شاہد آفریدی کی تنقید نے پی ٹی آئی میں بحث چھیڑ دی.

کرکٹ کے سابق لیجنڈ شاہد آفریدی خود کو پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) پارٹی کی صفوں میں تنازعات کے ایک طوفان کے مرکز میں پاتے ہیں۔ پی ٹی آئی کے رہنما اور اس کی سوشل میڈیا ٹیم کے ارکان آفریدی پر کی جانے والی تنقید سے نمٹنے پر اختلاف کا شکار ہیں۔

پی ٹی آئی کے ایک اہم رہنما شیر افضل مروت نے پارٹی کی سوشل میڈیا ٹیموں پر کھل کر تنقید کرتے ہوئے ان پر آفریدی کے خلاف پروپیگنڈہ کرنے کا الزام لگایا ہے۔ مروت کا موقف پارٹی کے اندر ایک وسیع تر جذبات کی عکاسی کرتا ہے کہ آفریدی، پاکستان میں ایک قابل احترام شخصیت، بہتر سلوک کے مستحق ہیں۔

مروت نے پی ٹی آئی کی سوشل میڈیا ٹیموں پر زور دیا کہ وہ آفریدی کے حوالے سے زیادہ مثبت انداز اپنائیں۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ مکمل ذاتی تصدیق کے بعد وہ اعتماد کے ساتھ کہہ سکتے ہیں کہ آفریدی کے خلاف کوئی بھی مہم بے بنیاد ہے اور اس کا مقصد ان کی شبیہ کو خراب کرنے کے سوا کوئی نہیں ہے۔

اسی طرح، پی ٹی آئی کے ایک اور رہنما، علی محمد خان نے پارٹی کی سوشل میڈیا ٹیم کے طرز عمل پر اپنی عدم اطمینان کا اظہار کیا۔ خان نے آفریدی کی قومی ہیرو کی حیثیت پر روشنی ڈالی اور نوٹ کیا کہ آفریدی نے ہمیشہ پی ٹی آئی کے بانی کو ایک ہیرو کے طور پر دیکھتے ہوئے ان کا احترام کیا ہے۔

خان نے ایک اہم نقطہ نظر کا اضافہ کرتے ہوئے کہا کہ اگرچہ آفریدی اپنی ذاتی رائے کا حقدار ہے، لیکن وہ جو کچھ بھی کہتے ہیں اسے نامناسب سمجھا جانا چاہیے اور پارٹی کے سرکاری موقف کا عکاس نہیں ہونا چاہیے۔

مروت کی تنقید کا جواب دیتے ہوئے پی ٹی آئی کے سوشل میڈیا کارکن اظہر مشوانی نے مروت کی سرزنش کرتے ہوئے ان کے بیان کو قابل مذمت قرار دیا اور اسے فوری طور پر حذف کرنے کا مطالبہ کیا۔ مشوانی نے اس بات پر زور دیا کہ پارٹی کے اندرونی معاملات کو سوشل میڈیا پر نشر نہیں کیا جانا چاہئے اور ممبران پر زور دیا کہ وہ اس طرح کے معاملات پر عوامی سطح پر تبصرہ کرنے سے گریز کریں۔

مشوانی نے مروت کو مزید مشورہ دیا کہ وہ اس طرح کے رویے میں ملوث ہونے سے گریز کریں، جو پارٹی کے معاملات کو اندرونی رکھنے اور عوام کے سامنے متحدہ محاذ پیش کرنے کی خواہش کا اشارہ ہے۔

آفریدی کے ارد گرد کا تنازع سیاسی جماعتوں کو اپنی عوامی امیج کو سنبھالنے میں درپیش چیلنجوں کو نمایاں کرتا ہے، خاص طور پر سوشل میڈیا کے دور میں۔ عوامی شخصیات کے طور پر، آفریدی اور دیگر مشہور شخصیات اکثر تنقید اور جانچ پڑتال کے لیے بجلی کی چھڑی بن جاتی ہیں، جس کے لیے ان کی منسلک تنظیموں کو ایسے حالات کو مؤثر طریقے سے نیویگیٹ کرنے کے لیے محتاط انتظام کی ضرورت ہوتی ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

شاہ محمود قریشی پر 9 مئی کو آتش زنی کیس میں فرد جرم عائد

پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے سینئر رہنما شاہ محمود قریشی پر 9 مئی …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *