ماسکو: کرک سٹی ہال پر دہشت گردوں کے حملے میں 60 افراد ہلاک اور 115 سے زائد زخمی

ایک خوفناک دہشت گردانہ حملہ ماسکو کے مضافات میں واقع مقام کرک سٹی ہال پر ہوا، جو پیرس کے بٹاکلان تھیٹر کے المناک واقعات سے مشابہت رکھتا ہے۔ روسی ذرائع ابلاغ کے مطابق اس حملے کے نتیجے میں کم از کم 60 افراد ہلاک، 115 سے زائد زخمی ہوئے۔
حملہ رات 8 بجے کے قریب ہوا۔ مقامی وقت کے مطابق، جب تین حملہ آوروں نے پرہجوم کراک سٹی ہال پر پرتشدد محاصرہ شروع کیا۔ دہشت گرد بڑی ڈھٹائی کے ساتھ ہال میں داخل ہوئے اور اندھا دھند فائرنگ شروع کر دی، جس کی تکمیل دستی بموں سے ہوئی۔ افراتفری ایک زور دار دھماکے سے مزید بڑھ گئی جس کی وجہ سے کنسرٹ ہال کی چھت کا ایک حصہ گر گیا۔ افسوسناک طور پر، متعدد حاضرین ملبے کے نیچے پھنس گئے، جب کہ اس کے بعد لگنے والی آگ نے عمارت کو اپنی لپیٹ میں لے لیا، جس سے پہلے سے سنگین صورتحال میں اضافہ ہوا۔
ریسکیو کی کوششیں فوری طور پر شروع کر دی گئیں، بہادر ریسکیو اہلکاروں نے 100 سے زائد افراد کو کامیابی کے ساتھ دبے ہوئے ڈھانچے سے نکال لیا۔ ان کوششوں کے باوجود، ہلاکتوں کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہوتا رہا، زخمیوں میں سے کئی کی حالت نازک ہے۔ حملہ آور افراتفری کا فائدہ اٹھاتے ہوئے موقع سے فرار ہونے میں کامیاب ہو گئے۔
حملے کا وقت، کنسرٹ کے آغاز سے عین قبل جب ہال پوری صلاحیت پر تھا، نے مجرموں کی بے رحمی کو واضح کیا۔ مسلح سیکورٹی اہلکاروں کی کمی نے اس سانحے کو مزید گھمبیر بنا دیا، کیونکہ وہ دہشت گردوں کا مؤثر طریقے سے مقابلہ کرنے میں ناکام رہے۔
حملے کے بعد، حکام نے حفاظتی اقدامات پر تیزی سے عمل درآمد کیا، جس میں ماسکو سمیت مختلف مقامات پر عوامی اجتماعات کی منسوخی بھی شامل ہے، تاکہ عوام کی حفاظت کو یقینی بنایا جا سکے اور مزید واقعات کو روکا جا سکے۔
اس گھناؤنے فعل کے جواب میں روسی سلامتی کونسل کے ڈپٹی چیئرمین دمتری میدویدیف نے سخت ردعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ایسے مظالم کے ذمہ داروں کو انصاف کے کٹہرے میں لایا جانا چاہیے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ دہشت گردی کی اس طرح کی کارروائیوں کا ناقابل برداشت جواب دیا جائے گا۔
روسی وزارت خارجہ کی ترجمان ماریا زاخارووا نے اس حملے کی بین الاقوامی مذمت کا مطالبہ کرتے ہوئے اقوام متحدہ، اس کے سیکرٹری جنرل اور تمام رکن ممالک پر زور دیا کہ وہ اس دہشت گردی کی کارروائی کی مذمت کریں۔ اس نے امریکی ردعمل پر بھی تشویش کا اظہار کیا، جس نے بظاہر اس حملے میں یوکرین کے ملوث ہونے پر شک ظاہر کیا، اس واقعے کی مکمل اور غیر جانبدارانہ تحقیقات کی ضرورت کو اجاگر کیا۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *