شاہین آفریدی پاکستان کے لیے ورلڈ کپ جیتنے کے لیے پرعزم ہیں

پاکستان کی قومی کرکٹ ٹیم کے سابق کپتان شاہین آفریدی نے آئندہ آئی سی سی مینز ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ میں پاکستان کو فتح دلانے کے لیے اپنے غیر متزلزل عزم کا اظہار کیا ہے۔ پی سی بی پوڈ کاسٹ کے 50ویں ایپی سوڈ پر کھل کر بات کرتے ہوئے آفریدی نے ٹیم کی تیاری اور اپنی ذاتی فٹنس کے حوالے سے اپنی امید کا اظہار کیا۔

آفریدی نے اس تھکاوٹ کو تسلیم کیا جو شائقین کو ورلڈ کپ جیتنے کا بار بار یقین دلانے کے ساتھ آتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم یہ کہہ کر تھک گئے ہیں کہ ہم ورلڈ کپ جیتیں گے لیکن اس بار انشاء اللہ ہم کر کے دکھائیں گے۔ انہوں نے ٹیم کے اندر مثبت ماحول اور اپنی کارکردگی کے ذریعے قوم کو خوشیاں پہنچانے کی لگن پر زور دیا۔

امریکہ اور ویسٹ انڈیز میں ہونے والا ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ، آفریدی کو پاکستان کے امکانات پر اعتماد نظر آرہا ہے۔ انہوں نے ٹیم کے بہترین ماحول پر روشنی ڈالتے ہوئے کہا، “یہ بات چیت کا نہیں بلکہ اپنے بنیادی مقصد کو حاصل کرنے کا وقت ہے۔ ہمارا کام کرکٹ کھیلنا اور قوم کو خوشیاں دینا ہے۔

پوڈ کاسٹ کے دوران آفریدی نے نئے ہیڈ کوچ گیری کرسٹن کا ایک حوصلہ افزا پیغام شیئر کیا۔ کرسٹن نے انہیں مشورہ دیا کہ وہ شرٹ کے اگلے حصے پر نام کے لیے کھیلیں، جو کہ ٹیم اور ملک کی نمائندگی کرتا ہے، بجائے اس کے کہ پیٹھ پر نام ہو۔ آفریدی کا خیال ہے کہ یہ مشورہ نہ صرف موجودہ کھلاڑیوں بلکہ مستقبل کے کرکٹرز کے لیے بھی اہم ہے، جو انفرادی تعریفوں سے زیادہ ٹیم اسپرٹ کی اہمیت کو واضح کرتا ہے۔

اپنے کیریئر کی عکاسی کرتے ہوئے، آفریدی نے لارڈز میں بنگلہ دیش کے خلاف 2019 ورلڈ کپ کے دوران اپنی کارکردگی پر فخر کا اظہار کیا، جہاں انہوں نے چھ وکٹیں حاصل کیں۔ انہوں نے 2021 کے T20 ورلڈ کپ اور 2023 کے ایشیا کپ میں ہندوستان کے خلاف اپنی یادگار باؤلنگ کی بھی یاد تازہ کی۔ تاہم، آفریدی نے انجری کی وجہ سے 2022 کے T20 ورلڈ کپ کے فائنل میں اپنی ٹیم کا ساتھ نہ دینے کی مایوسی کے بارے میں بھی بات کی، اور انہیں زمبابوے سے ہار خاص طور پر تکلیف دہ معلوم ہوئی۔

آفریدی نے سری لنکا کے خلاف ٹیسٹ میچ میں لگنے والی انجری سے صحت یاب ہونے کے دوران درپیش چیلنجوں کا ذکر کیا۔ اس نے ایک خاص مشکل دور کے طور پر بیان کرتے ہوئے کہا کہ اس کی ٹیم کھیلنا جاری رکھے ہوئے ہونے کے جذباتی نقصان پر زور دیتی ہے۔

کم عمری میں ملنے والے مواقع پر اظہار تشکر کرتے ہوئے آفریدی نے اپنے خاندان کی حمایت اور سابق کپتان سرفراز احمد اور سابق ٹیسٹ کرکٹر اپنے بھائی ریاض آفریدی کی رہنمائی کا سہرا دیا۔ آفریدی نے کہا کہ میں خوش قسمت ہوں کہ اتنی کم عمر میں پاکستان کی نمائندگی کر سکا۔

.

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

اسلام آباد ہائی کورٹ نے توہین عدالت کیس میں فواد چوہدری کا جیل ٹرائل کالعدم قرار دے دیا

اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق وفاقی وزیر فواد چوہدری کے حق میں فیصلہ سناتے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *