شیخ رشید کا 14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ منظور کر لیا گیا

عوامی مسلم لیگ کے سربراہ شیخ رشید کا 14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ منظور کر لیا گیا کیونکہ عدالت نے انہیں اڈیالہ جیل میں قید کرنے کی منظوری دے دی ہے۔ یہ پیشرفت انسداد دہشت گردی کی عدالت میں 9 مئی کے واقعات سے پیدا ہونے والے الزامات کا جواب دیتے ہوئے ان کی شمولیت سے ہوئی۔

گزشتہ روز شیخ رشید کی دوروزہ گرفتاری، 9 مئی کے مقدمے میں ان کی ضمانت کی درخواست مسترد ہونے کے بعد عدالت کے باہر ہوئی تھی۔ یہ گرفتاری نیو ٹاؤن پولیس اسٹیشن میں سابق وزیر داخلہ کے خلاف نیو ٹاؤن میں جاری اشتعال انگیزی کے مقدمے کی وجہ سے سامنے آئی۔

جی ایچ کیو حملے سے متعلق پیشگی قانونی قسط میں شیخ رشید اور ان کے بھتیجے شیخ رشید سمیت دیگر نے ضمانت حاصل کر لی۔ راولپنڈی کی انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج ملک آصف اعجاز نے سخت حفاظتی انتظامات میں مقدمے کی سماعت کا فیصلہ سنایا۔ شیخ رشید احمد اور شیخ راشد شفیق اپنے وکیل سردار عبدالرزاق کے ہمراہ عدالت میں حاضر ہوئے۔ عدالت نے دلائل مکمل ہونے کے بعد فیصلہ محفوظ کر لیا۔ پولیس نے شیخ رشید احمد کی گرفتاری کا مطالبہ کیا، جس کی تصدیق شیخ رشید شفیق کی 9 مئی کی ویڈیو پیش کرکے کی گئی۔

انسداد دہشت گردی کی عدالت کے باہر میڈیا سے بات کرتے ہوئے شیخ رشید احمد نے گرفتاری کے بعد جسمانی تکلیف کا اعتراف کیا لیکن لچکدار جذبہ برقرار رکھا۔ انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ہارنا ہمت ہارنے کا مترادف ہے اور انہوں نے مارشل لاء اور کلاشنکوف کیس دونوں کے دوران اپنی ماضی کی قید کا ذکر کیا۔ شیخ رشید نے دلیرانہ بیان دیتے ہوئے کہا کہ اگر انہیں دوبارہ جیل بھیجا جائے تو انتخابات میں جیت ان کی ہوگی۔

یہ تازہ ترین قانونی پیشرفت شیخ رشید کی دوبارہ نظر بندی کے پس منظر میں سامنے آئی ہے، جو 9 مئی کے واقعات سے منسلک قانونی کارروائیوں کو دوبارہ زندہ کرتی ہے۔ عدالت کا 14 روزہ جوڈیشل ریمانڈ دینے اور اڈیالہ جیل میں براہ راست قید کرنے کا فیصلہ الزامات کی سنگینی کو واضح کرتا ہے۔ شیخ رشید کی لچک، جیسا کہ قانونی نظام کے ساتھ ان کے ماضی کے مقابلوں سے ظاہر ہوتا ہے، ایک ایسے عزم کی بازگشت ہے جو جسمانی چیلنجوں کے باوجود برقرار ہے۔

About نشرح عروج

Nashra is a journalist with over 15 years of experience in the Pakistani news industry.

Check Also

وزیراعلیٰ پنجاب کا فرانزک ٹریننگ لیب کو یونیورسٹیوں کے ساتھ شراکت کرنے کا حکم

صوبے میں فرانزک سائنس کی تعلیم اور صلاحیتوں کو بڑھانے کے لیے ایک اہم اقدام …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *