آئی ایم ایف کے قرض کے مذاکرات سے پہلے قرض کے اہداف کی پارلیمنٹ کی منظوری

بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) ملک کی پارلیمنٹ سے قرضوں کے اہداف کی منظوری کے بعد پاکستان کے ساتھ قرض کے نئے پروگرام کے لیے بات چیت شروع کرے گا۔ ذرائع کے مطابق آج پاکستانی حکام اور آئی ایم ایف کے وفد کے درمیان بات چیت کا آخری دن ہے۔ توقع ہے کہ آئی ایم ایف کی ٹیم آج اور کل کسی رسمی اعلان کے بغیر روانہ ہوجائے گی، کیونکہ موجودہ مذاکرات کا براہ راست نئے قرض پروگرام سے کوئی تعلق نہیں تھا۔

ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ آئی ایم ایف نے پاکستان سے وسیع معاشی ڈیٹا اکٹھا کیا ہے اور مکمل جائزہ لینے کے بعد پاکستانی حکام کو بجٹ فریم ورک سے آگاہ کر دیا ہے۔ اس فریم ورک میں نجکاری اور توانائی کے شعبے میں اصلاحات کے اہداف شامل ہیں، ایسے ضروری شعبے جہاں آئی ایم ایف پاکستان سے اہم تبدیلیوں کے نفاذ کی توقع رکھتا ہے۔ مزید برآں، آئی ایم ایف نے ٹیکس وصولی اور آئندہ مالی سال کے لیے فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کے اندر درکار اصلاحات کے لیے اپنی توقعات کا خاکہ پیش کیا ہے۔
آئی ایم ایف کی شمولیت پاکستان کے لیے اپنی معاشی پالیسیوں کو بین الاقوامی توقعات کے ساتھ ہم آہنگ کرنے کی اہم ضرورت کو واضح کرتی ہے تاکہ مالی مدد حاصل کی جا سکے۔ تفصیلی رہنما خطوط فراہم کرکے، آئی ایم ایف کا مقصد اس بات کو یقینی بنانا ہے کہ پاکستان کی معاشی حکمت عملی مضبوط اور ملک کو درپیش مالی چیلنجوں سے نمٹنے کی اہلیت رکھتی ہے۔
پاکستانی پارلیمنٹ کی جانب سے بجٹ کے مخصوص اہداف اور اقتصادی خاکہ کی منظوری کے بعد ہی نئے قرضہ پروگرام کے لیے بات چیت شروع ہوگی۔ یہ نقطہ نظر میں ایک قابل ذکر تبدیلی کی نمائندگی کرتا ہے، کیونکہ یہ پہلا موقع ہوگا جب پاکستان رسمی مذاکرات سے قبل آئی ایم ایف کے مطالبات پر عمل درآمد شروع کرے گا۔ متبادل طور پر، حکومت ان اہداف کے لیے عمل درآمد کی تاریخیں طے کرے گی اور منظوری کے بعد خاکہ تیار کرے گی۔ اس فعال اقدام کا مقصد آئی ایم ایف کے ساتھ اعتماد پیدا کرنا اور طے شدہ اقتصادی اصلاحات کو پورا کرنے کے لیے پاکستان کے عزم کو ظاہر کرنا ہے۔
ذرائع کا کہنا ہے کہ نئے قرضہ پروگرام کے مذاکرات جون کے آخر میں شروع ہونے کی امید ہے۔ آئی ایم ایف اور پاکستانی حکام دونوں یکم جولائی سے پہلے ایک معاہدے تک پہنچنے کے لیے کام کر رہے ہیں۔ یہ عجلت پاکستان کی معیشت کو مستحکم کرنے اور اس کے مالی معاملات اور وعدوں میں تسلسل کو یقینی بنانے کی ضرورت سے پیدا ہوئی ہے۔

یہ خبر پاکستانی حکومت کے دیگر اہم معاشی فیصلوں کے بعد سامنے آئی ہے، جیسے کہ FBR کی ہدایت کے مطابق نان فائلرز کے 9,000 سے زیادہ سم کارڈز کی بندش، اور آئندہ بجٹ میں سخت معاشی پالیسیاں برقرار رکھنے کا فیصلہ۔ یہ اقدامات ملک کے اندر معاشی نظم و ضبط اور تعمیل کو بڑھانے کی وسیع تر کوششوں کا حصہ ہیں۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *