مسلم لیگ ن کی سینٹرل ورکنگ کمیٹی کا اجلاس: شہباز شریف قائم مقام پارٹی صدر مقرر

پاکستان مسلم لیگ نواز (پی ایم ایل این) کے اندر ایک اہم پیش رفت میں، پارٹی کی سینٹرل ورکنگ کمیٹی (سی ڈبلیو سی) کا لاہور میں اجلاس ہوا اور شہباز شریف کو پارٹی کا قائم مقام صدر مقرر کر دیا۔ اس اہم اجلاس میں نواز شریف، مریم نواز، اسحاق ڈار، رانا ثناء اللہ اور کئی دیگر سینئر اراکین سمیت پارٹی کے اعلیٰ سطحی رہنماؤں نے شرکت کی۔

اجلاس کے دوران، پارٹی کے سینئر اراکین نے قائم مقام پارٹی صدر کے لیے شہباز شریف کا نام تجویز کیا، یہ نامزدگی کمیٹی کی جانب سے بڑے پیمانے پر منظوری کے ساتھ حاصل کی گئی۔ یہ فیصلہ پارٹی کی اسٹریٹجک صف بندی کو واضح کرتا ہے کیونکہ یہ مستقبل کے سیاسی چیلنجوں کے لیے تیار ہے۔ مسلم لیگ (ن) کی اہم شخصیت سیف الملوک کھوکھر نے تصدیق کی کہ شہباز شریف کی تقرری عارضی ہے، اس میں صرف 28 مئی تک توسیع کی گئی ہے۔ اس دن نواز شریف کو باضابطہ طور پر مستقل پارٹی منتخب کرنے کے لیے جنرل کونسل کا اجلاس ہوگا۔ صدر.

اجلاس میں دیگر اہم تقرریوں پر بھی بات ہوئی۔ CWC نے رانا ثناء اللہ خان کو چیف الیکشن کمشنر نامزد کیا، جنہیں مستقل صدر کے انتخابی عمل کی نگرانی کا کام سونپا گیا۔ پارٹی کی قیادت میں شفاف اور منظم تبدیلی کو یقینی بنانے میں یہ کردار اہم ہے۔ ایک منظم اور جمہوری انتخابی عمل کے لیے پارٹی کے عزم کو مزید مستحکم کرتے ہوئے الیکشن کمیشن کے ارکان جلد ہی نامزد کیے جائیں گے۔

اجلاس کے دوران کیے گئے فیصلوں کی پہلے سینٹرل ایگزیکٹو کمیٹی (CEC) سے توثیق کی جائے گی اور جنرل کونسل کے اجلاس میں حتمی منظوری دی جائے گی۔ یہ طریقہ کار پارٹی کے داخلی گورننس پروٹوکول کی پابندی کو نمایاں کرتا ہے، اس بات کو یقینی بناتا ہے کہ تمام اقدامات پارٹی کے ضوابط اور جمہوری اصولوں کے مطابق ہوں۔

یہ قیادت میں ردوبدل شہباز شریف کے پارٹی صدارت سے حالیہ استعفیٰ کے بعد کیا گیا ہے۔ استعفیٰ مسلم لیگ (ن) کے اندر خود شناسی اور تنظیم نو کے دور کے درمیان آیا، جس کا مقصد پارٹی کے ڈھانچے اور حکمت عملی کو بحال کرنا تھا۔ حالیہ ہفتوں میں، مسلم لیگ ن پنجاب چیپٹر نے سفارش کی تھی کہ نواز شریف پارٹی کا اعلیٰ عہدہ دوبارہ سنبھالیں، جو ان کی قیادت کے لیے پارٹی اراکین میں شدید خواہش کی عکاسی کرتا ہے۔

نواز شریف کی پارٹی کی قیادت میں متوقع واپسی کو مسلم لیگ ن کی سیاسی حیثیت کو مضبوط کرنے اور پاکستان کے پیچیدہ سیاسی منظر نامے سے گزرتے ہوئے تجربہ کار قیادت فراہم کرنے کے اقدام کے طور پر دیکھا جا رہا ہے۔ توقع ہے کہ نواز شریف کی واپسی سے مسلم لیگ (ن) کو ایک نئی قوت اور سٹریٹجک سمت ملے گی، ان کے وسیع سیاسی تجربے اور قائدانہ صلاحیتوں سے فائدہ اٹھایا جائے گا۔
Feedback

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

پاکستان اسٹاک ایکسچینج: 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی کمی

پاکستان اسٹاک ایکسچینج (PSX) میں آج نمایاں مندی رہی، 100 انڈیکس میں 578 پوائنٹس کی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *