لطیف کھوسہ کا چیف جسٹس سے مکالمہ
لطیف کھوسہ کا چیف جسٹس سے مکالمہ

پی ٹی آئی نے سپریم کورٹ سے لیول پلیئنگ فلیڈ کی درخوست واپس لے لی.

پی ٹی آئی نے سپریم کورٹ سے لیول پلیئنگ فیلڈ کی درخواست واپس لے لی۔ عدالت میں پی ٹی آئی کی درخواست پر سماعت کے دوران چیف جسٹس فائز عیسیٰ نے استفسار کیا کہ کیا وہ آگے بڑھنا چاہتے ہیں؟ جواب میں، لطیف کھوسہ نے بتایا کہ انہوں نے درخواست واپس لے لی کیونکہ انہوں نے ابتدائی طور پر ایک برابری کی جگہ مانگی تھی لیکن 13 جنوری کی رات کے فیصلے نے کورس کو نمایاں طور پر تبدیل کر دیا۔ اس فیصلے نے پی ٹی آئی کو پارلیمانی سیاست سے پیچھے ہٹنے پر اکسایا۔ چیف جسٹس لطیف کھوسہ سے مکالمے کے باعث سپریم کورٹ نے پی ٹی آئی کی درخواست واپس لے لی۔ میڈیا سے بات چیت میں، پی ٹی آئی کے قانونی نمائندے، لطیف کھوسہ نے روشنی ڈالی کہ ان کا اصل مقصد یکساں میدان اور شفاف انتخابات کی وکالت کرنا ہے۔ تاہم 13 جنوری کو کیے گئے فیصلے کے نتیجے میں 230 نشستوں کا نقصان ہوا اور چیف جسٹس کی ساکھ پر سوالیہ نشان لگ گیا۔ لطیف کھوسہ نے اس بات پر زور دیا کہ پی ٹی آئی اب عوام کی عدالت میں انصاف مانگے گی، انہوں نے چیف جسٹس کی ساکھ پر عدم اطمینان کا اظہار کیا۔ گزشتہ سماعت میں، الیکشن کمیشن آف پاکستان نے پی ٹی آئی کے لیول پلیئنگ فیلڈ نہ ملنے کے دعووں کی تردید کی اور پی ٹی آئی کے خلاف توہین عدالت کی درخواست شروع کی، جس کے نتیجے میں اسے کیس سے نکال دیا گیا۔ الیکشن کمیشن کا جواب سپریم کورٹ میں جمع کرایا گیا، جہاں اس نے پی ٹی آئی کے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے توہین عدالت کے الزامات کے ساتھ تحریک انصاف کی درخواست خارج کرنے کی استدعا کی۔ الیکشن کمیشن نے زور دے کر کہا کہ اس نے سپریم کورٹ کے احکامات پر عمل کیا، پی ٹی آئی کے رہنماؤں سے ملاقات کی تاکہ غیرجانبدارانہ طور پر برابری کے میدان کی فراہمی کو یقینی بنایا جا سکے۔ چاروں صوبوں کے انسپکٹر جنرلز کو ہدایات جاری کر دی گئیں۔ 26 دسمبر تک، پی ٹی آئی نے ملک بھر میں 33 شکایات درج کرائیں، اور عدالت کو کارروائیوں اور ہدایات کی تفصیلات فراہم کی گئیں۔ پی ٹی آئی کی شکایات پر انسپکٹر جنرلز، چیف سیکرٹریز اور ریٹرننگ افسران نے رپورٹس مرتب کیں۔ پی ٹی آئی کے قومی اسمبلی کے کاغذات نامزدگی کے حوالے سے 843 میں سے 598 کاغذات منظور کیے گئے جب کہ 245 امیدواروں کے کاغذات مسترد ہوئے۔ صوبائی اسمبلیوں کے لیے، پی ٹی آئی کے 1,777 کاغذات میں سے، 1,398 قبول کیے گئے، اور 379 مسترد کیے گئے، جو پی ٹی آئی کے امیدواروں کے کاغذات کی قبولیت کی شرح 76.18 فیصد کو ظاہر کرتا ہے۔ الیکشن کمیشن نے اے آر وائی نیوز کی رپورٹ اور پی ٹی آئی کے کاغذات نامزدگی کی منظوری کا حوالہ دیتے ہوئے برابری کا میدان فراہم نہ کرنے کے الزامات کی تردید کی۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

سونے کی قیمتوں میں نمایاں کمی: ایک تولہ کی قیمت اب 242,000 روپے ہے

مقامی مارکیٹ میں سونے کی فی تولہ قیمت میں 6200 روپے کی کمی دیکھی گئی۔ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *