پنجاب کے پراسیکیوٹر جنرل سید فرہاد علی شاہ نے ٹوبہ ٹیک سنگھ میں بھائی کے ہاتھوں بہن کے قتل کو ہائی پروفائل کیس قرار دے دیا۔

پنجاب کے پراسیکیوٹر جنرل سید فرہاد علی شاہ نے ٹوبہ ٹیک سنگھ میں بھائی کے ہاتھوں بہن کے قتل کو ہائی پروفائل کیس قرار دے دیا۔ حال ہی میں پیش آنے والے اس واقعے نے کمیونٹی کو چونکا دیا ہے اور گھریلو تشدد کے پھیلاؤ کے بارے میں تشویش کا اظہار کیا ہے۔

کل جاری کردہ ایک بیان میں، پراسیکیوٹر جنرل نے ڈسٹرکٹ پولیس آفیسر (DPO)، سپرنٹنڈنٹ آف پولیس (SP) اور ٹوبہ ٹیک سنگھ کے ڈسٹرکٹ پراسیکیوٹر کو یکم اپریل کو ان کے سامنے پیش ہونے کی ہدایت کی۔ انہوں نے اس معاملے کی مکمل تحقیقات کی ضرورت پر زور دیا اور تمام متعلقہ شواہد کو فوری طور پر اکٹھا کرنے پر زور دیا۔

اطلاعات کے مطابق مقتولہ کی شناخت ماریہ بی بی کے نام سے ہوئی ہے جسے مبینہ طور پر اس کے سوتیلے بھائی نے قتل کیا۔ اس بھیانک عمل کو مبینہ طور پر ویڈیو میں قید کیا گیا تھا، جس سے جرم کی بربریت کو مزید اجاگر کیا گیا تھا۔ اس کے بعد سے سوشل میڈیا پر وائرل ہونے والی ویڈیو میں بھائی کو ماریہ بی بی کا گلا گھونٹتے ہوئے دکھایا گیا ہے جب کہ ان کے والد اور ایک اور خاتون خاموشی سے دیکھ رہے ہیں۔ قتل کے بعد لڑکی کی لاش کو خاموشی سے دفن کر دیا گیا جس نے پہلے سے ہی المناک واقعہ میں وحشت کی ایک اور تہہ ڈال دی۔

پراسیکیوٹر جنرل نے واقعے پر گہری تشویش کا اظہار کیا اور انصاف کی فراہمی کو یقینی بنانے کے عزم کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ متاثرہ کے والد اور بھائی سمیت ملزمان کو ان کے اعمال کا جوابدہ ٹھہرایا جائے گا۔ مقدمہ پولیس میں درج کر لیا گیا ہے، اور محکمہ پراسیکیوشن مجرموں کے خلاف قانون کے مطابق کارروائی کرنے کے لیے سرگرم عمل رہے گا۔

گھریلو تشدد اور خواتین کے خلاف جرائم پاکستان میں اب بھی ایک اہم مسئلہ بنے ہوئے ہیں، سماجی دباؤ اور قانونی تحفظ کی کمی کی وجہ سے اکثر مقدمات غیر رپورٹ ہوتے ہیں یا سزا نہیں پاتے۔ ماریہ بی بی کے بہیمانہ قتل نے ایک بار پھر اس مسئلے کو سامنے لایا ہے اور اس طرح کے جرائم سے نمٹنے کے لیے زیادہ سے زیادہ آگاہی اور کارروائی کی ضرورت پر زور دیا ہے۔

اس واقعے کے ردعمل میں مقامی کارکنوں اور تنظیموں نے ماریہ بی بی کے لیے انصاف کا مطالبہ کیا ہے اور حکام پر زور دیا ہے کہ وہ مستقبل میں ایسے سانحات کو رونما ہونے سے روکنے کے لیے ٹھوس اقدامات کریں۔ انہوں نے گھریلو تشدد کے متاثرین اور ان کے خاندانوں کے لیے قانونی امداد اور مشاورتی خدمات تک رسائی سمیت مدد بڑھانے کا بھی مطالبہ کیا ہے۔

ماریہ بی بی کا قتل گھریلو تشدد کی بنیادی وجوہات کو حل کرنے اور اس بات کو یقینی بنانے کی فوری ضرورت کی ایک واضح یاد دہانی کے طور پر کام کرتا ہے کہ مجرموں کو ان کے اعمال کے لیے جوابدہ ٹھہرایا جائے۔ امید ہے کہ حکام اس گھناؤنے جرم کے مرتکب افراد کو انصاف کے کٹہرے میں لانے اور مستقبل میں ایسے واقعات کو دوبارہ رونما ہونے سے روکنے کے لیے فوری اور فیصلہ کن کارروائی کریں گے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *