ایم کیو ایم کا صدارتی انتخابات میں ووٹ آصف زرداری کو دینےکا اعلان

متحدہ قومی موومنٹ (MQM) پاکستان نے آئندہ صدارتی انتخابات کے لیے اپنا وزن آصف زرداری پر ڈال دیا ہے، جو پاکستان کے سیاسی منظر نامے میں ایک اہم پیش رفت ہے۔ یہ اعلان ایم کیو ایم کے رہنماؤں کے وفد کی اسلام آباد میں وزیر اعظم شہباز شریف سے ملاقات کے بعد سامنے آیا ہے، جہاں انہوں نے زرداری کی امیدواری کی غیر متزلزل حمایت کا اظہار کیا ہے۔

زرداری کی حمایت کا فیصلہ ایم کیو ایم کے سیاسی اتحادوں میں تزویراتی تبدیلی کی عکاسی کرتا ہے۔ تاریخی طور پر، ایم کیو ایم شہری سندھ، خاص طور پر کراچی میں اپنی مضبوط موجودگی کے لیے جانا جاتا ہے، اور اکثر خود کو زرداری کی قیادت میں پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) سے متصادم پایا جاتا ہے۔ تاہم، یہ اقدام ایم کیو ایم کی جانب سے وسیع تر سیاسی مقاصد کے مفاد میں اپنی سیاسی ترجیحات کو دوبارہ ترتیب دینے پر آمادگی ظاہر کرتا ہے۔

وزیر اعظم شہباز شریف سے ملاقات کے بعد پیپلز پارٹی کے ایک وفد نے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری کی قیادت میں ایم کیو ایم رہنماؤں کی حمایت حاصل کرنے کے لیے ان سے ملاقات کی۔ ان ملاقاتوں میں دونوں جماعتوں کے سینئر رہنماؤں کی موجودگی اس پیشرفت کی اہمیت اور آئندہ انتخابات پر اس کے ممکنہ اثرات کو واضح کرتی ہے۔

ملاقات کے بعد ایک بیان میں ایم کیو ایم کے رہنما خالد مقبول صدیقی نے پارٹی کی جانب سے آصف زرداری کی امیدواری کی حمایت کا اعلان کیا۔ صدیقی نے جمہوریت میں تسلسل کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان نے 22 سال کی بلا تعطل جمہوری حکمرانی دیکھی ہے۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ جمہوریت کے ثمرات عوام تک پہنچنے چاہئیں اور زرداری کی حمایت اس سمت میں ایک قدم ہے۔

صدیقی نے اختلافات کے باوجود جمہوری قوتوں کے درمیان بات چیت کی اہمیت پر بھی زور دیا۔ یہ جذبہ پاکستان میں جمہوری اصولوں اور اداروں کو مضبوط کرنے کے لیے سیاسی جماعتوں کے درمیان اتحاد اور اشتراک کو فروغ دینے کے وسیع بیانیے سے ہم آہنگ ہے۔

بلاول بھٹو زرداری نے اپنے ریمارکس میں، وفاقی، صوبائی اور بلدیاتی سطح پر شہر کی اہمیت کو اجاگر کرتے ہوئے، مستقبل کی حکومت کی کراچی کی طرف توجہ مرکوز کی۔ یہ کراچی کی ترقی اور حکمرانی کے حوالے سے پی پی پی اور ایم کیو ایم کے درمیان مشترکہ وژن کی نشاندہی کرتا ہے، یہ شہر جو اکثر پاکستان میں سیاسی بحثوں اور تنازعات کا مرکز رہا ہے۔

مجموعی طور پر، ایم کیو ایم کا صدارتی انتخابات میں آصف زرداری کی حمایت کا فیصلہ پاکستان کے سیاسی منظر نامے میں ایک تزویراتی تبدیلی کی عکاسی کرتا ہے۔ یہ سیاسی جماعتوں کے درمیان مشترکہ سیاسی مقاصد کے حصول کے لیے ماضی کے اختلافات کو ایک طرف رکھنے کے لیے آمادگی کا اشارہ دیتا ہے، جس سے ملک میں سیاسی اتحاد کی ابھرتی ہوئی نوعیت کو اجاگر کیا جاتا ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

پاکستان اسٹاک ایکسچینج: 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی کمی

پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) میں آج نمایاں مندی رہی، 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *