بشریٰ بی بی کی اڈیالہ جیل منتقلی کی درخواست

پاکستان کے وزیراعظم عمران خان کی اہلیہ بشریٰ بی بی نے اڈیالہ جیل سے اپنی منتقلی کے لیے اسلام آباد ہائی کورٹ میں درخواست دائر کرتے ہوئے قانونی کارروائی کی ہے۔ اپنی درخواست میں، اس نے قانون کے تحت مساوی سلوک کی دلیل دی، اور کسی بھی عام قیدی کی طرح اڈیالہ جیل میں اپنی سزا کاٹنے کی خواہش کا اظہار کیا۔ بشریٰ بی نے دعویٰ کیا کہ اس کی بنی گالہ سب جیل میں منتقلی مساوی حقوق کی خلاف ورزی ہے، کیونکہ دیگر سیاسی شخصیات معیاری جیلوں میں باقاعدہ قیدیوں کے ساتھ وقت گزار رہی ہیں۔

بی بی کی درخواست میں اس کی منتقلی کے عمل کی وضاحت کی گئی ہے، جس میں کہا گیا ہے کہ اسے 31 جنوری کو اڈیالہ جیل منتقل کیا گیا تھا، جہاں وہ صبح 10 بجے سے رات 9 بجے تک اپنی قسمت کا انتظار کرتی تھیں۔ اس کے بعد انہیں حراست میں لے کر بنی گالہ منتقل ہونے کی اطلاع دی گئی۔ وہ اسلام آباد میں چیف کمشنر آفس سے 31 جنوری کو جاری کردہ نوٹیفکیشن کو کالعدم قرار دینے اور بنی گالہ کو بھی باقاعدہ جیل کے طور پر نامزد کرنے پر زور دیتی ہے۔

یہ پیش رفت توشہ خانہ کیس سے متعلق جاری قانونی کارروائی کے درمیان سامنے آئی ہے، جہاں عمران خان کی پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) اور بی بی دونوں کو جرمانے کے ساتھ 14 سال قید کی سزا سنائی گئی ہے۔ تاہم عمران خان کو دس سال کے لیے نااہلی کا سامنا کرنا پڑا۔ بی بی کی درخواست قانون کے سامنے مساوی سلوک کے اصول پر زور دیا ہے اور اس کی حراست کے لیے کیے گئے خصوصی انتظامات پر سوال اٹھاتی ہے، اس کے ساتھ کسی دوسرے شہری کی طرح برتاؤ کرنے کے حق کی وکالت کرتی ہے۔

یہ بی بی کے اس عزم کی عکاسی کرتی ہے کہ وہ اسے ترجیحی سلوک کے طور پر چیلنج کرتی ہے اور انصاف اور مساوات کے اصولوں کو برقرار رکھنے کے اپنے عزم کو واضح کرتی ہے۔ جیسے جیسے قانونی عمل سامنے آتا ہے، اس کی درخواست کا نتیجہ نہ صرف اس کے لیے بلکہ پاکستان کے وسیع تر قانونی منظر نامے پر بھی اہم اثرات مرتب کرے گا، خاص طور پر فوجداری نظام انصاف میں اعلیٰ شخصیات کے ساتھ سلوک کے حوالے سے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

طلال چوہدری کی مخصوص نشستوں کے فیصلے پر تنقید، دعویٰ یہ سیاسی استحکام کو نقصان پہنچاتا ہے

پاکستان مسلم لیگ (ن) کے رہنما طلال چوہدری نے مخصوص نشستوں کے حوالے سے حالیہ …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *