پاکستان کو اگلے پانچ سالوں میں 120 بلین ڈالر کے بیرونی قرضوں کی ضرورت متوقع

پاکستان کو اگلے پانچ سالوں میں 120 بلین ڈالر کے بیرونی قرضوں کی ضرورت متوقع ہے۔ ملک کے زرمبادلہ کے ذخائر کو ناکافی سمجھا جاتا ہے، اور اسے افراط زر کے بڑھتے ہوئے چیلنجوں کا سامنا ہے، اس کے ساتھ ساتھ اس کے جی ڈی پی کے مقابلے میں سرمایہ کاری کی شرح خاصی کم ہے۔ پاکستان انسٹی ٹیوٹ آف ڈویلپمنٹ اکنامکس کی جانب سے جاری کردہ رپورٹ میں پاکستان کی معاشی بہبود اور ترقی کو یقینی بنانے کے لیے نظامی اصلاحات کی فوری ضرورت پر زور دیا گیا ہے۔

رپورٹ میں مالیاتی رفتار سے متعلق ایک خاکہ پیش کیا گیا ہے، جس سے ظاہر ہوتا ہے کہ پاکستان کو اگلے پانچ سالوں میں مجموعی طور پر 120 بلین ڈالر کے بیرونی قرضوں کی ضرورت ہوگی۔ یہ رقم ملک کے موجودہ زرمبادلہ کے ذخائر کے مقابلے میں 126% سے لے کر 274% تک کے کافی اضافے کی نمائندگی کرتی ہے۔ اس طرح کی مالیاتی کمی اگر مؤثر طریقے سے انتظام نہ کی جائے تو ڈیفالٹ کے مترادف بحران کا خدشہ پیدا کرتا ہے۔

متوقع قرض کی ضروریات کو توڑنے کے لیے، رپورٹ ہر مالی سال کے لیے متوقع بیرونی قرضے کی ضروریات کو بیان کرتی ہے۔ رواں مالی سال کے لیے پاکستان کو 22.80 بلین ڈالر کی ضرورت کا تخمینہ لگایا گیا ہے، جس کے بعد آنے والے مالی سال میں یہ تعداد بڑھ کر 24.90 بلین ڈالر تک پہنچ جائے گی۔ قرض لینے کی ضروریات مالی سال 2025-26 میں 22.20 بلین ڈالر، مالی سال 2026-27 میں 24.60 بلین ڈالر اور مالی سال 2027-28 میں 24.90 بلین ڈالر ہونے کی توقع ہے۔ یہ تخمینے بیرونی فنانسنگ کی ایک اہم اور پائیدار ضرورت کی نشاندہی کرتے ہیں، جو کہ آنے والے مالیاتی چیلنجوں کی کشش ثقل کو واضح کرتے ہیں۔

رپورٹ میں پاکستان کو ممکنہ مالیاتی بحران سے نکالنے کے لیے جامع اصلاحات کے نفاذ کی فوری ضرورت پر روشنی ڈالی گئی ہے۔ یہ اقتصادی ترقی کو تیز کرنے کے لیے ریگولیٹری جدید کاری، ٹیکس اصلاحات، اور مارکیٹ کو لبرلائز کرنے کی ضرورت پر زور دیتا ہے۔ مزید برآں، رپورٹ میں توانائی کے شعبے کو زندہ کرنے، زرعی طریقوں کو بہتر بنانے اور بینکنگ سیکٹر کی کارکردگی کو بڑھانے کے لیے موثر اقدامات پر زور دیا گیا ہے۔

پاکستان کے معاشی چیلنجز کثیر جہتی ہیں، ان سے مؤثر طریقے سے نمٹنے کے لیے ایک جامع نقطہ نظر کی ضرورت ہے۔ وائس چانسلر ڈاکٹر ندیم الحق نے ان چیلنجز سے نمٹنے کے لیے ایک جامع حکمت عملی اپنانے کی اہمیت پر زور دیا ہے۔ اس طرح کی حکمت عملی میں توانائی، زراعت اور بینکنگ جیسے اہم شعبوں میں ہدفی مداخلتوں کے ساتھ ساتھ ریگولیٹری جدید کاری، ٹیکس اصلاحات، اور مارکیٹ لبرلائزیشن کو شامل کرنا چاہیے۔

آخر میں، رپورٹ کے نتائج پاکستان کے لیے اپنے اقتصادی چیلنجوں سے فوری طور پر نمٹنے کی اہم ضرورت پر زور دیتے ہیں۔ ایسا کرنے میں ناکامی ملک کی معیشت اور اس کے عوام کے لیے دور رس نتائج کے ساتھ گہرے مالیاتی بحران کا باعث بن سکتی ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *