ سے متاثرہ 2 صارفین کو پیسے ادا کیے جائیںگے:صدر نے بینکوں کی اپیلیں مسترد کردیں

بینک فراڈ سے متاثر ہونے والے دو افراد معاوضہ وصول کرنے کے لیے تیار ہیں، کیونکہ صدر ڈاکٹر عارف علوی نے ملوث بینکوں کی اپیلوں کو مسترد کرتے ہوئے فیصلہ کن مؤقف اپنایا ہے۔ صدر کی طرف سے ہدایت کا حکم ہے کہ ان دو صارفین کو معاوضہ دیا جائے، ایک کو 1.9 ملین روپے اور دوسرے کو 744,000 روپے ملیں گے۔

صدر علوی نے بینکنگ فراڈ میں ملوث افراد کے خلاف سخت کارروائی کرنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے صورتحال کی سنگینی کو اجاگر کیا۔ وہ اسٹیٹ بینک سے مطالبہ کرتا ہے کہ وہ دھوکہ دہی کی سرگرمیوں سے منسلک افراد کو بلیک لسٹ کرنے کا عمل شروع کرے اور خاص طور پر بینکنگ فراڈ سے متعلق مسائل کو حل کرنے کے لیے ضروری معیاری آپریٹنگ پروسیجرز (SOPs) کے اجراء پر زور دیتا ہے۔

صدر علوی نے اپنی تشویش کا اظہار کرتے ہوئے اس بات پر زور دیا کہ جعلسازوں کو کسی قسم کی بینکنگ یا مالی سہولتیں نہیں دی جانی چاہئیں۔ اس مقصد کے لیے، وہ دھوکہ دہی کی سرگرمیوں کو روکنے اور معصوم صارفین کی حفاظت کے لیے مضبوط اقدامات پر زور دیتا ہے۔

صدر نے ایک متعلقہ واقعہ پر روشنی ڈالی جہاں ایک بینک صارف کو بینک کی ہیلپ لائن سے مشابہہ کال موصول ہوئی۔ کال کرنے والے نے صارف کو ہدایت کی کہ وہ اپنی عارضی طور پر غیر فعال ڈیجیٹل بینکنگ ایپ کو چالو کریں۔ ان ہدایات پر عمل کرتے ہوئے، غیر مشتبہ صارف کے اکاؤنٹ سے 200,000 روپے کی رقم خفیہ طور پر منتقل کر دی گئی۔ یہ واقعہ ایسے ہیرا پھیری کے ہتھکنڈوں کو روکنے کے لیے حفاظتی اقدامات اور چوکسی بڑھانے کی ضرورت پر زور دیتا ہے۔

ایک الگ کیس میں ایک اور بینک صارف کے اکاؤنٹ میں تکنیکی خامیاں تفصیلی معلومات کے حصول کا بہانہ بن گئیں۔ ان سمجھی جانے والی خامیوں کو دور کرنے کی آڑ میں، دھوکہ باز صارف کے اکاؤنٹ سے 19 ٹرانزیکشنز کے ذریعے 9,94,000 روپے نکالنے میں کامیاب ہو گئے۔ صدر علوی نے اس طرح کے گمراہ کن طریقوں سے صارفین کے خطرے کی نشاندہی کی اور جامع حفاظتی اقدامات کی ضرورت پر زور دیا۔

صدر کا مضبوط موقف بینکاری نظام کی سلامتی اور سالمیت کو یقینی بنانے کے عزم کی عکاسی کرتا ہے۔ وہ ایک فعال نقطہ نظر کا مطالبہ کرتا ہے، مالیاتی اداروں پر زور دیتا ہے کہ وہ صارفین کو دھوکہ دہی کا شکار ہونے سے بچانے کے لیے سخت اقدامات اور پروٹوکول پر عمل درآمد کریں۔

آخر میں، بینک فراڈ کے واقعات پر صدر عارف علوی کا غیر متزلزل ردعمل ایک مضبوط اور چوکس مالیاتی ماحولیاتی نظام کی ضرورت کو اجاگر کرتا ہے۔ چونکہ متاثرہ افراد اپنے معاوضے کے منتظر ہیں، وسیع تر مطالبہ مالیاتی شعبے سے ہے کہ وہ دھوکہ دہی کی سرگرمیوں کے خلاف اپنے دفاع کو مضبوط بنائے اور اپنے صارفین کے تحفظ اور اعتماد کو یقینی بنائے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

وزیراعلیٰ پنجاب کا فرانزک ٹریننگ لیب کو یونیورسٹیوں کے ساتھ شراکت کرنے کا حکم

صوبے میں فرانزک سائنس کی تعلیم اور صلاحیتوں کو بڑھانے کے لیے ایک اہم اقدام …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *